Pir Milyaan Jay Peedh Na Jaway Us Noon Pir Ki Dharhna Hoo

Pir Milyaan Jay Peedh Na Jaway Us Noon Pir Ki Dharhna Hoo

پیر ملیاں جے پیڑ نہ جاوے اُس نوں پیر کیہ دھرناں ہُو
مرشد ملیاں ارشاد نہ من نوں،اوہ مرشد کیہ کرناں ہُو
جس ہادی کولوں ہدائت ناہیں، اوہ ہادی کیہ پھڑناں ہُو
جے سردتیاں حق حاصل ہودے باہو،اُس موتوں کیہ ڈرناں ہُو

Sultan Bahu
حضرت  سلطان  باہو

Baghdad Shahar Dee Kiyaa Nishani

Baghdad Shahar Dee Kiyaa Nishani

بغداد شہر دی کیا نشانی ، اچیاں لمیاں چیراں ہُو
تن من میرا پُرزے پُرزے،جیوں درزی دیاں لیراں ہُو
ایہناں لیراں دی گل کفنی پاکے رلساں سنگ فقیراں ہُو
بغداد شہر دے ٹکڑے منگساں باہُو،کرساں میراں میراں ہُو

Sultan Bahu
حضرت  سلطان  باہو

Gham Ho Gaye Be Shumar Aaqa

Gham Ho Gaye Be Shumar Aaqa
Banda Tere Nisaar Aaqa

غم ہو گئے بے شمار آقا
بندہ تیرے نثار آقا

بگڑا جاتا ہے کھیل میرا
آقا آقا سنوار آقا

منجدھار پہ آکے ناؤ ٹوٹی
دے ہاتھ کہ ہوں میں پار آقا

ہلکا ہے اگر ہمارا پلہ
بھاری ہے ترِا وقار آقا

مجبور ہیں ہم تو فکر کیا ہے
تم کو تو ہے اختیار آقا

میں دور ہوں تم تو ہو میرے پاس
سن لو میری پکار آقا

مجھ سا کوئی غم زدہ نہ ہوگا
تم سا نہیں غم گسار آقا

گرداب میں پڑ گئی ہے کشتی
ڈوبا ، ڈوبا ،اتار آقا

تم وہ کہ کرم کو ناز تم سے
میں وہ کہ بدی کو عار آقا

پھر منہ نہ پڑے کبھی خزاں کا
دے دے ایسی بہار آقا

جس کی مرضی خدا نہ ٹالے
میرا ہے وہ نامدار آقا

ہے ملک خدا پہ جس کا قبضہ
میرا ہے وہ کامگار آقا

سویا کئے نابکار بندے
رویا کئے زار زار آقا

کیا بھول ہے کہ انکے ہوتے کہلائیں
دنیا کہ یہ تاجدار آقا

اُن کے ادنی گدا پہ مٹ جایئں
ایسے ایسے ہزار آقا

بے ابر کرم کے میرے دھبے
لاَ تَغسِلھَا البحَار آقا

آپ کے کرم کی بارش کے بغیر میرے گناہوں
کے داغ سمندروں کے پانی سے نہیں دھل سکتے

اتنی رحمت رضا پہ کر لو
لا یقروبہ البوار آقا

اتنی رحمت رضا پہ کر دیں کہ
بربادی و ہلاکت رضا کے قریب نہ آئے

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا

Uth Gaye Gawandhon Yaar Rabba Hun Ki Kariyea

Uth Gaye Gawandhon Yaar

اُٹھ گئے گوانڈھوں یار
رَبّا ہُن کیہ کریے

اُٹھ چلّے ہُن رہندے ناہیں
ہویا ساتھ تیار
رَبّا ہُن کیہ کریے

ڈاڈھ کلیجے بل بل اُٹھے
بَھڑکے بِرہوں نار
رَبّا ہُن کیہ کریے

بُلھا شَوہ پیارے باجھوں
رہے اُرار نہ پار
رَبّا ہُن کیہ کریے

اُٹھ گئے گوانڈھوں یار
رَبّا ہُن کیہ کریے

Bulleh Shah
بلھے شاہ

 

Jag Mein Jeevan Thora Kon Kerey Janjaal

 

Jag Mein Jeevan Thora Kon Kerey Janjaal

جگ میں جیون تھوڑا کون کرے جنجال
کیندے گھوڑے ،ہستی ،مندر کیندا ہے دھن مال
کہاں گئے ملّا ،کہاں گئے قاضی،کہاں گئے کٹک ہزاراں
ایہہ دنیا دن دوئے پیارے،ہردم نام سمال
کہے حسین فقیر سائیں دا جُھوٹا سبھ بیوپار

جہان میں زندگی تھوڑی ہے۔کیوں اس کے لئے دوڑ دھوپ کریں
ہر شے یہی کہہ رہی ہے ،ہاتھی گھوڑے،مندر، مال ودولت
ملا ،قاضی اور ہزار وں لشکر فوجیں سب کہاں گئیں
اے پیارے زندگانی دو چار دن ہے اس کو ہر وقت ذکر وفکر میں لگا
رب کا قفیر حسین کہتا ہے کہ سب دنیاوی کاروبار جھوٹے ہیں

شاہ حسین
Shah Hussain

Dar Jaan Choo Kard Manzil Jaanan e Ma Muhammad

Dar Jaan Choo Kard Manzil Jaanan e Ma Muhammad
Sad Dar Kusha Dar Dil Az Jaan e Ma Muhammad

در جان چو کرد منزل جانان ما محمد ﷺ
صد در کشا در دل از جان ما محمد ﷺ

جب سے میرے محبوب حضرت محمد ﷺ نے میرے دل میں گھر کیا ہے
میری جان و دل میں سینکڑوں دروازے محبوب کی وجہ سے کھل گئے ہیں

ما بلبلیم بالاں در گلستان احمد ﷺ
ما لولوئیم و مرجاں عمان ما محمد ﷺ

ہم گلستان احمد کی بلند مرتبت  بلبلیں ہیں
ہم لولو اور مرجان کے موتی ہیں اور آپﷺ دریا ہیں

مستغرق گناہیم ہر چند عذر خواہیم
پژ مردہ چوں گیاہیم باران ما محمدﷺ

ہم گناہوں میں غرق ہیں اور عذر خواہ ہیں
ہم خشک گھاس کی مانند ہیں اور آپ ہمارے لئے باران رحمت ہیں

از درد زخم عصیاں مارا چہ غم چو سازد
از مرہم شفاعت درمان ما محمد ﷺ

ہم گناہوں کے زخموں سے چور ہیں ، لیکن یہ فکر نہیں کہ کیوں ہوا کیسے ہوا
کیونکہ ہمیں شفاعت کا مرہم ملے گا اور حضور ہمارا مداوا کریں گے

امروز خون عاشق در عشق اگر ہدر شد
فردا ز دوست خواہم تاوان ما محمدﷺ

آج اگر عاشق کا خون عشق کی راہ میں ہوا ہے
تو کل قیامت میں حضور اس کا بدلہ تاوان دلوا دیں گے

ما طالب خدایئم بر دین مصطفائیم
بر در گہش گدائیم سلطان ما محمد

ہم طالب باری تعالیٰ ہیں اور دین مصطفیٰ پر قائم ہیں
انہیں کے در پر پڑے ہیں اور حضور ہمارے سلطان ہیں

از امتاں دیگر ما آمدیم برسر
واں را کہ نیست یاور برہان ما محمد ﷺ

حضور کی بدولت دوسری امتوں سے افضل ہیں
اُن کے پاس کوئی مددگار نہیں اور حضور ﷺ ہماری روشن دلیل ہیں

اے آب و گل سرودے وی جان و دل درودے
تا بشنود بہ یژب افغان ما محمدﷺ

اے پانی و مٹی کے پتلے نغمے گا اور دل و جان سے حضور پر درود بھیج
تا کہ مدینے میں حضور ﷺ سنیں اور ہماری آہ و زاری کو

در باغ و بوستانم دیگر مخواں  معینے
باغم بشست قرآں بستان ما محمد

اے معین ہمارے باغ و بوستاں میں کچھ اور نہ پڑھ
حضور ﷺ کی طفیل قرآن ہمارا باغ بن چکا ہے

خواجہ معین الدین چشتی
Khwaja Moinuddin Chishti

Awal Hamd Sana Elahi Jo Malik Har Har Da

Awal Hamd Sana Elahi Jo Malik Har Har Da
اول حمد ثنا الہٰی جو مالک ہر ہر دا

اول حمد ثنا الہٰی جو مالک ہر ہر دا
اس دا نام چتارن والاکسے وی میدان نہ ہر دا

دشمن مرے تے خوشی نہ کرئیے سجناں وی مر جاناں
ڈیگر تے دن گیا محمد اوڑک نوں ڈوب جاناں

کام تما م میسر ہوندے نام اوہدا چت دہریاں
رحموں سکھے ساوے کر دا  قہروں ساڑے ہریاں

بادشاہاں تھیں بھیک منگاوے تے تخت بھاوے کایئ
کجھ پروا نہیں گھر اس دے  دائم بے پروائی

آپ مکانوں خالی اُس تھیں کوئی مکان نہ خالی
ہر ویلے ہر چیز محمد رکھدا نت سنھبالی

ہر در توں دُھتکارن ہوندا ،جو اس در تھیں مڑیا
اوسے دا اُس شان ودھایا جو اس پاسے اُڑیا

واہ کریم اُمت دا والی، مہر شفاعت کردا
جبرایئل جیہے جس چاکر ، نبیاں دا سرکردہ

اوہ محبوب حبیب ربانا، حامی روز حشر دا
آپ یتیم ،یتیماں تایئں ہتھ سِرے پر دھردا

حسن بازاراوہدے سو یوسؑف بردے ہووکاندے
ذوالقرنین تے سلیماں جیہے خدمت گا ر کہاندے

موسیؑ خضؑر نقیب انہاندے اگے بھجن راہی
اوہ سلطان محمد والی مرسل ہور سپاہی

جیون جیون جھوٹا ناواں ، موت کھلی سر اُتے
لکھ کڑور تیرے تھیں سوہنے تے خاک اندر رَل ستّے

بن آئی جند نکلے ناہیں کوئی جہان نہ چلدا
ڈھاڈے دے ہتھ قلم محمد وس نہیں کجھ چلدا

کیتی بے فرمانی تیری بھلا پھرے اُس راہوں
نام اللہ دے بخش بے ادبی نا کر پکڑ گناہوں

چل چل پار نہ ہاریں ہمت ہک دن پھر سی پاسا
بھکا منگن چڑے محمد اوڑک بھر دا کاسہ

جس دل اندر عشق نہ رچیا ،کتے اس تھیں چنگے
خاوند دے در راکھی کر دے صابر ،بھکھے، ننگے

جناں دکھاں وچ دلبر راضی اوہناںتو سکھ وارے
دکھ قبول محمد بخشا    راضی رہن پیارے

راتیں زاری کر کر روون  نیند اکھیں دی دھوندے
فجر ےاوگنہار کہاون، ہر تھیں نیویں ہوندے

————————————————

راہ عشق دے چلن والے سچے مرد سپاہی
جانن نہ کوہ قاف سمندر جتول ہوون راہی

مکھ محبوباں دا بیت اللہ ، اوہ محراب اُچیرے
کرن نماز نیازاں عاشق ،سجدے دین چو فیرے

دنیا داراں دے گھر دیندا بیٹے ولی الہٰی
ولیاں دے گھر پیدا کردامیرے وانگ گناہی

دنیا تے جو کم نہ آیا اوکھے سوکھے ویلے
اُس بے فیضی سنگی کولوں بہتر یار اکیلے

عاماں بے اخلاصاں اندر خاصاں دی گل کرنی
مٹھی کھیر پکا محمد ،کتیاں اگے دھرنی

شاہ شمس تبریزی،جوٹھا اک گھٹ سرخ شرابوں
ملاں رومی نوں جیوں دتا،ہویا کرم جنابوں

جاں توں گم ہوویں دچ اِسدے اپنی چھوڑ نشانی
ایہہ توحید محمد بخشا،دسے کون زبانی

نہ میں مسلم نہ میں کافر، خبر نہیں کس چالی؟
نالے ایہہ دل عشقوں بھریا، نالے ہے مڑخالی

مر کے جیون دی گل بھائی ، دسے کون زبانوں
بعث بعدالموت سخن دے معنی  دور بیانوں

مر کے جیون دی گل چنگی ، سو جانے جو کردا
جس دے سر پر ورتی ہووے، کم نہیں ہر ہر دا

——————————————
مردا ہمت ہار نہ مُولے مت کوئی کہے نمردا
ہمت نال لگے جس لوڑے پائے باہجہ ناں مَردا

جس دل اندر ہووے بھائی، ہک رَتّی چنگاری
ایہہ قصہ پڑھ بھانبڑ بندا  نال ربے دی یاری

بات مجازی مرز حقانی ون ونّاں دی کاٹھی
سفرالعشق کتاب بنائی سیف چھپی وچہ لاٹھی

جس وچہ گجھی رمز نہ ہووے درد منداں دے حالوں
بہتر چُپ محمد بخشا سخن اجیہے نالوں

درد منداں دے سخن محمد دیہن گواہی حالوں
جس پلے پھل بدھے ہوون آوے بُو رومالوں

میں بھی وچوں عیبیں بھریا دسّاں ہنر زبانوں
اکھیں والے عیب چھپاہو کراں سوال تُسانوں

میرے نالوں ہر کوئی بہتر مہییں نیچ ایاناں
تھوڑا بہتا شعر سخن دا گھاٹا وادھا جاناں

تھوڑی بہتی تہمت کولوں کون کوئی بچ رہندا
پر میں آپوں اوگنہارا دوسریاں نہیں کہندا

پردہ پوشی کم فقر دا میں طالب فقرانواں
عیب کسی دے پھول نہ سکاں ہرہک تھیں شرمانواں

جسں نوں عشق کسے دا ہووے تس دے عیب نہ دِسدے
سخناں دے جو عاشق بندے عیب نہ ڈھونڈن اسدے

اُمت اپنی وچ رلائے پاک رسول بندے نوں
حضرت مرشد دمڑی والا کرے قبول بندے نوں

عمر مصنف دی تد آہی تن داہے تن یکے
بھین وڈی فرماندی ایہو پتے رب نوں پکے

جب یہ کتاب لکھی گئی میاں صاحب کی عمر مبارک 33 سال تھی

To be continued……………

Mian Muhammad Bakhsh
میاں محمد بخش

Pul Se Utaro Rah Guzar Ko Khabar Na ho

Pul Se Utaro Rah Guzar Ko Khabar Na ho
Jibrail Par Bechaain Tu Par Ko Khabar Na Ho

پل سے اتارو راہ گزر کو خبر نہ ہو
جبریل پر بچھایئں تو پر کو خبر نہ ہو

کانٹا مرے جگر سے غم روزگار کا
یوں کھینچ لیجیے کہ جگر کو خبر نہ ہو

فریاد امتی جو کرے حال زار میں
ممکن نہیں کہ خیر بشر کو خبر نہ ہو

کہتی تھی یہ براق سے اس کی سبک روی
یوں جائیے کہ گرد سفر کو خبر نہ ہو

فرماتے ہیں یہ دونوں ہیں سردار دو جہاں
اے مرتضٰی عتیق و عمر کو خبر نہ ہو

گما دے ان کی ولا میں خدا ہمیں
ڈھونڈھا کرے پر اپنی خبر کو خبر نہ ہو

آدل حرم سے روکنے والوں سے چھپ کے آج
یوں اٹھ چلیں کہ پہلو و بر کو خبر نہ ہو

طیر حرم ہیں یہ کہیں رشتے بپا نہ ہوں
یوں دیکھیے کہ تار نظر کو خبر نہ ہو

اے خار طیبہ دیکھ کہ دامن نہ بھیگ جائے
یوں دل میں آ کہ دیدہ تر کو خبر نہ ہو

اے شوق دل یہ سجدہ گر ان کو روا نہیں
اچھا وہ سجدہ کیجیے کہ سر کو خبر نہ ہو

ان کے سوا رضا کو ئی حامی نہیں جہاں
گزرا کرے پسر پہ پدر کو خبر نہ ہو

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا

Rukh Din Hai Ya Meher Sama Yeh Bhi Nahin Woh Bhi Nahin

Rukh Din Hai Ya Meher Sama Yeh Bhi Nahin Woh Bhi Nahin
Shab Zulf Ya MushKe Khata Yeh Bhi Nahin Woh Bhi Nahin

رُخ دن ہے یا مہر سما ء یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں
شب زلف یا مشک ختا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

ممکن میں یہ قدرت کہاں واجب میں عبدیت کہاں
حیراں ہوں یہ بھی خطا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

حق یہ کہ ہیں عبد الہ اور عالم امکاں کے شاہ
برزخ ہیں وہ سر خدایہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

بلبل نے گل ان کو کہاقمری نے سروجان فزا
حیرت نے جھنجھلا کر کہا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

خورشید تھا کس زور پر کیا بڑھ کے چمکا تھا قمر
بے پردہ جب وہ رح ہوا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

ڈر تھا کہ عصیاں کی سزا اب ہو گی یا روز جزا
دی ان کی رحمت نے صدا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

کوئی ہے نازاں زہد پر یا حسن توبہ ہے سپر
یاں ہے فقط تیری عطا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

دن لہو میں کھونا تجھے شب صبح تک سونا تجھے
شرم نبی خوف خدا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

رزق خدا کھایا کیا فرمان حق ٹالا کیا
شکر کرم ترس سزا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

ہے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا
حق یہ کہ واصف ہے تیرایہ بھی نہیں وہ بھی نہیں

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا

Ya Elahi Har Jaga Teri Ata Ka Saath Ho

Ya Elahi Har Jaga Teri Ata Ka Saath Ho
Jab Paray Mushkil Shah e Muskil Kusha Ka Saath Ho

 یا الہٰی  ہر   جگہ تیری عطا کا ساتھ ہو
جب پڑے مشکل شہ مشکل کشا کا ساتھ ہو

یا الہٰی بھول جاؤں نزع کی تکلیف کو
شادی دیدار حسن مصطفی کا ساتھ ہو

یا الہیٰ گور تیرہ کی آئے جب سخت رات
ان کے پیارے منہ کی صبح جانفزا کا ساتھ ہو

یا الہٰی جب پڑے محشر میں شور داروگیر
امن دینے والےپیارے پیشوا کا ساتھ ہو

یا الہیٰ جب زبانیں باہر آیئں پیاس سے
صاحب کوثر شہ جودو عطا کا ساتھ ہو

یا الہٰی سرد مہری پر ہو جب خورشید حشر
سید بے سایہ کے ظل لوا کا ساتھ ہو

یا الہٰی گرمی محشر سے جب بھڑکیں بدن
دامن محبوب کی ٹھنڈی ہوا کا ساتھ ہو

یا الہٰی نامہ اعمال جب کھلنے لگیں
عیب پوش خلق ستار کا ساتھ ہو

یا الہٰی  جب بہیں آنکھیں حساب جرم میں
ان تبسم ریز ہونٹوں کی دعا کا ساتھ ہو

یا الہٰی  جب حساب خندہ بیجا رلائے
چشم گریان مرتجے کا ساتھ ہو

یا الہٰی رنگ لائیں جب مری بے باکیاں
ان کی نیچی نیچی نظروں کی حیا کا ساتھ ہو

یا الہٰی جب چلوں تاریک راہ پل صراط
آفتاب ہاشمی نورالہدیٰ کا ساتھ ہو

یا الہٰی جب سر شمشیر پر چلنا پڑے
رب سلم کہنے والے غمزدا کا ساتھ ہو

یا الہٰی جو دعائے نیک میں تجھ سے کروں
قدسیوں کے لب سے اٰمین ربنا کا ساتھ ہو

یا الہٰی جب رضا خواب گراں سے سر اُٹھائے
دولت بیدار عشق مصطفےٰ کا ساتھ ہو

Alahazrat Imam Ahmad Raza
اعلی حضرت احمد رضا