Har Shab Manam Futada Ba Gird e Sara e Tu

Har Shab Manam Futada Ba Gird e Sara e Tu
Ta Roz Aah o Nala Kunam Az Bara e Tu

ہر شب منم فتادہ بہ گرد سرای تو
تار روز آہ و نالہ کنم از برای تو

ہر رات میں تیرے آستانے کے پاس پڑا رہتا ہوں
اور صبح تک تیرے غم میں آہ و زاری کرتا رہتا ہوں

روزے کہ ذرہ ذرہ شود استحوان من
باشد ہنوز در دل تنگم ہوای تو

جس روز کہ میری ہڈیاں ذرہ ذرہ ہو جائیں گی
پھر بھی میرے چھوٹے سے دل میں تیری  تمنا ہو گی

ہرگز شب وصال تو روزے نہ شد مرا
اے وای بر کسے کہ بود مبتلای تو

کوئی بھی دن تیرے قرب کی رات نہ لایا
ہائے افسوس اس پر جو تیری محبت میں مبتلا ہوتا ہے

جان را روان برای تو خواہم نثار کرد
دستم نمی دہد کہ نہم سر بہ بپای تو

اپنی جان تیرے لئے قربان کر دوں
بس نہیں چلتا کہ تیرے پاؤں پر سر رکھ دوں

جانا بیا ببین تو شکستہ دلی من
عمرے گذشتہ است منم آشنای تو

اے محبوب آ اور دیکھ میری شکستہ دلی
تیری آشنائی میں میری اک عمر بیت گئی ہے

بہر حال زار من نظرے کن ز روی لطف
تو پادشاہ حسن و خسرو گدای تو

مہربانی فرما کر میری حالت زار پر لطف کی نظر کر
تو حسن کا بادشاہ ہے اور خسرو تیرا گدا ہے

امیر خسرو
Amir Khusro


Guftam Ke Roshan Az Qamar Gufta Ke Rukhsar e Manst

Guftam Ke Roshan Az Qamar Gufta Ke Rukhsar e Manst
Guftan Ke Shereen Az Shakar Gufta Ke Guftar e Manst

گفتم کہ روشن از قمر، گفتا کہ رخسار منست
گفتم کہ شیریں از شکر، گفتا کہ گفتار منست

میں نے پوچھاکہ چاند سے زیادہ روشن کوئی ہے،کہا کہ میرا رخسار
پوچھا کہ شکر سے میٹھی کوئی چیز ہے ،کہا کہ میری گفتگو ہے

I asked what is more beautiful than the moon, replied my cheeks
I asked what is far sweet than sugar, replied my words

گفتم طریق عاشقان، گفتا وفا داری بود
گفتم مکن جورو جفا، گفتا کہ ایں کار منست

پوچھا عاشقی کا طریقہ، کہا وفاداری
کہا کہ ظلم و ستم نہ کرنا ، کہا کہ  میرا کام ہے

I asked what lover may do, replied faithfulness
I asked please don’t be cruel and unfaithful, replied it is my style

گفتم کہ مرگ عاشقان ، گفتا کہ درد ہجر من
گفتم کہ علاج زندگی، گفتا کہ دیدار منست

پوچھا کہ عاشق کیسے مرتے ہیں، کہا کہ میرےفراق میں
پوچھا کہ زندگی کا علاج کیا ہے،کہا کہ میرا دیدار ہے

I asked what is the cruel death, replied the pain of living without me
I asked what is a healthy life, replied gazing at me

گفتم بہاری یا خزاں ، گفتا کہ رشک حسن من
گفتم خجالت کبک را، گفتا کہ رفتار منست

پوچھا کہ بہار اور خزاں ،کہا کی میرے حسن پر رشک
کہا کہ قمر کی شرمندگی ،کہا کہ میری رفتار ہے

I asked what is spring and autumn, replied fragments of my beauty
I asked what makes partridge ashamed, replied my walking style

گفتم کہ حوری یا پری، گفتا کہ من شاہ جہاں
گفتم کہ خسرو ناتواں، گفتا کہ پرستار منست

کہا کہ حور ہے کہ پری،کہا میں سارے جہان کا بادشاہ
پوچھا کہ غریب خسرو،کہا کہ میرا پرستار ہے

I asked what are you poplar or fairy, replied I am lord of beauties
I asked about KHESRO feeble, replied he is my lover

امیر خسرو
Amir Khusro

Thanks to Naqeeb Ahmad for sharing English Translation

Kafir Ishqm Musalmani Mera Darkar Naist

Kafir Ishqm Musalmani Mera Darkar Naist
Har Rag e Man Taar Gashta Hajat e Zanaar Naist

کافر عشقم مسلمانی مرا درکار نیست
ہر رگ من تار گشتہ حاجت زنار نیست

میں عشق میں کافر ہوں ،مجھے مسلمانی کی ضرورت نہیں
میری ہر رگ تار تار ہو گئی ہے مجھے زنار کی بھی ضرورت نہیں

از سر بالیں من بر خیز اے نادان طبیب
درد مند عشق را  دارو بجز دیدار نیست

اے نادان معالج میرے سر ہانے سے اُٹھ جا
عشق کے بیمار کا علاج سوائے دیدار کے ممکن نہیں

ابر را با دیدۂ گریان من نسبت مکن
نسبتت با رود کے باران خونبار نیست

بادل کو میری آنکھوں سے نسبت نہ دو
بارش کو خون کے آنسوؤں سے کوئی نسبت نہیں

شاد اے دل کہ فردا برسر بازار عشق
مژدۂ قتل ست گرچہ وعدئے دیدار نیست

اے دل خوش ہو جاکہ آنے والے کل کو بازار عشق میں
تیرے لئے قتل کی خوشخبری ہے مگر دیدار کا دعدہ نہیں

خلق می گوید کہ خسرو بت پرستی میکند
آرے آرے میکنم با خلق عالم کار نیست

لوگ مجھے کہتے ہیں کہ خسرو بتوں کو پوجتا ہے
ہاں ہاں میں ایسے کرتا ہوں دنیا والوں  کو ہم سے کوئی کام نہیں

امیر خسرو
Amir Khusro

Dilam Dar Ashqi Awara Shud Awara Tar Bada

Dilam Dar Ashqi Awara Shud Awara Tar Bada
Tanam Az Baidili Baichara Shud Baichara Tar Bada

دلم در عاشقی آورہ شد آدارہ تر بادا
تنم از بیدلی یبچارہ شد یبچارہ تر بادا

میرا دل عاشقی میں آوارہ ہو گیا ہے ، خدا کرے یہ اور زیادہ آوارہ ہوتا جائے
میرا بدن بے دلی سے کمزور ہو گیا ہے ، یہ کمزور ہوتا چلا جائے

بہ تاراج  عزیزان زلف تو عیارے دارد
بہ خونریز غریبان چشم تو عیارہ تر بادا

اپنے عزیزوں کی غارت گری میں تیری زلف عیار نے بڑا کام کیا ہے
غریبوں کا خون بہانے کو تیری نظریں اور زیادہ  عیار ہو جائیں

رخت تازہ ست و بہر  مردن خود تازہ تر خواہم
دلت خارہ ست و بہر کشتن من خارہ تر بادا

تیرا رخ تازہ ہے لیکن مجھے مارنے کو اور زیادہ تازہ ہو جائے
تیر ا دل پتھر ہے لیکن مجھے مارنے کو اور زیادہ سخت ہو جائے

گر اے زاہد ، دعای خیر میگوئی مرا ، این گو
کہ آن آوارہ از کوی بتان آوراہ تر بادا

اے عبادت گزاردعا دینی ہے تو یہ کہہ
کہ مجھے جیسا آورہ محبوب کی گلی میں زیادہ آوراہ ہو جائے

ہمہ گویند کز خونخواریش خلقے بہ جان آمد
من این گویم کہ بہر جان من خونخوارہ تر بادا

سب کہتے ہیں کہ وہ معشوق کی خونخواری سے دل و جان سے تنگ ہیں
میں یہ کہتا ہون کہ وہ میری جان کے لئے اور زیادہ خونخوار ہو جائے

دل من پارہ گشت از غم ، نہ زانگونہ کہ بہ گردد
وگر جانان بدین شاد است ، یا رب ، پارہ تر بادا

میر ا دل غم سے پارہ ہو گیا ہے ،نہیں کہتا کہ ٹھیک ہو
اگر یہ حالت محبوب کو پسند ہے تو اور زیادہ پارہ ہو جائے

چو با تر دامنی خو کرد خسرو با دو چشم تر
بہ آب چشم پاکان دامنش ہموارہ تر بادا

اے خسرو تیری دو آنکھوں نے دامن تر کر دیا ہے
ان آٓنسو وں سے تیر ا پاک دامن اور زیادہ ہموار ہو جائے

امیر خسرو
Amir Khusro

Khabaram Raseed Imshab Ke Nigaar Khuahi Aamad

Khabaram Raseed Imshab Ke Nigaar Khuahi Aamad
Sar-e Man Fidaa-e Raah-e Ki Sawaar Khuahi Aamad

خبرم رسید امشب کہ نگار خواہی آمد
سرِ من فدای راہے کہ سوار خواہی آمد

میرے محبوب مجھے خبر ملی ہے کہ تو آج رات کو آئے گا
میر ا سراُس راہ پر قربان جس راہ پر تو سواری کرتا آئے گا

بہ لبم رسیدہ جانم ،تو بیا کہ زندہ مانم
پس ازان کہ من نمانم، بہ چہ کار خواہی آمد؟

میری جان ہونٹوں پر آگئی ہے ، تو آجا کہ میں زندہ رہوں
پھر جب میں نہ رہوں گا تو کس کام کے لئے آئے گا

غم و غصہ فراقت بکشم چنانکہ دانم
اگرم چو بخت روزے بہ کنار خواہی آمد

تیری جدائی  کا غم  اور دکھ بس میں ہی جانتا ہوں
جس دن تو پہلو میں آئے گا سب غم بھلا دوں گا

دل و جان ببرد چشمت بہ دو کعبتین و زین پس
دو جہانت داو، اگر تو بہ قمار خواہی آمد

دل و جان چھین کر لے گیئں ہیں تیر ی دو آنکھیں اپنے دانوں سے
اب دونوں جہان داو پر لگ جائیں اگر تو قمار  بازی پر آئے

می تست خون خلقے و ہمی خوری دما دم
مخور این قدح کہ فردا بہ خمار خواہی آمد

تیری شراب تو عاشقوں کا خون ہے اور تو لگاتار پیتا جا رہا ہے
اس پیالے کو ترک کر دے کہ کل تو نے بھی خماری میں آجانا ہے

کششے کہ عشق دارد نہ گزاردت بدینساں
بجنازہ گر نیائی بہ مزار خواہی آمد

عشق کی کشش بے اثر نہیں ہوتی
جنازہ پر نہ سہی مزار پر تو آئے گا

ہمہ آہوانِ صحرا سرِ خود نہادہ بر کف
بہ امید آنکہ روزے بشکار خواہی آمد

صحرا کے ہرن اپنے ہاتھوں میں اپنا سر اٹھا کے پھر رہے ہیں
اس امید پر کے تو کسی روز شکار کے لئے آئے گا

بہ یک آمدن ربودی دل و دین و جانِ خسرو
چہ شود اگر بدینساں دو سہ بار خواہی آمد

تیری ایک آمد پر خسرو کے دل وجان دین دنیا چلے گئے
کیا ہو گا جب اسی طرح دو تین با ر آئے گا

امیر خسرو
Amir Khusro

Chashmay Mastay Ajabay Zulf Daraazay Ajabay

Chashmay Mastay Ajabay Zulf Daraazay Ajabay
چشم مست عجبی زلف دراز عجبی

 

چشم مست عجبی زلف دراز عجبی
مئے پرستی عجبی فتنہ طراز عجبی

بہر قتلم چوں کشد ، تیغ نہم سر بسجود
او بہ ناز عجبی من بہ نیاز عجبی

صید کردی دل عالم چہ تماشا کر دی
دیدہ بازی عجبی زلف دراز عجبی

بوالعجب حسن و جمال و خط و خال و گیسو
سرو قد عجبی قا مت ناز عجبی

وقت بسمل شدنم چشم بر ویش باز است
مہربانی  عجبی بندہ نواز عجبی

حق مگو کلمہ کفر ست درینجا خسرو
راز دانی عجبی صاحب راز عجبی

امیر خسرو
Amir Khusro
Nusrat Fateh Ali Khan: Chashmay Mastay Ajabay Zulf Daraazay Ajabay


Abida Parveen: Chashmay Mastay Ajabay Zulf Daraazay Ajabay

Ay Chehra-e Zeba-e-Tu Rashk-e butan-e-Azari

Ay Chehra-e Zeba-e-Tu Rashk-e butan-e-Azari
ای چہرہ زیبای تو رشک بتان آزری

 

ای چہرہ زیبای تو رشک بتان آزری
ہر چند وصف می کنم در حسن زاں بالا تری

تو از پری چا بک تری ، و ز برگ گل نازک تری
و ز ہر چہ گوئم بہتری ، حقا عجائب دلبری

تا نقش می بندد فلک ، ہر گز ندادہ ایں نمک
حوری ندانم یا ملک، فرزند آدم یا پری

عالم ہمہ یغمای تو ، خلقی ہمہ شیدای تو
آں نرگس شہلای تو آوردہ رسم کافری

آفاقہا گردیدہ ام مہر بتاں ورزیدہ ام
بسیار خوباں دیدہ ام لیکن تو چیزی دیگری

ای راحت و آرام جان با قد چوںسرورواں
زینساں مرو دامن کشاں کا رام جانم می پری

من تو شدم تو من شدی، من تن شدم تو جان شدی
تا کس نہ گوید بعد ازیں من دیگرم تو دیگری

Mun tu shudam tu mun shudi, Mun tun shudam tu jaan shudi
Taakas na goyad baad azeen, Mun deegaram tu deegari

I have become you, and you me,I am the body, you soul
So that no one can say hereafter, That you are are someone, and me someone else.

خسرو غریب است و گدا افتادہ در شہر شما
با شد کہ از بہر خدا سوی غریباں بنگری

امیر خسرو
Amir Khusro

 

http://sufipoetry.blogspot.com/2009/05/man-tu-shudamtu-man-shudi-hazrat-amir.html

 

Ejaz Hussain Hazarvi  Ay Chehra-e Zeba-e-Tu Rashk-e butan-e-Azari

Zee Haal e Miskeen Makun Taghaful

Zee Haal e Miskeen Makun Taghaful
ز حال مسکین مکن تغافل

ز حال مسکین مکن تغافل ورائے نیناں بنائے بتیاں
کہ تا ب ہجراں ندارم اے جاں نہ لیہو کاہے لگائے چھتیاں

Zeehaal-e miskeen makun taghaful,
duraye naina banaye batiyan;
ki taab-e hijran nadaram ay jaan,
na leho kaahe lagaye chhatiyan.

Do not overlook my misery
Blandishing your eyes, and weaving tales;
My patience has over-brimmed, O sweetheart,
Why do you not take me to your bosom.

شبان ہجراں دراز چوں زلف وروز وصلت چو عمر کوتاہ
سکھی پیا کو جو میں نہ دیکھوں تو کیسے کاٹوں اندھیری رتیاں

Shaban-e hijran daraz chun zulf
wa roz-e waslat cho umr kotah;
Sakhi piya ko jo main na dekhun
to kaise kaatun andheri ratiyan.

The nights of separation are long like tresses,
The day of our union is short like life;
When I do not get to see my beloved friend,
How am I to pass the dark nights?

یکایک از دل دو چشم جادو بصد فریبم ببردتسکیں
کسے پڑی ہے جو جا سناوے پیارے پی کو ہماری بتیاں

Yakayak az dil do chashm-e jadoo
basad farebam baburd taskin;
Kise pari hai jo jaa sunaave
piyare pi ko hamaari batiyan.

Suddenly, as if the heart, by two enchanting eyes
Is beset by a thousand deceptions and robbed of tranquility;
But who cares enough to go and report
To my darling my state of affairs?

چو شمع سوزاں چو زرہ حیراں ز مہر آن مہ بگشتم آخر
نہ نیند نیناں ، نہ انگ چیناں نہ آپ آیئں  نہ بھیجیں پتیاں

Cho shama sozan cho zarra hairan
hamesha giryan be ishq aan meh;
Na neend naina na ang chaina
Na aap aaven na bhejen patiyan.

The lamp is aflame; every atom excited
I roam, always, afire with love;
Neither sleep to my eyes, nor peace for my body,
neither comes himself, nor sends any messages

بحق روز وصال دلبر کہ داد مارا فریب خسرو
سپت منکے ورائے راکھوں جو جائےپاوں پیا کہ کھتیاں

Bahaqq-e roz-e wisal-e dilbar
ki daad mara ghareeb Khusrau;
Sapet man ke waraaye raakhun
jo jaaye paaon piya ke khatiyan.

In honour of the day of union with the beloved
who has lured me so long, O Khusrau;
I shall keep my heart suppressed,
if ever I get a chance to get to his place

امیر خسرو
Amir Khusro

Download mp3:Zay Haalay Maskeen Makun Taghafil 02-09-04 786

Meaning: http://en.wikipedia.org/wiki/Amir_Khusrow#Meaning

Youtube: Zee Haal e Miskeen Makun Taghaful

http://www.youtube.com/watch?v=QQr3TNYU4dc

Nami Danam Che Manzil Bood

Nami Danam Che Manzil Bood
نمی دانم چہ منزل بود

نمی دانم چہ منزل بود شب جائے کہ من بودم
بہر سو رقص بسمل بود شب جائے کہ من بودم

I wonder what was the place where I was last night,
All around me were half-slaughtered victims of love,tossing about in agony.

پر ی پیکر نگاری ، سرو قد ، لالہ رخساری
سراپا آفت دل بود شب جائے کہ من بودم

There was a nymph-like beloved with cypress-like form and tulip-like face
Ruthlessly playing havoc with the hearts of the lovers.

رقیباں گوش بر آواز ، او در ناز, من ترساں
سخن گفتن، چہ مشکل بود شب جائے کہ من بودم

The enemies were ready to respond , He was attracting, I was dreading
It was too difficult to speak out there where I was last night.

خدا خود میر مجلس بود اندر لامکاں خسرو
محمد شمع محفل بود شب جائے کہ من بودم

God himself was the master of ceremonies in that heavenly court,
Oh Khusrau, where (the face of) the Prophet too was shedding light like a candle

امیر خسرو
Amir Khusro