Barqay Jamal e Yaar Nay Rakhtay Sakoon Jala Diya

Barqay Jamal e yaar nay rakhtay sakoon jala diya
برق جمال یار نے رخت سکوں جلا دیا

برق جمال یار نے رخت سکوں جلا دیا
خانہ دل گداز نے عرش بریں ہلا دیا

خوب ہی دیں تسلیاں سینے پہ میرے رکھ کہ ہاتھ
صبرو قرار چھین کر درد جگر بڑھا دیا

سینے میں ڈھونڈتی ہے کیاتیری نگاہ فتنہ ساز
دل توتمہاری یاد میں مدت ہویئ لٹا دیا

دق تو کیا کلیم نے برق جمال یار کو
طور کا کیا قصور تھا طور کو کیوں جلا دیا

بیدم فقیر چیز کیا چھوڑا نہ کوہ طور کو
بن کہ جمال شمع رو جس پر گری جلا دیا

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Download Link: Barqay Jamal e yaar nay rakhtay sakoon jala diya – Farzand Ali Soharwardy

4 thoughts on “Barqay Jamal e Yaar Nay Rakhtay Sakoon Jala Diya

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *