Tu Ghani az Har Do Alam man Faqir

Tu Ghani az Har Do Alam man Faqir
تو غنی از ہر دو عالم من فقیر

Tu Ghani az Har Do Alam man Faqir
Roz e Mehshar Uzr Hai Man Pazeer

تو غنی از ہر دو عالم من فقیر
روز محشر عذر ہائے من پذیر

You are the self sufficient (un-wanting) and independent from both the worlds and I am a miserable Faqeer.
At the day of judgement (Doomsday) please accept my excuse and forgive me

علامہ اقبال بارگاہ الہیٰ میں التجا کر رہیے ہیں

تو دونوں عالم سے بے نیاز ہے اور میں ایک عاجز سوالی ہوں
روز قیامت میری ایک عرض قبول کر لینا

Var Hisabam Ra Tu beeni Naguzeer
Az Nigah e Mustafa Pinhaan Bageer

ورحسابم را تو بینی نا گزیر
از نگاہ مصطفے پنہاں بگیر

If you must want to open my record and it is inevitable (unavoidable)
Please keep it hidden from my beloved prophet Mustafa (PBUH)

اگر میرا حساب نامہ اعمال دیکھنا بڑا ہی ضروری ہے تو
برائے مہربانی حضور ؐ کی نگاہوں سے بچا کر حساب کرنا

مطلب یہ کہ میں گناہ گار اُمتی ہوں میں اپنے نبی کے سامنے شرمند گی سے بچ جاؤں

اور حضور کو میری وجہ سے تیرے دربار میں اور دیگر انبیا کے سامنے شرمندہ نہ ہونا پڑے
اس لئے مجھے ایک طرف ہٹا کرتنہائی میں حساب کتاب کرنا

————————————————————————————–
دوسری طرف حضرت بیدم وارثی نے کسی اور خواہش کا اظہار کیا روز قیامت کے پس منظر میں

عجب تماشا ہو میدان حشر میں بیدم
کہ سب ہوں پیش خدا اور میں روبروئے رسول

————————————————————————————–

Thanks to Asifa Mumtaz for sharing the following article of Irfan Siddique

Tu Ghani Az Har Do Alam - Allama Iqbal -column -Naqsh Khiyal -Irfan Siddique -

Tu Ghani Az Har Do Alam- Allama Iqbal- Column Naqsh Khiyal by Irfan Siddique

Orya Maqbool Jan - Harf e Raaz - Tu Ghani Az har do Alam

Orya Maqbool Jan – Harf e Raaz –
Tu Ghani Az har do Alam

  Allama Iqbal
علامہ اقبال

11 thoughts on “Tu Ghani az Har Do Alam man Faqir

  1. Bhai ye Rubaie Iqbal ki kisi book mai nhi h or ye Rubaie Iqbal ny D.G khan k ek ustad ko khat mai likh k day thi or on ki req pay Iqbal ny onhay gift kr d thi.
    Ref.
    Irfan Siddiqui

  2. نہ کرو جدا خدا را مجھے اپنے آستاں سے
    نہ ملے گا پھر سہارا جو اٹھا دیا یہاں سے

    یہی میری بندگی ہےیہی میری سجدہ ریزی
    کہ ذرا لپٹ کہ رو لوں تیرے سنگ آستاں سے

    تو ہزار بار ٹھکرا میرا سر یہیں جھکے گا
    میرےدل میں ہے محبت تیرےسنگ آستاں سے

    مجھے خاک میں ملا کر میری خاک بھی اڑا دے
    تیرے نام پہ مٹاہوں مجھے کیاغرض نشاں سے

    نہ ہو پاس ان کہ پردہ نہ یہ پردہ داریاں ہوں
    میری دکھ بھری کہانی جو سنے میری زباں سے

    اس خاک آستاں میں اک دن فنا بھی ہو گا
    کہ بنا ہوا ہے بیدم اسی خاک آستاں سے

  3. This is the correct form.
    There is error in line no 3.

    تو غنی از ہر دو عالم من فقیر
    روز محشر عذر ہائے من پذیر
    گر تُو می بِینی حِسابم ناگزیر
    از نگاہ مصطفےٰ پنہاں بگیر

  4. iss rubai ka teesra misra iss tarah hai

    VER HISABUM RA TU BEENI NA GUZEER

    Kindly verify it from any iqbal shanaas and correct it
    thank

  5. This Ruba’i is available in the book “Zinda Rood”
    Zinda Rood is a 4 volume biographical work of Justice Javed Iqbal on Muhammad Iqbal.

    The correct line number 3 is as follows:

    “Dar Hisabam Ra Tu Beeni Naguzeer”

    There are many versions of line 3 and I was looking for the authentic source to confirm it. Finally, I got in “Zinda Rood”.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *