Woh Sarwar e Kishwar e Risalat (Qaseeda Mairaj Lyrics)

Woh Sarwar e Kishwar e Risalat Jo Arash Pe Jalwah Gar Howay Thay
Naye Nirale Tarab Ke Saaman Arab Ke Mahmaan Ke Liye Thay

وہ سرورِ کشورِ رسالت جو عرش پر جلوہ گر ہوئے تھے
نئے نرالے طرب کے سَاماں عرب کے مہماں کے لئے تھے

The King of Prophets shined on the divine throne of Allah
Special arrangements were made by Allah to welcome this guest of Arab.

وہاں فلک پر یہاں زمیں میں رچی تھی شادی مچی تھی دھومیں
اُدھر سے انوار ہنستے آتے اِدھر سے نفحات اُٹھ رہے تھے

There at Heavens were wedding celebrations and here at earth were announcements everywhere.
The Dazzling Lights were coming with smile from Heaven and Fragrant Perfumes were being produced from Earth

اُتار کے اُن کے رخ کا صدقہ یہ نور کا بٹ رہاتھا باڑا
کہ چاند سورج مچل مچل کر جبیں کی خیرات مانگتے تھے

The Noor light was being distributed as a charity of his Face.
The Moon And The Sun were at forefront to collect their part from forehead.

وہی تو اب تک چھلک ہرا ہے وہی تو جوبن ٹپک رہا ہے
نہانے میں جو گرا تھا پانی کٹورے تاروں نے بھر لئے تھے

The same luminous water is still overflowing and leaking from stars in shape of light
The stars reserved the bath water and filled their cups.

بچا جو تلو وں کا ان کے دھوون بنا وہ جنت کا رنگ و روغن
جنھوں نے دولھا کی پائی اُترن وہ پھول گلزارِ نور کے تھے

The remaining water was used to color and paint the Paradise
The groom dress was distributed among the brighting flowers of the Paradise

اُٹھے جو قصرِ دنیٰ کے پردے کوئی خبر دے تو کیا خبر دے
وہاں تو جا ہی نہیں دوئی کی نہ کہ کہ وہ بھی نہ تھے ارے تھے

The curtains of the nearness were raised How can any one bring news of that moment
There is no room for secondness .Dont say he wasn’t, Beware He was.

محیط و مرکز میں فرق مشکل رہے نہ فاصل خطوط واصل
کمانیں حیرت میں سر جھکائے عجیب چَکر میں دائرے تھے

حجاب اُٹھنے میں لاکھوں پردے ہر ایک پردے میں لاکھوں جلوے
عجب گھڑی تھی کہ دصل و فرقت جنم کہ بچھڑے گلے ملے تھے

وہی ہے اوّل وہی ہے آخر وہی ہے باطن وہی ہے ظاہر
اُسی کے جلوے اُسی سے ملنے اُسی سے اس کی طرف گئے تھے

کمان امکاں کے جھوٹے نقطوں تم اّول آخر کے پھیر میں ہو
محیط کی چال سے تو پوچھو کدھر سے آئے کدھر گئے تھے

نبیِ رحمت شفیعِ اُمت رضؔا پہ للہ ہو عنائت
اُسے بھی ان خلعتوں سے حصّہ جو خاص رحمت کے واں بٹے تھے

ثنائے سرکار ہے وظیفہ قبول سَرکار ہے تمنا
نہ شاعری کی ہوس نہ پروا ردی تھی کیا کیسے قافیے تھے

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا

Download mp3 Link:Woh Sarwar e Kishwar e Risalat Jo Arash Pe Jalwah Gar Howay Thay

Noor he Noor Mahak Kaif o Saroor Ayay Hain

Noor he Noor Mahak Kaif o Saroor Ayay Hain
Dil e Baitaab Zara Sabr Hazoor Ayay Hain

نور ہی نور، مہک ، کیف و سرور آئے ہیں
دل بیتاب ذرا صبر ، حضورؐ آئے ہیں

چشم پر نم ہے ، طبیعت میں سکوں کا عالم
زہے!ذولفضل وکرم، رحمت و نور آئے ہیں

قدسیاں فرط اَدب سے ہیں ہر سمت کھڑے
اور ہاتھوں میں لئے جام طہور  آئے ہیں

جام پہ جام لنڈھاو کہ صلائےعا م ہے یارو
اپنے رندوں کو پلانے خود حضورؐ آئے ہیں

عاصیو! بڑھ کے پکڑ لو اپنے مولیٰ کے قدم
وہ شفاعت کو یوم النشور آئے ہیں

اپنے پلے تو نہیں کچھ بھی بجز اس کے کہ ہم
حمد اور نعت کی محفل میں ضرور آئے ہیں

ہیں تجلی گہ ربی یہ بزرگوں کے مزارات
کون کہتا ہے کہ ہم پیش قبور آئے ہیں

تاکہ ہم پر بھی ہو واجب یہ شفاعت خاور
در اقدس پہ جبھی پیش حضورؐ آئے ہیں

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Khirad Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahi

Khirad Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahi
Tera Elaaj Nazar Ke Siwa Kuch Aur Nahi

خرد کے پاس خبر کے سوا کچھ اور نہیں
ترا علاج نظر کے سوا کچھ اور نہیں

ہر اک مقام سے آگے مقام ہے تیرا
حیات ذوقِ سفر کے سوا کچھ اور نہیں

گراں بہا ہے تو حفظ خودی سے ہے ورنہ
گہرمیں آب گہر کے سوا کچھ اور نہیں

رگوں میں گردش خوں ہے اگر تو کیا حاصل
حیات سوز جگر کے سوا کچھ اور نہیں

عروس لالہ! مناسب نہیں ہے مجھ سے حجاب
کہ میں نسیم سحر کے سوا کچھ اور نہیں

جسے کساد سمجھتے ہیں تاجرانِ فرنگ
وہ شۓ متاعِ ہنر کے سوا کچھ اور نہیں

بڑا کریم ہے اقبال بے نوا لیکن
عطائے شعلہ شرر کے سوا کچھ اور نہیں

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

YouTube PTV 1: Khirad Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahi

YouTube PTV 1: Khirad Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahi

Youtube: Khirad Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahi

Jahan Bhar Ke Haseenon Se Haseen Tar Ae Haseen Tum Ho

Jahan Bhar Ke Haseenon Se Haseen Tar Ae Haseen Tum Ho
Jamal e Zaat Ho , Noor Elahi al Aalameen Tum Ho

جہاں بھر کے حسینوں سے حسیں تر اے حسیں تم ہو
جمال ذات ہو، نور الہ العالمیں تم ہو

گنہگاران امت کا سہارا بالیقیں تم ہو
کرم ہو، فضل ہو اور رحمت اللعالمیں تم ہو

بہ جسم ظاہری زِندہ، نبی آخریں اور غیب کے عالم
ہو اُمی ظاہراً پر حامل علم مبیں تم ہو

ہو محو ہم کلامی باالمشافہ اور بے پردہ
کہ عین وصل میں بینائےذات العالمیں تم ہو

مری جانِ تمنّا ہو، مرا مقصد مرا حاصل
مرا علم الیقیں، عین الیقیں، حق الیقیں تم ہو

نقاب رخ الٹ دو اے سرور جان مشتاقاں
متاع عاشقاں ہو آرزوئےمخلصیں تم ہو

نگاہے کن بہ خستگان ملت بیضا
امیر کارواں، منزل رسا، کار آفریں تم ہو

سلام اے رہبر دوراں! سلام اے مرکز ایماں
سلام اے حامل قرآں! کہ خوددین متیں تم ہو

سلام اے کار ساز و دستگیر ناقص و کامل
طبیب ہر مرض ، چارہ گر قلب حزیں تم ہو

سلام اے جان عشاقاں، سلام اے روح جاں بازاں
منور کر دو دل مرا کہ نور اولیں تم ہو

سلام اے شاہکار حق! سلام اے پیکر رحمت
سلام از خاورعا جز کہ میرے بس تمہیں تم ہو

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Meda Ishq Vi Toon Meda Yaar Vi Toon Lyrics

Meda Ishq Vi Toon Meda Yaar Vi Toon
Meda Deen Vi Toon Eeman Vi Toon

میڈا عشق وی توں, میڈا یار وی توں
میڈا دین وی توں, میڈا ایمان وی توں
میڈا جسم وی توں،  میڈا روح وی توں
میڈا قلب وی توں،جند جان وی توں
میڈا کعبہ، قبلہ ،مسجد، ممبر
مُصحف تے قرآن وی توں
میڈے فرض، فریضے، حج، زکوٰتاں
صوم صلٰواۃ، اذان وی توں
میڈی زہد ، عبادت، طاعت،تقوٰی
علم وی تُوں،عرفان وی توں
میڈا ذکر وی توں ،میڈا فکر وی توں
میڈا ذوق وی توں، وجدان وی توں
میڈا سانول ،مٹھڑا، شام ،سلوُنا
من موہن ،جانان وی توں
میڈا مرشد،ہادی، پیر طریقت
شیخِ حقائق دان وی توں
میڈی آس امید ،تے کھٹیا، وٹیا
تکیہ ،مان،  تران وی توں
میڈا دھرم وی توں، میڈا بھرم وی توں
میڈی شرم وی توں، مینڈی شان وی توں
میڈا ڈُکھ ،سُکھ، روون، کِھلن  وی توں
میڈا درد وی توں ،درمان وی توں
میڈےخوشیاں دا اسباب وی توں
میڈے سُولاں دا سامان وی توں
میڈا حُسن تے بھاگ ،سُہاگ وی توں
میڈا بخت تے نام  نِشان وی توں
میڈا دیکھن، بھالن، جاچن ،جوچن
سمجھن ،جان ،سنجان وی توں
میڈے  ٹھڈرےساہ تے مونجھ مو نجھاری
ہنجھوں دے طوفان وی توں
میڈے تلک ،تلولے ،سیندھاں ،مانگاں
ناز، نہوڑے تان وی توں
میڈی مہندی ،کجل ،مُساگ وی توں
میڈی سُرخی ،بیڑا، پان وی توں
میڈی وحشت، جوش جنون وی توں
میڈا گِریہ، آہ ، فغان وی توں
میڈا اول ،آخر ،اندر ،باہر
ظاہر تے پنہان وی توں
میڈا بادل ،برکھا ، کِھمنا ں، گاجاں
بارش تے باران وی توں
میڈا ملک، ملیر تے مارو ،تھلڑا
روہی، چولستان وی توں
جے یار فرید قبول کرے
سرکار وی توں ،سلطان وی توں
نہ تاں کہتر ،کمتر،ا حقر ،ادنیٰ
لاشئے، لا امکان وی توں

خواجہ غلام فرید
Khawaja Gulam Farid

Meda Ishq Vi Toon Meda Yaar Vi Toon
Meda Deen Vi Toon Meda Eeman Vi Toon
Meda jism vi toon Meda rooh vi toon
Meda qalb vi toon jind jaan vi toon
Meda kaba qibla masjid mimbar
Mushaf te Quran vi toon
Mede farz fareezay, Hajj, Zakataan
Soum salaat azaan vi toon
Meri zohd ibadat ta’at taqwa
Ilm vi toon irfan vi toon
Mera zikr vi toon meda fikr vi toon
Mera zouq vi toon wajdan vi toon
Meda sanwal mithra shaam saloona
Mun mohan janaan vi toon
Meda murshid haadi peer tareeqat
Shaikh haqaa’iq daan vi toon
Meda aas ummed te khattaya wattaya
Takia maan taran vi toon
Mera dharam vi toon meda bharam vi toon
Meda sharam vi toon meda shaan vi toon
Meda dukh sukh ro’wan khilan vi toon
Meda dard vi toon darmaan vi toon
Mda khushiyan da asbaab vi toon
Mede soolaan da samaan vi toon
Mera husn te bhaag suhaag vi toon
Meda bakht te naam nishaan vi toon
Meda dekhan bhalan jachan jochan
Samjhan jaan sunjaan vi toon
Mede thadray saah te monjh munjhari
Hanjoon de tofaan vi toon
Mede tilk tilo’ay seendhaan mangaan
Naaz nihoray taan vi toon
Medi mehdni kajal misaag vi toon
Medi surkhi beera paan vi toon
Medi wehshat josh junoon vi toon
Meda garya aa’h o faghan vi toon
Meda awwal aakhir andar bahir
Zahir te pinhaan vi toon tooon
Meda badal barkha khimnaan gajaan
Barish te baraan vi toon
Meda mulk malir te maro thalra
Rohi cholistaan vi toon
Je yaar farid qabool karay
Sarkaar vi toon sultaan vi toon
Na taan kehtar kamtar ahqar adna
La-shay la-imkaan vi toon

Khawaja Ghulam Farid
خواجہ غلام فرید

Youtube Pathanay Khan Part 1: Meda Ishq Vi Toon Meda Yaar Vi Toon Part 1 by KhamoshTamashai

Youtube Pathanay Khan Part 2:Meda Ishq Vi Toon Meda Yaar Vi Toon Part 2 by KhamoshTamashai

Jab Noor e Tajalla Ka Ezhaar Huwa Maloom

Jab Noor e Tajalla Ka Ezhaar Huwa Maloom
Deedar Ke Taalib Ka Esrar Huwa Maloom

جب نورتجلی کا اظہار ہوا معلوم
دیدار کے طالب کا اصرار ہوا معلوم

کیا حسن مشیت ہے ، کیا حسن تماشا ہے
انکار کی عظمت میں ، اقرار ہوا معلوم

اک دید حجابوں میں ، اک دید ہے بے پردہ
دلدار کی مرضی ہے ، دیدار ہوا معلوم

یہ حسن کی مرضی تھی ہر حال عیاں ہونا
تخلیق کی صورت میں اظہار ہوا معلوم

ہر شے کی حقیقت میں اس نور کا جلوہ ہے
یہ دیدہ باطن سے اک بار ہوا معلوم

جس دم تھا رگ و پے کا ہر ریشہ تماشا مست
اس عالم حیرت میں وہ یار ہوا معلوم

ہر حال میں دل خاور، با یار رہے با کار
ساز دل غافل تو بے تار ہوا معلوم

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Ik Rashk e Zamana Hain Parwanay Muhammad Ke

Ik Rashk e Zamana Hain Parwanay Muhammad Ke
Ya Khuld Badaman Hain Deewanay Muhammad Ke

اک رشکِ زمانہ ہیں، پروانے محمد کے
یا خلد بداماں ہیں، دیوانے محمد کے

مرتے ہیں محبت میں، جیتے ہیں محبت میں
یوں زندہ و تابندہ ہیں ، پروانے محمد کے

اوتادِ زمین و عرش، سرمست و خدا  آگاہ
ویرانہ ء عالم میں ،فرزانے محمد کے

محبوبیِ و سرشاری، ہر آن طمانیت
بیگانہ ء خوف و غم، دیوانے محمد کے

یک مستی و ہشیاری، یک گونہ سروروشوق
میخانہء ہستی میں ، پیمانے محمد کے

عرفان کی مے سےپر، جاںبخش ودوائےدل
پیمانے محمد کے ، میخانے محمدؐکے

انوار الہیٰ کا ہر رنگ نمایاں ہے
سر چشمہءرحمت ہیں کاشانے محمدؐ کے

اقوالِ شریعتہوں اسرار طریقت ہوں
ہر شے کی حقیقت ہیں،افسانے محمدؐ کے

تفسیر و فقہ، فتویٰ، شمشیر، جہادِ نفس
عشاق کے ہاتھوںمیں،پیمانے محمدؐکے

یہ فیض قلندر کے ، ہیں فیض محمدؐ کے
کاشانے قلندر کے کاشانے محمد کے

دربار قلندرؒ میں دل کھول کے پی خاور
بوالفیض کی نظریں ہیں میخانے محمدؐ کے

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Moun Aayi Baat Na Rehndi Ay — Lyrics Video Bulleh Shah

Moun Aayi Baat Na Rehndi Ay
مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

جھوٹھ آکھاں تے کچھ بچدا ہے
سچ آکھیاں بھانبڑمچدا ہے
جی دوہاں گلاں توں جچدا ہے
جچ جچ کے جیبھا کہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

جس پایا بھید قلندر دا
راہ کھوجیا اپنے اندر دا
او واسی ہے سُکھ مندر دا
جتھے کوئی نہ چڑھدی لہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

اک لازم بات ادب دی ہے
سانوں بات ملومی سبھ دی ہے
ہَر ہَر وچ صورت رب دی ہے
کتھے ظاہر ہے کتھے چھپیندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

ایتھے دنیا وچ انھیرا ہے
ایہہ تِلکن بازی ویہڑا ہے
وڑ اندر ویکھو کیہڑا ہے
کیوں خلقت باہر ڈھونڈیندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

ایتھے لیکھا پاؤں پسارا ہے
ایہدا وکھرا بھید نیارا ہے
اِک صورت دا چمکارا ہے
جیوں چِنگ دارو وچ پیندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

کِتے ناز ادا دکھلائیدا
کِتے ہو رسول مِلائیدا
کِتے عاشق بن بن آئیدا
کِتے جان جدائی سہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

جدوں ظاہر ہوئے نور ہوری
جل گئے پہاڑ کوہِ طور ہوری
تدوں دار چڑھے منصور ہوری
اوتھے شیخی مینڈی نہ تیندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

جے ظاہر کراں اسرار تائیں
سبھ بھل جاون تکرار تائیں
پھر مارن بلھے یار تائیں
ایتھے مخفی گل سوہیندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

اساں پڑھیا علم تحقیقی ہے
اوتھے اکّو حرف حقیقی ہے
ہور جھگڑا سب ودھیکی ہے
اینویں رولا پایا بہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

اے شاہِ عقل توں آیا کر
سانوں ادب آداب سکھایا کر
میں جھوٹھی نوں سمجھایا کر
جو مورکھ ماہنوں کہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

واہ واہ قدرت بے پروائی ہے
دیوے قیدی دے سر شاہی ہے
ایسا بیٹا جایا مائی ہے
سبھ کلمہ اُس دا کہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

اس عاجز دا کیہہ حیلہ ہے
رنگ زرد تے مکھڑا پیلا ہے
جِتھے آپے آپ وسیلہ ہے
اوتھے کیہہ عدالت کہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

بلھا شوہ اساں تھیں وکھ نہیں
بِن شوہ تے دوجا ککھ نہیں
پر ویکھن والی اکھ نہیں
تاں ہی جان پئی دکھ سہندی ہے

مُونہہ آئی بات نہ رہندی ہے

Bulleh Shah
بلھے شاہ

Thanks to Syeda Aasma for sharing these lyrics and Link.

Youtube Arieb Azhar: Moun Aayi Baat Na Rehndi Ay

Ae Noor e Mujasim Jab Teri Rahmat Ki Nazar Ho Jati hai

Ae Noor e Mujasim Jab Teri Rahmat Ki Nazar Ho Jati hai
Har Uqdah e Mushkil Khulta Hai Taqdeer Edhar Ho Jati hai

اے نورِ مجسم جب تیری ، رحمت کی نظر ہو جاتی ہے
ہر عقدہ مشکل کھلتا ہے ، تقدیر ادھر ہو جاتی ہے

اے حسنِ تجلی میں قرباں، اے شمع حقیقت کیا کہنا
جس سَمت نگاہیں اٹھتی ہیں ، رحمت بھی ادھر ہو جاتی ہے

کیا عشق تماشا بنتا ہے، کیا پردہ دوئی اتھتا ہے
خود کشف ِ حقیقت ہوتا ہے جس شے پہ نظر ہو جاتی ہے

گھنگھور گھٹائیں اٹھتی ہیں ، اک نور کی بارش ہوتی ہے
سب دل کی سیاہی دھلتی ہے وہ زلف جدھر ہو جاتی ہے

محبوب خدا کے قدموں میں ، محبوب خدا کی صحبت میں
وہ علمِ لدنی ملتا ہے ، ہر شے کی خبر ہو جاتی ہے

جب اسوہ نبوی اپنا کر ، اک قربِ خصوصی ملتا ہے
ہر عرض رضائے حق بن کر “اکسیر اثر” ہو جاتی ہے

اے نورہدیٰ کے متلاشی، سن! غارحرا کے ذرّوں سے
آواز کچھ ایسی آتی ہے تسکینِ خبر ہو جاتی ہے

انوارِ نبی کے جلو وں سے دیدارِ نبی کی برکت سے
بیمار محبت کی ہر شب گویا کہ سَحر ہو جاتی ہے

جب صحبت ِ پیرِ کا مل میں آداب محبت آتے ہیں
دربار رسالت میں فوراً طالب کی گذر ہو جاتی ہے

بو الفیض کی نظر کا مل ہے عرفان و حقیقت کا عنواں
تکمیل تمنا ہوتی ہے جس آن نظر ہو جاتی ہے

سرکا ر کی الفت میں خاؔور جب ہستی ء ظاہر مٹتی ہے
خود درد مداوا بنتا ہے”اللہ” کی خبر ہو جاتی ہے

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Jinhe Main Dhoondta Tha Aasmano Mein Zameeno Mein

Jinhe Main Dhoondta Tha Aasmano Mein Zameeno Mein
Woh Niklay Meray Zulmat Khana Dil K Makeeno Mein

جنھیں میں ڈھونڈتا تھا آسمانوں میں ،زمینوں میں
وہ نکلے میرے ظلمت خانہ ء دل کے مکینوں میں

حقیقت اپنی آنکھوں پر نمایاں جب ہوئی اپنی
مکاں نکلا ہمارے خانہ دل کے مکینوںمیں

اگر کچھ آشنا ہوتا مذاقِ جبہ سائی سے
تو سنگِ آستانِ کعبہ جا ملتا جبینوں میں

کبھی اپنا بھی نظارہ کیا ہےتو نے  اے مجنوں
کہ لیلیٰ کی طرح تو خود بھی ہے محمل نشینوں میں

مہینے وصل کےگھڑیوں کی صورت اڑتے جاتے ہیں
مگر گھڑیاں جدائی کی گزرتی ہیں مہینوں میں

مجھے روکے گا تو اے ناخدا کیا غرق ہونے سے
کہ جن کو ڈوبنا ہو،ڈوب جاتے ہیں سفینوں میں

چھپایا حسن کو اپنے کلیم اللہ سے جس نے
وہی ناز آفریں ہے جلوہ پیرا نازنینوں میں

جِلا سکتی ہے شمع کشتہ کو موج نفس ان کی
الہٰی کیا چھپا ہوتا ہے اہل دل کے سینوں میں

تمنا درد دل کی ہو تو کر خدمت فقیروں کی
نہیں ملتا یہ گوہر بادشاہوں کے خزینوں میں

نہ پوچھ ان خرقہ پوشوں کی ارادت ہو تو دیکھ ان کو
یدِ بیضا لیے بیٹھے ہیں اپنی آستینوں میں

ترستی ہے نگاہ نارسا جس کے نظارے کو
وہ رونق انجمن کی ہے انھیں خلوت گزینوں میں

کسی ایسے شرر سے پھونک اپنے خرمنِ دل کو
کہ خورشید قیامت بھی ہو تیرے خوشہ چینوں میں

محبت کے لیے دل ڈھونڈ کوئی ٹوٹنے والا
یہ وہ مے ہے جسے رکھتے ہیں نازک آبگینوں میں

سراپا حسن بن جاتا ہے جس کے حسن کا عاشق
بھلا اے دل حسیں ایسا بھی ہے کوئی حسینوں میں

پھڑک اٹھاکوئی تیری ادائے ما عرفنا پر
ترا رتبہ بڑھ چڑھ کے سب ناز آفرینوں میں

نمایاں ہو کے دکھلا دے کبھی ان کو جمال اپنا
بہت مدت سے چرچے ہیں ترے باریک بینوں میں

خموش اے دل بھری محفل میں چلانا نہیں اچھا
ادب پہلا قرینہ ہے محبت کے قرینوں میں

برا سمجھوں انھیں مجھ سے تو ایسا ہو نہیں سکتا
کہ میں خود بھی تو ہوں اقبال اپنے نکتہ چینوںمیں

 

Allama Iqbal
علامہ ا قبال