Syed e Hajvair Makhdoom e Umam

Syed e Hajvair Makhdoom e Umam

سید ہجویر مخدوم اُمم
مرقد اُو پیر سنجر را حرم
خاک پنجاب از دم اُو زندہ گشت
صبح ما ازمہراُو تابندہ گشت

ہجویر کے سردار اُمتوں کے مخدوم ہیں
آپ کے مزار کو حضرت معین الدین چشتی نے حرم بنایا
آپ ہی کی وجہ سے پنجاب کی بنجر زمیں زندہ و زرخیز ہو گئی
میری صبح بھی اسی سورج کی وجہ سے روشن ہو گئی

Cheif of Hajvair is the king of Nations
Pir of Sanjar spent nights at his holy shrine for seeking guidance
Soil of Punjab turned alive by his blow
The light of this sun has also brightened my morning

Like Hazrat Isa with his blow on Mud made birds turn into living birds.Similarly Allama Iqbal is meant to say that by the blow of Hazrat Ali bin Usman Hajvari dead hearts turn alive in the surroundings of Punjab.

Syed Moin ud Din Chisty is known as the Pir of Sanjar , He spent forty nights at the shrine of Hazrat Data Ganj Bakhs for seeking spiritual guidance.

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Orya Maqbool Jan — Allama Iqbal — Data Gunj Bakhsh

Gul Az Rukhat Aamokhta Nazuk Badani Ra Badani Ra

Gul Az Rukhat Aamokhta Nazuk Badani Ra Badani Ra
BulBul ze tu AaMokhta Shireen Sukhani Ra, Sukhani Ra

ﮔﻞ ﺍﺯ ﺭﺧﺖ ﺁﻣﻮﺧﺘﻪ ﻧﺎﺯﮎ ﺑﺪﻧﯽ ﺭﺍ ﺑﺪﻧﯽ ﺭﺍ
ﺑﻠﺒﻞ ﺯ ﺗﻮ ﺁﻣﻮﺧﺘﮧ ﺷﯿﺮﯾﮟ ﺳﺨﻨﯽ ﺭﺍ ﺳﺨﻨﯽ ﺭﺍ

پھولوں نے نازک بدنی آپ سے سیکھی
بلبل نے اپنی زبان کی مٹھاس آپ سے سیکھی

Flower has learnt tender-being from your face,
And nightingale has learnt from you the sweet words

ﮨﺮ ﮐﺲ ﮐﮧ ﻟﺐ ﻟﻌﻞ ﺗﺮﺍ ﺩﯾﺪﮦ ﺑﮧ ﺩﻝ ﮔﻔﺖ
ﺣﻘﺎ ﮐﮧ ﭼﮧ ﺧﻮﺵ ﮐﻨﺪﮦ ﻋﻘﯿﻖ ﯾﻤﻨﯽ ﺭﺍ

جس نے بھی آپ کے ہونٹوں کو دیکھا تو دل سے کہا
حق ہے کہ کیا خوب یمنی عقیق ہیں

Whoever saw your red lips, praised them
Even the nicely carved carnelian of Yemen

ﺧﯿﺎﻁ ﺍﺯﻝ ﺩﻭﺧﺘﮧ ﺑﺮ ﻗﺎﻣﺖ ﺯﯾﺒﺎ
ﺩﺭ ﻗﺪ ﺗﻮ ﺍﯾﮟ ﺟﺎﻣﺌﮧ ﺳﺮﻭ ﭼﻤﻨﯽ ﺭﺍ

ازل کے درزی یعنی خدا نے آپ کی کیا خوب قامت بنائی ہے
آپ کے تن کو باغ کے سرو کی طرح سجایا ہے

Tailor of the eternity has sewed over your pretty stature
this green dress of garden over your body

ﺩﺭ ﻋﺸﻖ ﺗﻮ ﺩﻧﺪﺍﻥ ﺷﮑﺴﺖ ﺍﺳﺖ ﺑﮧ ﺍﻟﻔﺖ
ﺗﻮ ﺟﺎﻣﻪ ﺭﺳﺎﻧﯿﺪ ﺍﻭﯾﺲ ﻗﺮﻧﯽ ﺭﺍ ﻗﺮﻧﯽ ﺭﺍ

آپ کے عشق میں دانت ٹوٹ گئے اور آپ کی محبت میں
یہ نعت اویس قرنی کوبھی سنا دو

In your love teeth are broken, mere due to love
Make this news reach to Owais of Qarn

ﺍﺯ ﺟﺎﻣﯽ ﺑﮯ ﭼﺎﺭﺍ ﺭﺳﺎﻧﯿﺪ ﺳﻼﻣﮯ
ﺑﺮ ﺩﺭ ﮔﮩﮧ ﺩﺭﺑﺎﺭ ﺭﺳﻮﻝ ﻣﺪﻧﯽ ﺭﺍ

بے چارہ جامی سلام پیش کرتا ہے
رسول مدنی کے دربار پرانوار پر

From poor Jami, reaches salam
to the Holy Kingdom of Prophet (PBUH) of Madina

ﻋﺒﺪﺍﻟﺮﺣﻤٰﻦ ﺟﺎﻣﯽ

 

 

 

Ae Khasa e Khasan e Rusul waqt e duaa hai

Ae Khasa e Khasan e Rusul waqt e duaa hai
Ummat pe tiree aakay ajab waqt para hai

اے خاصہ خاصان رسل وقت دعا ہے
امت پہ تیری آ کے عجب وقت پڑا ہے

jo deen barhi shaan say nikla tha, watan say
pardais mein woh aaj ghareeb-ul-ghuraba hai

جو دین بڑی شان سے نکلا تھا وطن سے
پردیس میں وہ آج غریب الغربا ہے

Jiss Deen Nay Ghairo kay thay Dil aakay Milaaye
iss deen mein khud bhai say ab bhai judaa hai

جس دین نے غیروں کے تھے دل آ کے ملائے
اس دین میں اب بھائی خود بھائی سے جدا ہے

Jo Deen Ke Hamdard e Bani Nao e Bashr Tha
Ab Jang o Jadal Char Taraf Es Mein Bpa Hai

جو دین کہ ہمدرد بنی نوع بشر تھا
اب جنگ و جدل چار طرف اس میں بپا ہے

Faryaad hai aye kashti-e-ummat kay nigehbaan
beira yeh tabaahi kay qareeb aa lagaa hai

فریاد ہے اے کشتی امت کے نگہباں
بیڑا یہ تباہی کے قریب آن لگا ہے

Kar Haq Se Dua Umat e Marhoom ke haq mein
Khatroon mein bohat jis ka jahaz aa ke ghira hai

کر حق سے دعا امت مرحوم کے حق میں
خطروں میں بہت جس کا جہاز آ کے گھرا ہے

Hum naik hain ya bad hain phir aakhir hain tumhare
Nisbat bohat achi hai agar Haal bura hai

ہم نیک ہیں یا بد ہیں پھر آخر ہیں تمہارے
نسبت بہت اچھی ہے اگر حال برا ہے

tadbeeer sambhalney ki hamarey nahin koi
haan aik DUA teri ke maqbool e KHUDA hai

تدبیر سنبھلنے کی ہمارے نہیں کوئی
ہاں ایک دعا تری کے مقبول خدا ہے

woh deen, huee bazm-e-jahaan’, jiss say charaaghaan’
aaj iski majaaliss mein na batti na diyaa hai

وہ دین ہوئی بزم جہاں جس سے چراغاں
اب اس کی مجالس میں نہ بتی نہ دیا ہے

jo deen keh tha shirk say aalam ka nigehbaan
ab iska nigehbaan’, agar hai, to KHUDA hai

جو دین کہ تھا شرک سے عالم کا نگہباں
اب اس کا نگہبان اگر ہے تو خدا ہے

جس دین کے مدعو تھے کبھی قیصر و کسرٰی
خود آج وہ مہمان سراۓ فقرا ہے

جو تفرقے اقوام کے آیا تھا مٹانے
اس دین میں خود تفرقہ اب آ کے پڑا ہے

جس دین کا تھا فقر بھی اکسیر ، غنا بھی
اس دین میں اب فقر ہے باقی نہ غنا ہے

جس دین کی حجت سے سب ادیان تھے مغلوب
اب معترض اس دین پہ ہر ہرزہ درا ہے

ہے دین تیرا اب بھی وہی چشمہ صافی
دیں داروں میں پر آب ہے باقی نہ صفا ہے

عالم ہے سو بےعقل ہے، جاہل ہے سو وحشی
منعم ہے سو مغرور ہے ، مفلس سو گدا ہے

یاں راگ ہے دن رات وداں رنگِ شب وروز
یہ مجلسِ اعیاں ہے وہ بزمِ شرفا ہے

چھوٹوں میں اطاعت ہے نہ شفقت ہے بڑوں میں
پیاروں میں محبت ہے نہ یاروں میں وفا ہے

دولت ہے نہ عزت نہ فضیلت نہ ہنر ہے
اک دین ہے باقی سو وہ بے برگ و نوا ہے

ہے دین کی دولت سے بہا علم سے رونق
بے دولت و علم اس میں نہ رونق نہ بہا ہے

شاہد ہے اگر دین تو علم اس کا ہے زیور
زیور ہے اگر علم تو مال سے کی جلا ہے

جس قوم میں اور دین میں ہو علم نہ دولت
اس قوم کی اور دین کی پانی پہ بنا ہے

گو قوم میں تیری نہیں اب کوئی بڑائی
پر نام تری قوم کا یاں اب بھی بڑا ہے

ڈر ہے کہیں یہ نام بھی مٹ جائے نہ آخر
مدت سے اسے دورِ زماں میٹ رہا ہے

جس قصر کا تھا سر بفلک گنبدِ اقبال
ادبار کی اب گونج رہی اس میں صدا ہے

بیڑا تھا نہ جو بادِ مخالف سے خبردار
جو چلتی ہے اب چلتی خلاف اس کے ہوا ہے

وہ روشنیِ بام و درِ کشورِ اسلام
یاد آج تلک جس کی زمانے کو ضیا ہے

روشن نظر آتا نہیں واں کوئی چراغ آج
بجھنے کو ہے اب گر کوئی بجھنے سے بچا ہے

عشرت کدے آباد تھے جس قوم کے ہرسو
اس قوم کا ایک ایک گھر اب بزمِ عزا ہے

چاوش تھے للکارتے جن رہ گزروں میں
دن رات بلند ان میں فقیروں کی صدا ہے

وہ قوم کہ آفاق میں جو سر بہ فلک تھی
وہ یاد میں اسلاف کی اب رو بہ قضا ہے

اے چشمہ رحمت بابی انت و امی
دنیا پہ تیرا لطف صدا عام رہا ہے

امت میں تری نیک بھی ہیں بد بھی ہیں لیکن
دل دادہ ترا ایک سے ایک ان میں سوا ہے

ایماں جسے کہتے ہیں عقیدے میں ہمارے
وہ تیری محبت تری عترت کی ولا ہے

ہر چپقلش دہر مخالف میں تیرا نام
ہتھیار جوانوں کا ہے، پیروں کا عصا ہے

جو خاک تیرے در پہ ہے جاروب سے اڑتی
وہ خاک ہمارے لئے داروے شفا ہے

جو شہر ہوا تیری ولادت سے مشرف
اب تک وہی قبلہ تری امت کا رہا ہے

جس ملک نے پائی تری ہجرت سے سعادت
کعبے سے کشش اس کی ہر اک دل میں سوا ہے

کل دیکھئے پیش آئے غلاموں کو ترے کیا
اب تک تو ترے نام پہ اک ایک فدا ہے

خود جاہ کے طالب ہیں نہ عزت کے خواہاں
پر فکر ترے دین کی عزت کی صدا ہے

ہاں حالیء گستاغ نہ بڑھ حدِ ادب سے
باتوں سے ٹپکتا تری اب صاف گلا ہے

ہے یہ بھی خبر تجھ کو کہ ہے کون مخاطب
یاں جنبشِ لب خارج از آہنگ خطا ہے

مولانا الطاف حسین حالی
Maulana Altaf Hussain Hali

Bekhud kiye dete hain andaaz e hijabana

Bekhud kiye dete hain andaaz e hijabana
Aa dil main tujhay rakhloon aie jalwa e janana.

یبخود کیے دیتے ہیں انداز حجابانہ
آ دل میں تجھے رکھ لوں اے جلوہء جانانہ

Bas itna karam karna aye chasme kareemana
Jab Jaan Laboun Per ho Tum Samne Aa jana

بس اتنا کرم کرنا اے چشمِ کریمانہ
جب جان لبوں پر ہو تم سامنے آجانا

Dunya main mujhay tu ne gar Apna banaya hai
Mehshar mein bhi keh daina yeah hai mera deewana

دنیا میں مجھے تو نے گر اپنا بنایا ہے
محشرمیں بھی کہہ دینا یہ ہے میرا دیوانہ

Jee chahta tuhfay main bhaijoon main unhain Ankhain
Darshan ka to darshan ho Nazrane ka Nazrana

جی چاہتا ہے تحفے میں بیھجوں میں اُنہیں آنکھیں
درشن کا تو درشن ہو نزرانے کا نذرانہ

Peeney ko to pee loun ga per araz zara see hai
Ajmair ka saqi ho baghdad ka maikhana

پینے کو تو پی لوں گا پر عرض ذرا سی ہے
اجمیر کا ساقی ہو بغداد کا میخانہ

Kyun aankh milai thi, kyoon aag lagai thee
Aab rukh ko chupa baithay kar kay mujhay deewana.

کیوں آنکھ ملائی تھی کیوں آگ لگائی تھی
اب رُخ کو چھپا بیٹھے کر کہ مجھے دیوانہ

Har Phool main boo teri Har Shama mai Zoa teri
Bulbul hai tera bulbul parwana tera perwana

ہر پھول میں بُو تیری، ہر شمع میں ضو تیری​
بلبل ہے ترا بلبل، پروانہ ترا پروانہ ​

Jis Ja nazar aate ho sajday wahin karta houn
Es say nahin kuch matlab Kaaba ho ya butkhana

جس جاء نظر آتے ہو سجدے وہیں کرتا ہوں ​
اس سے نہیں کچھ مطلب کعبہ ہو یا بُت خانہ​

Main Hosh hawaas apne es baat pe kho baitha
Hans ker jo kaha tu ne aaya mera deewana

میں ہوش و حواس اپنے اس بات پہ کھو بیٹھا​
ہنس کر جو کہا تُو نے آیا میرا دیوانہ ​

Zahid meri kismat mein sajday hain usi dar kay
Chuta hai na chuthay ga sange dar e janana.

بیدم میری قسمت میں سجدے ہیں اُسی در کہ
چُھوٹا ہے نہ چُھوٹے گا سنگِ در جانانہ

Kiya lutf ho mehshar mein main shikway kiye jaoon
Woh haskay kahay jayein deewana hai dewana.

کیا لطف ہو محشر میں میں شکوے کیے جاؤں
وہ ہنس کہ کہے جائیں دیوانہ ہے دیوانہ

Saaqi teray aatey hee yeh josh hai masti ka
Sheshay pay gira sheesha paimane pe paimana.

ساقی تیرے آتے ہی یہ جوش ہے مستی کا
شیشے پہ گرا شیشہ پیمانے پہ پیمانہ

Maloom nahin bedam mein kon houn aur kiya hoon
Youn apnoon main apna houn baiganoon mein baigana

معلوم نہیں بیدم میں کون ہوں اور کیا ہوں
یوں اپنوں میں اپنا ہوں بیگانوں میں بیگانہ

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Edhar Daikhta Houn Udhar Daikhta Houn

Edhar Daikhta Houn Udhar Daikhta Houn
Tujhey Daikhta Houn Jidhar Daikhta Houn

اِدھر دیکھتا ہُوں اُدھر دیکھتا ہُوں
تُجھے دیکھتا ہُوں جدھر دیکھتا ہُوں

پہنچ کر سرِ منزل یار دیکھو
رواں خود کو بہر سفر دیکھتا ہُوں

وہ میری نظر میں سمائے ہیں ایسے
جہاں سارا عکسِ نظر دیکھتا ہوں

کوئی مجھ کو سمجھائے یارو کہاں ہُوں
نہ در دیکھتا ہُوں نہ گھر دیکھتا ہوں

میں جب دیکھتا ہوں نہیں خود کو پاتا
کسی کی نظر کا اثر دیکھتا ہوں

یہی تو نہیں اُستوائے علی العرش
برابر اُسے جلوہ گر دیکھتا ہُوں

نظامی خُدا کی قسم میں نہیں ہُوں
اُسے از قدم تا بسر دیکھتا ہوں

امانت علی شاہ چشتی نظامی
Amant Ali Shah Chishti Nizami

                                     https://www.facebook.com/AbulHaqaiqNizami

Ae Jaan e Jahan Arzoo e Roey Tu Daram

Ae Jaan e Jahan Arzoo e Roey Tu Daram
Dar Sar Hawas e Qamat e Dil Joey Tu Daram

اے جانِ جہاں آرزوئے روئے تو دارم
در سر ہوسِ قامتِ دلجوئے تو دارم

اے جان جہاں آپ کے چہرے کی زیارت کا مشتاق ہوں
میری بزم خیال میں آپ کی سروقدی کا نشہ ہر وقت چھایا رہتا ہے

در کعبہ و در صومعہ در دیروخرابات
ہرجا کہ روم دیدہ دل سوئے تو دارم

کعبہ ، کلیسا ، گرجا اور شراب خانے میں ہر جگہ
جہاں بھی جاتا ہوں میرا دل آپ کی محبت میں سرشار رہتا ہے

حاجی بہ طوافِ حرم کعبہ رود لیک
من کعبہ مقصود سِر کوئے تو دارم

حاجی حرم کعبہ کے طواف کے لئے جاتا ہے لیکن
میرا قبلہ و کعبہ آپ کا سنگ آستاں ہے

اندرصف طاعت چُوں بہ مسجد بہ نشستم
دل مائل محراب دو ابروئے تو دارم

جب بھی میں عبادت کی نیت سے مسجد میں بیٹھتا ہوں
میرے دل کا رجوع آپ کے دونوں ابرووں کی طرف ہوتا ہے

ہرجا کہ رود قطبِ دیں آید بہرِتو باز
چوں رشتہ دل بستہ بہر موئے تو دارم

جہاں کہیں بھی قطب دیں جاتا ہے آپ ہی کے لئے جاتا ہے
کیونکہ اُس کا دل تو آپ کی زلف سیاہ کا اسیر ہے

Hazrat Qutbuddin Bakhtiar Kaki
ؒحضرت قطب الدین بختیار کاکی

 

Zarre Zarre Mein Tu WahdaHoo WahdaHoo

Zarre Zarre Mein Tu WahdaHoo WahdaHoo
Hai Sadda Char Soo WahdaHoo WahdaHoo

ذرے ذرے میں تو وحدہُ وحدہُ
ہے صدا چار سو وحدہُ وحدہُ

ساری مخلوق کے لب پہ ہے رات دن
تیری ہی گفتگو وحدہُ وحدہُ

تیرے ڈر سے جو روتی ہے اُس آنکھ کا
ہو گیا ہے وضو وحدہُ وحدہُ

صورتِ مصطفی میں ہوا جلوہ گر
خود ہی تو ہو بہو وحدہُ وحدہُ

جاؤں دُنیا سے جب ہو لبوں پہ ریاض
اللہ ہو اللہ ہو وحدہُ وحدہُ

علامہ سید ریاض الدین سہروردی
Syed Riaz uddin Soharwardi

Kis Ghar Mein Kis Hijab Mein Ae Jaan Nehaan Ho Tum

Kis Ghar Mein Kis Hijab Mein Ae Jaan Nehaan Ho Tum
Hum Raah Daikhte hain Tumhari Kahan Ho Tum

کس گھر میں کس حجاب میں اے جاں نہاں ہو تم
ہم راہ دیکھتے ہیں تمھاری کہاں ہو تم

مٹنے پر اپنے ناز نہ ہو کس طرح مجھے
میں ہوں وہ بے نشاں کہ جس کہ نشاں ہو تم

پردہ دری کا آپ نہ کیجے گلہ اگر
ہم سینہ چاک کرکے دکھا دیں جہاں ہو تم

دونوں جگہ ظہور برابر ہے آپ کا
ذرے میں آفتاب میں یک ساں عیاں ہو تم

خالی نہیں ہے آپ کے جلوے سے کوئی شے
دریا ہو اور قطروں کے اندر نہاں ہو تم

حاضر ہے بزم یار میں ساماں عیش سب
اب کس کا انتظار ہے اکبر کہاں ہو تم

شاہ اکبر دانا پوری

Thanks to Syed Zeeshan Khalid for Sharing.

Marhaba Sayyedi Makki Madani ul Arabi

Marhaba Sayyedi Makki Madani ul Arabi
Dil o Jaan Baad Fidayat Che Ajab Khush Laqabi

مرحبا سید مکی مدنی العربی
دل وجاں باد فدایت چہ عجب خوش لقبی

اے مکی مدنی و عربی آقا مرحبا ۔ آپ پر دل و جاں فدا ہوں ، کیا خوبصورت لقب ہے آپکا

من بیدل بجمال تو عجب حیرانم
اللہ اللہ چہ جمال است بدیں بوالعجبی

میں بیدل آپکی خوبصورتی دیکھ کر عجب حیرانی میں مبتلا ہوں ۔اللہ اللہ کیا جمال ہے حیرانگی کی انتہا ہے

نخل بستان مدینہ ز تو سرسبز مدام
زاں شدہ شہرۂ آفاق بہ شیریں رُطَبی

مدینے کے باغات آپ کی وجہ سے ہمیشہ کیلیے سرسبز ہو گئے اور آپ کی وجہ ہی سے یہاں کی تر و تازہ کجھوریں اپنی شیرینی میں شہرہ آفاق ہو گئیں
تر و تازہ سے مراد نیا نظام اسلام ہے اور اسکا شہرہ آفاق ہونا تو ظاہر ہی ہے کہ اسلام ہر طرف پھیل گیا۔

چشم رحمت بکشا سوئے من انداز۔نظر
اے قریشی لقبی ھاشمی و مطلبیّ

اپنی رحمت کی آنکھ کھول کر میری جانب اک نظر کیجیے
اے کہ آپ  قریشی ہاشمی اور مطلبی لقب رکھنے والے ہیں

نسبتِ نیست بذاتِ تو بنی آدم را
برتراز عالم و آدم تو چہ عالی نسبی

آپ کی ذات کی نسبت بنی آدم سے نہیں ہے بلکہ آپ تو تمام جہانوں اور آدم سے برتر ہیں، آپ کا نسب کیا اعلیٰ ہے۔

ماھمہ تشنہ لبا نیم وتوئ آب ِحیات
رحم فرما کہ زحد می گزروتشنہ لبی

ہم سب انتہائی پیاسے ہیں اور آپ کی ذاتِ مبارک آبِ حیات ہے، رحم فرمائیے
اور اس آبِ حیات کے جام پلایئے ، کہ ہماری پیاس حد سے بڑھ چکی ہے۔

ذاتِ پاکِ تو دریں مللک ِعرب کردہ ظہور
زاں سبب آمدہ قراں بہ زبان ِ عربی

آپ کی ذاتِ پاک نے عرب میں ظہور کیا اور اسی سبب سے قرآن کی زبان بھی عربی ہے۔

سیدّی انتَ حبیبی و طبیبِ قلبی
آمدہ سوئے تو قدّسی پئے درماں طلبی

اے آقا آپ ہی حبیب اور دلوں کے طبیب ہیں اور فرشتے بھی آپ کی طرف درمان طلب کرنے کیلیے آتے ہیں۔

Jaan Muhammad Qudsi
جان محمد قدسی

Reference: : http://www.urduweb.org

Download Mp3: Marhaba Maki Madni ul Arabi Qudsi Farzand Ali 27-6-4 786

Kafir e Ishq Houn Main Banda e Islam Nahin

Kafir e Ishq Houn Main Banda e Islam Nahin
Butt Parasti Ke Siwa Aur Mujhay Kaam Nahin

Ishq Main Poojta Houn Qibla o Kaaba Apna
Ek Pal Dil Ko Mere Es Ke Bin Aaraam Nahin

کافر عشق ہوں میں بندہ اسلام نہیں
بت پرستی کےسوا اور مجھے کام نہیں

عشق میں پوجتا ہوں قبلہ و کعبہ اپنا
اک پل دل کو میرے اس کے بنا آرام نہیں

ڈھونڈتا ہے تو کدھر یار کو میرے ایماہ
منزلش در دلِ ما ہست لبِ بام نہیں

بوالہوس عشق کو تو خانہ خالہ مت بوجھ
اُسکا آغاز تو آسان ہے پر انجام نہیں

پھانسنے کو دلِ عشاق کے اُلفت بس ہے
گہیر لینے کو یہ تسخیر کم از دام نہیں

کام ہو جائے تمام اُسکا پڑی جس پہ نگاہ
کشتہ چشم کو پھر حاجتِ صمصام نہیں

ابر ہے جام ہے مینا ہے می گلگون ہے
ہے سب اسبابِ طرب ساقی گلفام نہیں

ہائے رے ہائے چلی جاتی ہے یوں فصل بہار
کیا کروں بس نہیں اپنا وہ صنم رام نہیں

جان چلی جاتی ہے چلی دیکھ کے یہ موسم گُل
ہجر و فرقت کا میری جان پہ ہنگام نہیں

دل کے لینے ہی تلک مہر کی تہی ہم پہ نگاہ
پھر جو دیکھا تو بجز غصہ و دشنام نہیں

رات دن غم سے ترے ہجر کے لڑتا ہے نیاز
یہ دل آزاری میری جان بھلا کام نہیں

Hazrat Shah Niaz
حضرت شاہ نیاز 

Thanks to Mohammed Tausif Iftekhari for Sharing