Ranjha ranjha kardi hun main aape Ranjha hoyi

Ranjha ranjha kardi hun main aape Ranjha hoyi
رانجھا رانجھا کردی ہن میں آپے رانجھا ہوئی

رانجھا رانجھا” کردی ہن میں آپے رانجھا ہوئی
سدو مینوں “دہیدو رانجھا” “ہیر” نھ آکھو کوئی

رانجھا میں وچ، میں رانجھے وچ، ہور خیال نہ کوئی
میں نہیں اوہ آپ ہے، اپنی آپ کرے دلجوئی

جو کوئی ساڈے اندر وسے ، ذات اساڈی سو ای

ہتہ کھونڈی تے اگے منگو موڈے بھورا  لوئی
بلھا ہیر سلیٹی دیکھو کتھے جا کھلوئی

جس دے نال میں نیونہہ لگایا ، اوہو جہیہی ہوئی
تخت ہزارے لے چل بلھیا ، سیالیں ملے نہ ڈھوئی

Bulleh Shah
بلھے شاہ

Abida Parveen Ranjha ranjha kardi hun main aape Ranjha hoyi

Dil Me Rawad Z Dastam Sahib Dilaan Khuda Ra

Dil Me Rawad Z Dastam Sahib Dilaan Khuda Ra
دل می رود  ز دستم  صاحبدلاں خدا را

 

دل می رود  ز دستم  صاحبدلاں خدا را
دردا کہ راز پنہاں خواہد شد آشکارا

کشتی شکستگانیم اے باد شرط بر خیز
باشد کہ باز بینیم آں یار آشنا را

آسائش دو گیتی تفسیر ایں دو حرف ست
با دوستاں تلطف با دشمناں  مدا را

در کوئے نیک نامی مارا گزر ندادند
گر تو نمی پسندی تغییر  کن قضا را

حافظ بخود نپوشد ایں خرقہ ء  مے آلود
اے شیخ پاک دامن معزور دار ما را

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Alif Allah Chambe Di Booty

Alif Allah Chambe Di Booty
الف ا للہ چنبے دی بوٹی

 الف ا للہ چنبے دی بوٹی من مرشد وچ لائی ہو
نفی اثبات دا پانی ملیا ہر رگے ہر جائی ہو

 بوٹی اندر مشک مچایا تے جان پھولن تے آئی ہو
جیوے مرشد کامل باھو جہن اے بوٹی لائی ہو

ایہہ تن میرا چشماں ہووے تے مرشد ویکھ نہ رجاں ہو
لوں لوں دے موھڈ لاکھ لاکھ چشماں اک کھولاں تے اک کجاں ہو

اتنیاں ڈھڈیاں مینوں چین نہ آوے تے میں کدھے ول بھیجاں ہو
مرشد دا دیدار ہے باھو مینوں لاکھ کروڑ حجاں ہو

دل دریاسمندرو ں ڈوھنگے کون دلاں دیاں جانے ہو
وچے ویڑے وچھے جہیڑے تے وچھے ونجھ مہانے ہو

چودہ طبق دلے دے اندر تنبو وانگن تانے ہو
جہیڑا ہویا دل دا محرم باہو جو سو رب پچھانے ہو

Sultan Bahu
حضرت  سلطان  باہو

ب بسم اللہ اسم اللہ دا، ایہہ بھی کہنا بھارا ہُو

بغداد شہر دی کیا نشانی ، اچیاں لمیاں چیراں ہُو

پیر ملیاں جے پیڑ نہ جاوے اُس نوں پیر کیہ دھرناں ہُو

جو دم غافل سو دم کافر،سانوں مرشد ایہہ پڑھایا ہُو

جیکر دین علم وچ ہوندا تاں سر نیزے کیوں چڑھدے ہُو

دل دریا سمندروں ڈونگھے ، کون دلاں دیاں جانے ہُو

تسبیح پھری تے دل نہیں پھریا ، کیہ لینا تسبیح پھڑ کے ہُو

چڑھ چناں تے کر رشنائی، ذکر کریندے تارے ہُو

حافظ پڑھ پڑھ کر ن تکبر ، ملاں کرن وڈیائی ہُو

دل کالے کولوں منہ کالا چنگا جے کوئی اس نوں جانے ہُو

زبانی کلمہ ہر کوئی پڑھدا ، دل دا پڑھدا کوئی ہُو

سن فریاد پیراں دیا پیرا میری عرض سنیں کن دھر کے ہُو

Sab se Aula O Aala Hamara Nabi

Sab se Aula O Aala Hamara Nabi
سب سے اولیٰ و اعلیٰ ہمارا نبی

سب سے اولیٰ و اعلیٰ ہمارا نبی
سب سے بالاو والا ہمارا نبی

بجھ گیئں جس کے آگے سبھی مشعلیں
شمع وہ لے کہ آیا ہمارا نبی

خلق سے اولیا اولیاسے رسل
اور رسولوں سے اعلیٰ ہمارا نبی

جیسےسب کا خدا ایک ہےایسے ہی
ان کا ان کا تمہارا ہمارا نبی

کون دیتاہے دینے کو منہ چاہیئے
دینے والا ہے سچا ہمارا نبی

جنکے تلووں کا دھوون ہے آب حیات
ہے وہ جان مسیحا ہمارا نبی

قرنوں بدلی رسولوں کی ہوتی رہی
چاندبدلی کا نکلا ہمارا نبی

غمزدوں کو رضا  مژدہ  دیجے کہ ہے
بیکسوں کا سہارا ہمارا نبی

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا

Nami Danam Che Manzil Bood

Nami Danam Che Manzil Bood
نمی دانم چہ منزل بود

نمی دانم چہ منزل بود شب جائے کہ من بودم
بہر سو رقص بسمل بود شب جائے کہ من بودم

I wonder what was the place where I was last night,
All around me were half-slaughtered victims of love,tossing about in agony.

پر ی پیکر نگاری ، سرو قد ، لالہ رخساری
سراپا آفت دل بود شب جائے کہ من بودم

There was a nymph-like beloved with cypress-like form and tulip-like face
Ruthlessly playing havoc with the hearts of the lovers.

رقیباں گوش بر آواز ، او در ناز, من ترساں
سخن گفتن، چہ مشکل بود شب جائے کہ من بودم

The enemies were ready to respond , He was attracting, I was dreading
It was too difficult to speak out there where I was last night.

خدا خود میر مجلس بود اندر لامکاں خسرو
محمد شمع محفل بود شب جائے کہ من بودم

God himself was the master of ceremonies in that heavenly court,
Oh Khusrau, where (the face of) the Prophet too was shedding light like a candle

امیر خسرو
Amir Khusro

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye

The Following Naat “Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye” is the most famous Naat of Hazrat Pir Mehr Ali Shah Alaihir raHmah

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye
اج سک متراں دی ودھیری اے

اج سک متراں دی ودھیری اے
کیوں دلڑی اداس گھنیری اے

آج محبوب کی یاد بہت زیادہ آ رہی ہے
کیوں آج میرا دل بہت اُداس ہے

لوں لوں وچ شوق چنگیری اے
اج نیناں لائیاں کیوں جھڑیاں

ہر ہر رگ میں بے انتہا شوق ہے
آج کیوں آنکھوں سے اشکوں کی برسات ہے

الطیف سری من طلعتہ
والشذ و بدی من وفرتہ

لطیف خیال و خواب، سری ظاہر ہونا، الشذو کستوری ، بدی مہکنا غالب ہونا

حضورپرنور کے رح انور کی خواب حیال میں زیارت ہوئی
حضور کی زلفوں کی مہک کستوری سے بڑھ کر ہے
(وفرت ایسی زلفیں جو کانوں تک ہوں )

فسکرت ھنا من نظرتہ
نیناں دیاں فوجاں سر چڑھیاں

اس موقع پر آپ نے میری طرف نظر فرمائی اور مست کر دیا
آپ کی سرمگیں آنکھوں سے انوار کی افواج میرے اوپر چھا گئیں

مکھ چند بدر شعشانی اے
متھے چمکدی لاٹ نورانی اے

آپ کا چہرہ چودھویں کے چاند کی طرح چمک رہا ہے
آپ کی پیشانی پر انوار چمک رہے ہیں

کالی زلف تے اکھ مستانی اے
مخمور اکھیں ہن مدھ بھریاں

زلفیں کالی ہیں اور آنکھ مست و بیخود کرنے والی
شراب معرفت سے بھری ہوئی دلنشین سرمگیں آنکھیں

دو ابرو قوس مثال دسن
جیں تھیں نوک مژہ دے تیر چھٹن

آپ کے دونوں ابرو کمان کی مانند ہیں
پلکوں کی نوک سے تیر نکل رہے ہیں

لباں سرخ آکھاں کہ لعل یمن
چٹے دند موتی دیاں ہن لڑیاں

سرخ لب مبارک جو کہ یمنی عقیق ہیں
سفید دانت موتیوں کی قطاریں ہیں

اس صورت نوں میں جان آکھاں
جانان کہ جان جہان آکھاں

اس رخ انور کو میں جان کہوں
کہ جہانوں کی جان کہوں

سچ آکھاں تے رب دی شان آکھاں
جس شان تو شاناں سب بنیاں

سچ کہوں تو اللہ کی شان کہوں
کیونکہ اپ کی وجہ ہی سے سب شانیں وجود میں آئییں

ایہہ صورت ہے بے صورت تھیں
بے صورت ظاہر صورت تھیں

اس شکل میں دراصل بے صورت (اللہ)جلوہ گر ہے
اپ کے وجود میں رب نے خود کو ظاہر کر دیا

بے رنگ دسے اس مورت تھیں
وچ وحدت پھٹیاں جد گھڑیاں

اللہ پاک جو کہ رنگ و شکل سے پاک ہے آپ کی صورت میں نظر آتا ہے
وحدت کے خزانے سے جب نئی شاخ نکلں اور اپ کو خلق کیا گیا سب سے پہلے

دسے صورت راہ بے صورت دا
توبہ راہ کی عین حقیقت دا

آپ کی سنت و اتباع اللہ کی رسائی کا ذریعہ ہے
توبہ اپ کا راستہ تو دراصل عارف باللہ بنا دیتا ہے

پر کم نہیں بے سوجھت دا
کوئی ورلیاں موتی لے تریاں

لیکن یہ کم عقل لوگوں کا کام نہیں ہے
بہت تھوڑے لوگ اس ہستی مبارک کو سمجھ کر اس دنیا سے موتی سمیٹ کر گئے

ایہا صورت شالا پیش نظر
رہے وقت نزع تے روز حشر

اللہ کرے کہ یہی صورت میرے رو برو رہے
مرتے وقت اور روز قیامت

وچ قبر تے پل تھیں جد ہوسی گذر
سب کھوٹیاں تھیں سن تد کھریاں

قبر میں اور جب پل صراط سے گزر ہو
(آپ کے روبرو ہو نے سے (میرے کھوٹے عمل کھرے ہو جائیں گے

یعطیک ربک داس تساں
فترضی تھیں پوری آس اساں

آپ کو خوش خبری دی گئی کہ آپ کا رب عنقریب آپ کو راضی کرنے کے لئے بے حد نوازے گا
ہم غریبوں کو یہی اُمید ہے کہ اپ اُمت کی شفاعت کے بغیر راضی نہیں ہوں گے
(حضور کا فرمان ہے میں اُس وقت تک راضی نہیں ہوں گا جب تک میرا ایک بھی اُمتی دوزخ میں ہو)

لج پال کریسی پاس اساں
واشفع تشفع صحیح پڑھیاں

حضور ہماری پاس داری (پردہ پوشی)کریں گے
“آپ شفاعت کریں اپ کی شفاعت منظور کی جائے گی” ہم نے ٹھیک پڑھا ہے

لاہو مکھ تو مخطط برد یمن
من بھانوری جھلک دکھلاو سجن

ذرہ چہرہ انور سے یمنی دھاری دھار چادر ہٹا دیں
دل کو بھانے والی زیارت اے محبوب کرا دیں

مخطط دھاری دار ، برد چادر

اوہا مٹھیاں گالیں الاو مٹھن
جو حمرا وادی سن کریاں

گالیں باتیں، الاو سناو

وہی میٹھی میٹھی باتیں سنائیں اے محبوب
جو حمرا وادی میں سنائی تھیں

حجرے توں مسجد آو ڈھولن
نوری جھات دے کارن سارے سکن

سرکار حجرا مبارک سے مسجد تشریف لائیں
نورانی چہرہ کی جھلک دیکھنے کے لئے سارے اُمید لگائے بیٹھے ہیں

دو جگ اکھیاں راہ دا فرش کرن
سب انس و ملک حوراں پریاں

دو جہاں آپ کے انتظار میں انکھیں بچھائے ہوئے ہے
سب انسان اور فرشتے حور اور پریاں

انہاں سکدیاں تے کرلاندیاں تے
لکھ واری صدقے جاندیاں تے

حضور کے دیدار کی خاطر یہ سسک رہیں ہیں فریاد کر رہیں ہیں
لاکھوں بار اپ پر قربان ہو رہیں ہیں

انہاں بردیاں مفت وکاندیاں تے
شالا آون وت وی اوھ گھڑیاں

یہ باندیاں مفت میں بک رہیں ہیں دیدار کی خاطر
خوشا وہ لمحات جلد جلد آ جائیں

سبحان اللہ ما اجملک
ما احسنک ما اکملک

اللہ پاک ہے اور آپ سب سے زیادہ حسین ہیں
سب سے زیادہ احسان کرنے والے سب سے زیادہ کامل و اکمل

کتھے مہر علی کتھے تیری ثنا
گستاخ اکھیں کتھے جا اڑیاں

کہاں مہرعلی اور کہاں آپ کی تعریف
یہ مشتاق انکھیں کہاں پر ٹھہر گئی ہیں

  حضرت پیر مہر علی شاہ صاحب

Download complete Sharha of Aj Sik Mitran Di pdf by Mufti Khan Muhammad Qadri 

SourceAj Sik Mitran Di Vadheri Ye

Syed Muahammd Fasih Uddin Soharwardy  Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 1 - Pir Mehr Ali Shah

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 1 – Pir Mehr Ali Shah

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 2 - Pir Mehr Ali Shah.jpg

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 2 – Pir Mehr Ali Shah.jpg

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 3 - Pir Mehr Ali Shah.jpg

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 3 – Pir Mehr Ali Shah.jpg

Aj Sik Mitran Di Vadheri Ye 4 - Pir Mehr Ali Shah.jpg

Na Tha Kuch to Khuda Tha

Na Tha Kuch to Khuda Tha
نہ تھا کچھ تو خدا تھا

 

نہ تھا کچھ تو خدا تھا  کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
ڈوبویا مجھ کو ہونے نے نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

ہوا جب غم سے یوں بے حس تو غم کیا سر کے کٹنے کا
نہ ہوتا گر جدا تن سے تو ذانوں پر دھرا ہوتا

ہوئی مدت کہ غالب مر گیا پر یاد آتا ہے
وہ ہر بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

Deewan E Ghalib
دیوان غالب

Zahid Zahir Parast Az Haal e Ma Aagah Naist

Zahid Zahir Parast Az Haal e Ma Aagah Naist
ذاہد ظاہر پرست از حال ما آگاہ نیست

زاہد ظاہر پرست از حال ما آگاہ نیست
در حق ما ہر چہ گوید جائے ہیچ اکراہ نیست

در طریقت ہر چہ پیش سالک آید خیر اوست
در صراط المستقیم اے دل کسے گمراہ نیست

تا چہ بازی رخ نماید بیزقے خواہیم راند
عرصہ شطرنج رنداں را مجال شاہ نیست

ایں چہ استغنا ست یا رب ویں چہ داور حاکم ست
کایں ہمہ زخم نہاں ہست و مجال آہ نیست

چیست ایں سقف بلند سا دہ بسیار نقش
زیں معما ہیچ دانا در جہاںآگاہ نیست

صاحب دیوان ما گویا نمیداند حساب
کاندرین طغرانشان جستہ اللہ نیست

ہر کہ خواہد گو بیا ہر کہ خواہد گو برو
گیر دار و حاجب و درباں بدیں درگاہ نیست

ہر چہ ہست از قامت ناسازبی اندام ماست
ورنہ تشریف تو بر بالائے کس کوتاہ نیست

بر در میخانہ رفتن کارئے یکرنگاں بود
خود فروشاں را بکوئے مے فروشاں راہ نیست

بندہ پیر خراباتم کہ لطفش دائم ست
ورنہ لطف شیخ و زاہد گاہ ہست و گاہ نیست

حافط ار بر صدر بنشیند ز عالی ہمتی ست
عاشقی دروی کش اندر بند مال وجاہ نیست

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Jab Ishq Sikhata Hai (Allama Iqbal)

Jab Ishq Sikhata Hai
جب عشق سکھاتا ہے

جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی
کھلتے ہیں غلاموں پر اسرار شہنشاہی

عطار ہو رومی ہو رازی ہو غزالی ہو
کچھ ہاتھ نہیں آتا بے آہے سحر گاہی

اے طائر لاہوتی اس رزق سے موت اچھی
جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی

دارا و سکندر سے وہ مرد فقیر اولیٰ
ہو جس کی فقیری میں بوئے اسدالہٰی

آئین جوانمردی حق گویئ و بے باکی
اللہ کے شیروں کو آتی نہیں روباہی

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Abida Parveen Jab Ishq Sikhata Hai

Hajio Aao Shahenshah Ka Roza Dekho

Hajio Aao Shahenshah Ka Roza Dekho
حاجیو آو شہنشاہ کا روضہ دیکھو

حاجیو آو شہنشاہ کا روضہ دیکھو
کعبہ تو دیکھ چکے کعبے کا کعبہ دیکھو

رکن شامی سے مٹی وحشت شام غربت
اب مدینہ کو چلو صبح دل آرا دیکھو

آب زمزم تو پیا خوب بجھائی پیاسیں
آو جود شہ کوثر کا بھی دریا دیکھو

زہر میزاب ملے خوب کرم کے چھینٹے
ابر رحمت کا یہاں زور سے برسنا دیکھو

خوب آنکھوں سے لگایا ہے غلاف کعبہ
قصرمحبوب کے پردے کا بھی جلوہ دیکھو

دھو چکا ظلمت دل بوسہء سنگ اسود
خاک بوسی  مدینے کا بھی رتبہ دیکھو

اولیں خانہ حق کی بھی ضیائیں دیکھیں
آخریں بیت نبی کا بھی تجلا دیکھو

غور سے سن تو رضا کعبہ سے آتی ہے صدا
میری آنکھوں سے میرے پیارے کو روضہ دیکھو

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا

Alhaj Owais Raza Qadri:  Hajio Aao Shahenshah Ka Roza Dekho