Qumi Mutfakrand Dar Mazhab o Deen

Qumi Mutfakrand Dar Mazhab o Deen

قومی متفکراند  در مذہب و دین
قومی متحیراند در شک و یقین
ناگاہ منادی ای بر آمد ز کمین
کای بیخبراند راہ نہ آنست نہ این

ایک قوم دین و مذہب میں غورو فکر کر رہی ہے
ایک قوم شک و یقین کی وادی میں حیران پریشان ہے
اچانک گھات سے ندا بلند آتی ہے
اے نادانوں نہ یہ راہ سیدھی ہے نہ وہ

عمر خیام
Omar Khayyam

Arbab e Nazar Ke Liyea Har Sang Hai Toor

Arbab e Nazar Ke Liyea Har Sang Hai Toor

ارباب نظر کے لئے ہر سنگ ہے طُور
ہر شے میں اُسی کا نور، ہے اس کا ظہور
میخانہ و مسجد ہیں اُسی کے مظہر
بخشے اللہ تجھ کو تھوڑا سا شعور

Naseer ud Din Naseer
نصیر الدین نصیر

Suno Do Hi LafZon Mein Muj Se Yeah Raaz

نظم
شریعت اور طریقت کیا ہے؟

Suno Do Hi LafZon Mein Muj Se Yeah Raaz

سنو دو ہی لفظوں میں مجھ سے یہ راز
شریعت وضو ہے، طریقت نماز

طریقت،شریعت کی تعمیل ہے
طریقت عبادت کی تکمیل ہے

شریعت بحکم و طریقت بدل
کہ معنی سے کر دے تجھے متصل

شریعت میں آثار راہ خدا
طریقت میں رفتار راہ خدا

طریقت،شریعت سے ہے صف بہ صف
وہ ہے موج دریا یہ دریا میں کف

شریعت سے ہے ظُلمت کفر دور
طریقت میں فطرت کا ظاہر ہے نور

شریعت کرے گی بصیرت کو صاف
طریقت میں حسب مذاق انکشاف

شریعت تو اک عام قانون ہے
طریقت کا اک خاص مضمون ہے

شریعت میں لازم اطاعت ہوئی
طریقت میں شرط ارادت ہوئی

شریعت تو ہے دیدۂ نور بیں
طریقت بنی روح کی دور پیں

شریعت ہے اک شمع محفل فروز
طریقت ہے اک شعلہ وہم سوز

شریعت ہے مِہرسپہر ہدیٰ
طریقت کا رُخ سوئے حُبّ خدا

شریعت ہے جان اور طریقت نشاط
شریعت ہے منزل طریقت رباط

شریعت میں ہے ناروجنت کا رنگ
طریقت میں ہے وصل و فرقت کا رنگ

شریعت کتابوں کی ہے متحمل
طریقت میں ہے درس الواحِ دل

شریعت طریقت میں تو کیوں الجھ
وہ قرآن ہے اور یہ اس کی سمجھ

سخن سنجیاں گو ہوں میری درست
مگر قول سعدی نہایت ہے چست

طریقت بجُزخدمتِ خلق نیست
بہ تسبیح وسجادہ و دُلق نیست

محال است سعدی کہ راہِ صفا
تواں رفت جز بر پئےمصطفےٰ

نہ ہو اہل اس کا تو کیا اس کی قدر
خداہی کی مرضی سے ہے شرح صدر

شریعت میں دین اور ایمان ہے
طریقت میں تسکیں اور ایقان ہے

عبادت سے عزت شریعت میں ہے
عبادت کی لذت طریقت میں ہے

شریعت میں تائید ضبطِ نفوس
طریقت میں ذوقِ با خلوص

طریقت قدم ہے شریعت ہے راہ
شریعت زباں ہے طریقت نگاہ

شریعت درِ محفل مصطفےٰ
طریقت عروج دلِ مصطفےٰ

شریعت میں ہے قیل و قال حبیب
طریقت میں محوِ جمال حبیب

شریعت میں ارشاد عہد الست
طریقت میں ہے یاد عہد الست

شریعت شکر ہے، طریقت زباں
کہ معنی کی لذت چکھے تیری جاں

اکبر الہٰ آبادی
Akbar Allahabadi

Buriyan Buriyan Buriyan Way Aseen Buriyaan Way Loka

Buriyan Buriyan Buriyan Way Aseen Buriyaan Way Loka

بُریاں،بُریاں،بُریاں وے، اَسیں بُریاں وے لوکا
بُریاں کول نہ بَہو وے
تِیراں تے تلواراں کُولوں ،تِکھیاں برہوں دیاں چُھریاں وے لوکا
لَد سجن پردیس سدھائے،اَسیں ودیاع کرکے مڑیاں وے لوکا
چے تُوں تخت ہزارے دا سائیں، اسیں سیالاں دیاں کُڑیاں وے لوکا
سانجھ پات کاہوں سَوں ناہیں،سَاجن کھوجن اَسِیں !ٹَریاں وے لوکا
جنہاں سائیں دا ناؤں نہ لِتّا، اوڑک نوں اوہ جُھریاں وے لوکا
اَساں اَوگن ہاریاں جیہے،کہے حسین فقیر سائیں دا
صاحب سیوں اَسیں جُڑیاں وے لوکا

ہم بُرے ہیں بُرے ہیں ،ہم بُرے ہیں اے لوگو
بُروں کے پاس نہ بیٹھو اے لوگو
تیروں اور تلواروں سے بڑھ کر تیز تر عشق و جدائی کی چھریاں ہیں
محبوب ہمارا پردیس چلا گیا ہے،ہم لاچار الوداع کر کے لوٹ آئے ہیں
اگر تو تخت ہزارے کا سائیں ہے تو ہم سیالوں کی باسی ہیں
صبح شام کی ہم کو خبر نہیں ہم تو محبوب کی تلاش میں دن رات سرگرداں ہیں
جنہوں نے مالک کا نام نہ لیا وہ بالاخر پچھتائیں گے
ہم جیسے گنہگاروں کے لئے حسین رب کا فقیر کہتا ہے
ہمارا تعلق تو مالک حقیقی سے چڑا ہوا ہے

شاہ حسین
Shah Hussain

Mayam Ke Asal Shadi o Kaan e Ghameem

Mayam Ke Asal Shadi o Kaan e Ghameem

مائیم کہ اصل شادی و کان غمیم
سرمایۂ دادیم و نہاد ستمیم
پستیم و بلندیم و زیادیم و کمیم
آئینہ زنگ خوردہ و جام جمیم

ہم لوگ جو کہ خوشیوں کا گھر تھے غم کی کان ہو گئے
زندگی کا سرمایہ دے دیا اور ستم کی بنیاد بن گئے
پست بھی ہیں بلند بھی زیادہ بھی ہیں کم بھی
ہمارے دل کے آئینہ کو زنگ لگ گیا ورنہ جمشید بادشاہ کے جام کی طرح ساری دنیا دیکھتے

عمر خیام
Omar Khayyam

Ithan Main Muthri Nit Jaan Ba Lab

Ithan Main Muthri Nit Jaan Ba Lab
Oo Taan Khush Wasda Mulk Arab

اتھاں میں مٹھڑی نت جان بہ لب
او تاں خوش وسدا وچ ملک عرب

ادھر میری جان پہ بنی ہوئی ہے
اور وہ خوش و خرم ملک عرب میں بس رہا ہے

ہر ویلے یار دی تانگھ لگی
سُنجے سینے سِک دی سانگ لگی
ڈکھی دِلڑی دے ہتھ ٹانگھ لگی
تھئے مل مل سول سمولے سب

ہر وقت محبوب کا انتظار ہے
ویران سینے میں اشتیاق کا تیر لگا ہے
دکھی دل کے ہاتھ سہارا آیا بھی تو
غموں کے ہجوم کا جو دل میں سمائے ہوئے ہیں

تتی تھی جوگن چو دھار پھراں
ہند سندھ پنجاب تے ماڑ پھراں
سنج بار تے شہر بزار پھراں
متاں یار ملم کہیں سانگ سبب

نیم جان دیوانی بن کر چاروں طرف پھرتی ہوں
ہند ،سندھ پنجاب اور ماڑ پھرتی ہوں
ویرانے اور شہر ہر جا پھرتی ہوں
کہ کہیں میرا یار کسی سبب سے مل جائے

جیں ڈینہ دا نینہ دے شینہ پُٹھیا
لگی نیش ڈکھاں دی عیش گھٹیا
سر جوبن جوش خروش ہٹیا
سُکھ سڑ گئے مر گئی طرح طرب

جس دن سے عشق کے شیر نے مجھے زخمی کیا ہے
دکھوں کے نشتر لگ رہے ہیں عیش ختم ہو گیا ہے
سر سے جوانی کا جوش و خروش اُتر گیا
سکھ ختم ہو گئے اورخوشیاں مٹ گیئں ہیں

توڑیں دھکڑے دھوڑے کھاندڑیاں
تیڈے نام تے مفت وکاندڑیاں
تیڈی باندیاں دی میں باندڑیاں
ہے در دیاں کُتیاں نال ادب

تیرے لئے دھکے اور ٹھوکریں کھاتی ہوں
تیرے نام پر بے مول بک جاتی ہوں
تیری باندیوں کے بھی باندی ہوں
تیرے در کے کتوں کا بھی ادب کرتی ہوں

واہ سوہنا ڈھولن یار سجن
واہ سانول ہوت حجاز وطن
آدیکھ فرید دا بیت حزن
ہم روز ازل دی تانگھ طلب

سبحان اللہ کیا پیارا لاڈلا محبوب ہے
اور کیا ہی پیارا حجاز کا وطن ہے
آ ذرا فرید کا غموں کا گھر تو دیکھ
مجھے تو ازل سے ہی تیرا انتظار ہے

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid


Tujhay Apnay Maal Pe Ujab Hai Mujhay Apnay Haal Pay Naaz Hai

Tujhay Apnay Maal Pe Ajab Hai Mujhay Apnay Haal Pay Naaz Hai
Tera Hisa Masti o Baikhudi Mera Bakhra Sooz o Gudaaz Hai

تجھے اپنے مال پہ عجب ہے ، مجھے اپنے حال پہ ناز ہے
تیرا حصّہ مستی و بیخودی مرا بخرہ سوزوگداز ہے

تو دُکھے ہوؤں کو دکھائے جا،تو جلے ہووں کو جلائے جا
تو نشان خیر مٹائے جا ترے شر کی رسی دراز ہے

غم دہر تجھ کو نہ کھائے کیوں خوشی اپنا جلوہ دکھائے کیوں
تو وفا کا لطف اٹھائے کیوں، ترا دل تو بندہ آز ہے

تجھے فکر ہے کم وبیش کی تجھے سوچ ہے پس و پیش کی
مری زندگی کے محیط میں نہ نشیب ہے نہ فراز ہے

طرب آفریں میرا ساتگیں،تری لے ہے مایہ بغض و کیں
میں جہان درد کا راز ہوں تو دیار حرص کا ساز ہے

مجھے تیرے مال سے کیا غرض،تجھے میرے حال کی کیا خبر
کہ میں غزنوی بُتِ ذر کا ہوں ،شہ سیم کا تو ایاز ہے

تو رہین شوکت قیصری ، میں امین شان قلندری
ترا قبلہ ہے بُتِ آذری،سر عرش میری نماز ہے

کروں مال و زر کی میں کیوں ہوس  مجھے اپنے فقر پہ فخر بس
یہی حرز جان فقیر ہے ،یہی قول شاہ حجاز ؐہے

MAIKASH AKBARABADI
میکش اکبر آبادی

Utho Meri Duniya Ke Ghareebon Ko Jaga Do

Utho Meri Duniya Ke Ghareebon Ko Jaga Do

اٹھو میری دنیا کے غریبوں کو جگا دو
کاخِ اُمرا کے در و دیوار ہلا دو

Get up wake the poor people of my world
Shake the walls and windows of Rich people palaces

گرماؤ غلاموں کا لہو سوز یقیں سے
کُنجکشکِ فرومایہ کو شاہیں سے لڑا دو

Warm the blood of slaves with faith of hope
Prepare fearful sparrow to fight with the Falcon

جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہیں روزی
اس کھیت کے ہر خوشہ گندم کو جلا دو

A field from where the farmers are not getting sustenance
Burn every grain of wheat from that field

سلطانیء جمہور کا آتا ہے زمانہ
جو نقش کہن تم کو نظر آے مٹا دو

Approching is the time for poors to rule
Erase every impression of the past rulers

کیوں خالق و مخلوق میں حائل رہیں پردے
پیران کلیسا کو کلیسا سے اُٹھا دو

Why are there veils between the Creator and Creation
Push away the saints from the Church who misguide

حق را بسجودے،صنماں بطوافے
بہتر ہے چراغ حرم و دَیر بجھا دو

Prostration is being held for God , Idols are being encircled
It is better to unlit the lamp of Masjid and Temple

میں ناخوش و بیزار ہُوں مَرمَر کی سِلوں سے
میرے لئے مٹی کا حرم اور بنا دو

I am unpleased with the Marble tiles
Build for me a Mosque from the mud

تہزیب نوی کارگہِ شیشہ گراں ہے
آداب جنوں شاعرِ مشرِق کو سکھا دو

New civilization is build up from glass work
Teach ethics of devotion to the poet of east

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Ae Ishq e Nabi Mere Dil Main Bhi Sama Jana

Ae Ishq e Nabi Mere Dil Main Bhi Sama Jana

اے عشق نبی میرے دل میں بھی سما جانا
مجھ کو بھی محمد کا دیوانہ بنا جانا

وہ رنگ جو رومی پر جامی پہ چڑھایا تھا
اس رنگ کی کچھ رنگت مجھ پہ بھی چڑھا جانا

قدرت کی نگاہیں بھی جس چہرے کو تکتی تھیں
اس چہرہ انوار کا دیدار کرا جانا

جس خواب میں ہو جائے دیدار نبی حاصل
اے عشق کبھی مجھ کو نیند ایسی سلا جانا

دیدار محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی حسرت تو رہے باقی
جزا سکے ہر اک حسرت اس دل سے مٹا جانا

دنیا سے ریاض ہو جب عقبٰی کی طرف جانا
داغ غم احمد سے سینے کو سجا جانا

علامہ سید ریاض الدین سہروردی
Syed Riaz uddin Soharwardi

Many Thanks to Mustafa Khan for sharing this naat on Facebook.

Har Chand Ke Rang o Roop Zaibast Mera

Har Chand Ke Rang o Roop Zaibast Mera

ہر چند کہ رنگ و روی زیباست مرا
چوں لالہ رُخ  و چو سرو بالا ست مرا
معلوم نہ شد کہ در طربخانہ خاک
نقاشِ ازل بہر چہ آرا ست مرا

بے شک میرا حسن و جمال اور رنگ و روپ بہت خوب ہے
لالہ کی طرح سرخ اور سرو کی مانند دراز قد ہوں
لیکن سمجھ نہیں آتی کہ اس فانی دنیا مٹی کے گھر میں
قدرت نے مجھے کس لئے اتنے حسن و جمال سے نوازا ہے

عمر خیام
Omar Khayyam