Man Ke Basham Az Bahar e Jalwa e Dildar Mast

Man Ke Basham Az Bahar e Jalwa e Dildar Mast
Choon Maney Naid Nazar Dar Khana Khumaar Mast

 

 من کہ باشم از بہار جلوہ دلدار مست
چون منے ناید نظر در خانہ خمار مست

میں تو دلدار کے جلوے کی بہار سے مست ہوں
میخانے میں میری طرح کا مست نظر نہیں آتا

مے نیاید در دلش انگار دنیا ہیچ گاہ
زاہدا ہر کس کہ باشد از ساغر سرشار مست

شراب کے آنے سے دل میں دنیا کی قدر ختم جاتی ہے
اے زاہد جو کوئی بھی ساغر سرشار سے مست ہو

جلوہ مستانہ کر دی دور ایام بہار
شد نسیم و بلبل و نہر و گلزار مست

تو نے بہار کے دنوں میں اپنا جلوہ مستانہ دکھایا
جس کی وجہ سے ہوا و بلبل ، نہر و پھول و باغ سبھی مست ہو گئے

من کہ از جام الستم مست ہر شام کہ سحر
در نظر آید مرا ہر دم درو دیوار مست

میں تو روز ازل سے جام الست سے مست ہوں اور ہر صبح و شام
درودیوار ہر لمحے مجھے مست نظر آتے ہیں

چون نہ اندر عشق او جاوید مستیہا کنیم
شاہد مارا بود گفتار و ہم رفتار مست

میں کیوں اس کے عشق میں مستیاں نہ کروں
جب کہ محبوب کہ رفتار و گفتار دونوں ہی مست ہیں

تا اگر راز شما گوید نہ کس پروا کند
زین سبب باشد شمارا محرم اسرار مست

اگر راز کو ظاہر کر بھی دیا جائے تو پروا نہیں
کیونکہ محرم راز بھی مست ہے

غافل از دنیا و دین و جنت و نار است او
در جہان ہر کس کہ میباشد قلندر وار مست

وہ دنیا و دین و جنت و دوزخ سے بے پرواہ ہوتا ہے
جو کوئی بھی اس جہان میں قلندر کہ طرح مست ہو

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Gar Ishq e Haqiqi Ast O Gar Ishq Majaz Ast

Gar Ishq e Haqiqi Ast O Gar Ishq Majaz Ast
Maqsood Azeen Har Do Mera Soz o Gudaz Ast

گر عشق حقیقی است و گر عشق مجاز است
مقصود ازین ہر دو مرا سوز و گداز است

چاہے عشق حقیقی ہو چاہے عشق مجاز ہو
مرا مقصد ان دونوں سے صرف  سوزو گداز ہے

گفتی تو الست و زدم آواز بلی من
بنگر کہ مرا با تو ز میثاق نیاز است

تو نے ازل میں الست بربی کہا اورمیں نے اقرار کیا
تو دیکھ کہ میرا تیرے ساتھ عہد نیاز بندھا ہوا ہے

راز تو بلب ناورد و دل شودش خون
ہر کس کہ درین دہر ترا محرم راز است

وہ تیرا راز لبوں پہ نہیں لاتا یہاں تک کہ دل خون ہو جاتا ہے
جو کوئی بھی اس دنیا میں تیرا محرم راز ہو جاتا ہے

عشق ہست و صد آفات محن لازم وملزوم
این منزل دشوار و رہ سخت دراز است

عشق ہو تو سینکڑوں آفات و بلیات لازم و ملزوم ہو جاتی ہیں
یہ راہ بڑی دشوار اور مشکل ترین اور لمبی ہے

اندر دل او گاؤ خر  و ذکر بلبہا
قاضی بتصور کہ ہمین حق  نماز است

دل میں گائے  اور گدھا ہے اور لبوں پر ترا ذکر ہے
قاضی اپنے خیال میں اسی کو نماز حق سمجھتا ہے

خواہی کہ روی بردر آن دوست قلندر
آن ہدیہ کہ مقبول شودعجز و نیاز است

اے قلندر اگر تو دوست کے دروازے پر جانا چاہتا ہے
تو وہاں ایک ہی ہدیہ قبول ہوتا ہے جو عجزو نیاز ہے

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Ay Sharaf Khuahi Agar Wasl e Habib

Ay Sharaf Khuahi Agar Wasl e Habib
Nala Mai Zan Roz o Shab Choon Andaleeb

اے شرف خواہی اگر وصل حبیب
نالہ مے زن روز و شب حون عندلیب

اے شرف اگر تو محبو ب کا وصل چاہتا ہے
صبح و شام بلبل کی طرح نالے بلند کرتا رہ

من مریض عشقم و  از جان نفور
دست بر بنض من آرد چون طبیب

میں عشق کا مریض ہوں اور زندگی سے بیزار ہوں
میری نبض پر طبیب کیوں ہاتھ رکھے

رسم و راہ ما نداند ہر کہ او
در دیار عاشقی ماند غریب

وہ ہمارے رسم و راہ کو نہیں جان سکتا
جو کوئی بھی عشق کے کوچے میں اجنبی ہے

شربت دیدار دلداران خوش است
گر نصیب ما نباشد یا نصیب

دیدار کا شربت تو بہت لذیذ ہوتا ہے
مگر ہمارے نصیب میں شاید ہے شاید نہیں ہے

ما ازو دوریم دور اے وائے ما
از رگ جان است او ما را قریب

میں اُس سے دور بہت دور ہوں ہائے افسوس
وہ تو میری رگ جان سے بھی قریب ہے

بر سرم جنبیدہ تیغ محتسب
در دلم پوشیدہ اسرار عجیب

میرے سر پر محتسب کی تلوار چل گئی ہے
میرے دل میں عجیب اسرار پنہاں ہیں

بو علی شاعر شدی ساحر شدی
این چہ انگیزی خیالات غریب

بو علی شاعر ہو گیا ، بلکہ ساحر ہو گیا
یہ کس طرح کی عجیب و غریب خیال انگیزیاں کرتا پھر رہا ہے

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Hum Sharah Kamal e Tu Naganjad Ba GumaneHa

Hum Sharah Kamal e Tu Naganjad Ba GumaneHa
Hum Wasf Jamal e Tu Nayayd Ba BayaneHa

ہم شرح کمال تو نگنجد بہ گمانہا
ہم وصف جمال تو نیاید بہ بیانہا

تیرے کمال کی تشریح گمانوں میں نہیں آتی
تیرے جمال کےوصف بیانوں میں نہیں سماتے

یک واقف اسرار تو نبود کہ بگوید
از ہیبت راز تو فرد بستہ زبانہا

تیرے رازوں سے واقف ایک بھی ایسا نہیں جوراز کہہ دے
تیرے راز کی  ہیبت و جلال سے تو زبانیں بند ہو گئیں ہیں

ما مرحلہ در مرحلہ رفتن نتوانیم
در وادئے توصیف تو بگستہ عنانہا

ہم تیری وادی میں منزل بہ منزل نہیں چل سکتے
تیر ی تعریف کرتے کرے تو ہماری باگیں ٹوٹ گئیں ہیں

حسن تو عجیب است جمال تو غریب است
حیران تو دلہا و پریشان تو جانہا

تیرا حسن عجیب ہے تیرا جمال انوکھا ہے
دل حیران ہے اور جان پریشان ہے

چیزے نبود جز تو کہ یک جلوہ نماید
گم د ر نظر ماست مکینہا و مکانہا

اب کوئی شے نہیں جو جلوہ دکھا سکے سوائے تیرے
میری نظر میں تو  مکان و مکین گم ہو گئے ہیں

یک ذرہ ندیدیم  کہ نبود ز تو روشن
جستیم ز اسرار تو در دہر نشانہا

کوئی ذرہ ایسا نہ دیکھا جس میں تیرا نور نہ ہو
ہم نے دنیا میں تیرے رازوں کی نشانیاں ڈھونڈنے میں کو ئی کسر اُٹھا نہ رکھی

یک تیر نگاہت را ہمسر نتوان شد
صد تیر کہ بر جستہ ز آغوش کمانہا

تیری نگا ہ کے ایک تیر کا سامنامشکل ہے
ادھر تو سینکڑوں تیر تیری آغوش سے نکلے ہیں

دارد شرف از عشق اے فتنہ دوران
در سینہ نہان آتش و   در حلق فغانہا

اے فتنہ دوراں شرف عشق کے باعث
اپنے سینے میں عشق کی آگ اور حلق میں آہ و زاری رکھتا ہے

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Hast Dar Seena e Ma Jalwa Janana e Ma

Hast Dar Seena e Ma Jalwa Janana e Ma
Butt Parstaim Dil e Mast Sanam Khana e Ma

ہست در سینہ ما جلوہ جانانہ ما
بت پرستیم دل ماست صنم خانہ ما

ہمارے سینہ میں ہمارے محبوب کا جلوہ موجود ہے
ہم بت پرست ہیں ہمارا دل ہمارا بت خانہ  ہے

اے حضر چشمہ حیوان کہ بران می نازی
بود یک قطرہ ز درتہِ پیمانہ ما

اے خضر تو جس آب حیات کے چشمہ پر نازاں ہے
وہ تو ہمارے جام کی تہہ کا ایک قطرہ ہے

جنت و نار پس ماست بصد مرحلہ دور
می شتابد بہ کجا ہمت مردانہ ما

جنت و دوزخ تو ہم سے سینکڑوں مسافتیں دور رہ گئی ہے
ہماری ہمت مردانہ اس شتابی سے کہاں جارہی ہے

جنبد از جائے فتد بر سر افلاک برین
بشنود عرش اگر نعرہ مستانہ ما

اپنی جگہ سے ہل جائے اور آسمانوں پر گر جائے
عرش اگر ہمارے نعرہ مستانہ کو سن لے

ہمچو پروانہ بسوزیم و بسازیم بعشق
اگر آں شمع کند جلوہ بکاشانہ ما

پروانہ کی طرح جل جاؤں اور عشق کو نبھا دوں
اگر وہ شمع ہمارے گھر میں جلوہ افروز ہو

ما بنازیم بتو خانہ ترا بسپاریم
گر بیائی شب وصل تو درخانہ ما

تجھ پر ناز کریں اور گھر تیرے حوالے کر دیں
اگر شب وصل تو ہمارے گھر قدم رنجہ فرمائے

گفت اوخندہ زنان گریہ چو کردم بدرش
بو علی ہست مگر عاشق دیوانہ ما

جب ہم نے اس کی چوکھٹ پر آہ و زاردی کی
کہا کہ بو علی کچھ نہیں مگر ہمارا عاشق و دیوانہ ہے

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Ae Sanayat Rahmat Lil Alameen

Ae Sanayat Rahmat Lil Alameen
Yak Gada e Faiz e Tu Rooh ul Ameen

اے ثنائت رحمتہ اللعالمین
یک گدائے فیض تو روح الامین

اے کہ تیری ثنا رحمتہ اللعالمین ہے
تیرے فیض کا اک بھکاری جبرئل ہے

اے کہ نامت را خدائے ذوالجلال
زد  رقم  بر جبہہ عرش برین

اے کہ تیر ے نام کی خدائے ذوالجلال نے
چند سطور اپنے عرش کی پیشانی پر لکھی ہیں

آستان عالی تو بے مشل
آسمانے ہست بالائے زمین

ترا آستانہ بے مشال ہے
وہ تو زمیں  پر ایک  آسمان ہے

آفرین بر عالم حسن تو باد
مبتلائے تست عالم آفرین

تیرے حسن کے عالم پر آفرین ہے
عالم کو بنانے والا تجھ پر فدا ہے

یک کف پاک از در پر نور اُو
ہست مارا بہتر از تاج و نگین

اس کے در کی پر نور مٹھی بھر خاک
ہمارے لئے تخت و تاج سے بہتر ہے

خرمن فیض ترا اے ابر فیض
ہم زمین و ہم زمان شد خوشہ چین

تیرے فیض کا کھلیان اے فیض کے بادل
زمین و آسمان تیرے خوشہ چین ہیں

از جمال تو ہمے بینم مسا
جلوہ در آینہ عین الیقین

تیرے جمال میں دیکھتا ہوں
عین ایقین کا جلوہ تیرے آینہ میں

خلق را آغاز و انجام از تو ہست
اے امام اولین و آخرین

مخلوق کی ابتدا اور انتہا تجھ سے ہے
اے اولین و آخرین کے امام

غیر صلوۃ و سلام و نعت تو
بو علی را نیست ذکر دلنشین

صلٰوۃ وسلام اور نعت کے بڑھ کر
بو علی کے لئے کوئی ذکر دلنشین نہیں ہے

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Agar Rindam Agar Man But Parastam

Agar Rindam  Agar Man But Parastam
Qaboolam Kun Khudaya Har Che Hastam

اگر رندم اگر من بت پرستم
قبولم کن خدایا ہر چہ ہستم

میں شرابی ہوں یا بت پرست ہوں
خدایا قبول کر لے جو کچھ بھی ہوں

بت دارم درون سینہ خویش
کہ روز و شب من آن بت مے پرستم

میرے سینے میں ایک بت ہے
میں دن رات اس بت کی پرستش کرتا ہوں

بہ ہوشم ناورد ہنگامہ حشر
کہ من بد مست از روز الستم

ہوش میں نہ لائے گا محشر کا ہنگامہ مجھے
کیونکہ میں روز الست سے ہی مست ہوں

ندارم ننگ و عا ر از بت پرستی
کہ یارم بت بود من بت پرستم

مجھے بت پرستی سے ہرگز عار نہیں
کیونکہ یار میرا بت ہے اور میں بت پرست ہوں

بہ پیچ و تا ب عشق افتادم آنگہ
دل اندر زلف پیچان تو بستم

میں عشق کے پیچ و تاب میں اس وقت سے گرفتار ہوں
جب سے میں نے اپنا دل تیری زلف پیچاں میں باندھا

خمارد نشکند  آید اجل گر
کہ از جام شراب شوق مستم

موت بھی میرے خمار کو نہیں توڑ سکتی
کیونکہ میں عشق کی شراب کے جام سے مست ہوں

شرف چون نرگس چشمش بدیدم
بمستی ساغرو مینا شکستم

شرف نے جب سے نرگسی آنکھوں کو دیکھا ہے
مستی میں آ کر ساغرو مینا توڑ ڈالے ہیں

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Many Thanks to Wajahat Ali Warsi for review and corrections

Daani Ke Cheest Duniya Dil Az Khuda Bareedan

Daani Ke Cheest Duniya Dil Az Khuda Bareedan
Juz Ishq e OO Gazeedan Juz Zikr OO Shuneedan

دانی کہ چیست دنیا دل از خدا بریدن
جز عشق او گزیدن جز ذکر او شنیدن

کیا تو جانتا ہے کہ دنیا کیا ہے،خدا سے تعلق توڑنا
اس کے عشق کے سواچننا ، اس کے ذکر سے سوا سننا

دانی کہ چیست مستی  در عشق نازنیناں
ہم دست و پا فشاندن ہم پیرہن دریدن

کیا تو جانتا ہے کہ نازنینوں کے عشق کی مستی کیا ہے
ہاتھ پاؤں سے رقص کرنا  اور کپڑے پھاڑنا

دانی کہ چیست لذت در عہد زندگانی
بوئے سرش شنیدن لعل لبش چشیدن

جانتا ہے کہ زندگی کی لذت کیا ہے
محبوب کے سر کی خوشبو سونگھنا اور لعل لبوں کا ذائقہ چکھنا

دانی کہ چیست لازم آن شوخ نوجوان را
چون گل بخندہ بودن چون سرو نو چمیدن

جانتا ہے کہ شوخ نوجوان کے لئے کیا لازم ہے
پھول کی طرح ہنسنا،سرو  نوکی طرح چلنا

دانی کہ چیست مقصد  از عشق عاشقان را
ہم سوئے یار رفتن ہم روئے یار دیدن

جانتا ہے کہ عشق سے عاشقوں کا مقصد کیا ہوتا ہے
یار کی طرف جانا اور  یار کے چہرے کو دیکھنا

دانی کہ چیست مطلب از عشق تو شرف
نشتر بدل شکستن از دیدہ خون چکیدن

کیا تو جانتا ہے کہ تیرے عشق سے شرف کی غرض کیا ہے
تیر کو دل میں توڑنا  آنکھوں سے خون ٹپکانا

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Jamalat Bawad Andar Ru e Adam

Jamalat Bawad Andar Ru e Adam
Ke Mai Bodash Shraf Bar Jumla Adam

جمالت بود اندر روئے آدم
کہ مے بودش شرف بر جملہ آدم

آدم کے چہرے پر تیرا جمال موجود تھا
اسی لئے اُسے تمام انسانوں پر فضیلت ملی

اگر این نقطہ دانستے عزازیل
ہزاران سجدہ آوردے دمادم

اگر یہ بات ابلیس جان جاتا
تو مسلسل ہزاروں سجدے کرجاتا

بر آدم منکشف جملہ اسمائے
ملائک اندران جا ماندہ ابکم

آدم ؑ پر تمام نام ظاہر ہوگئے
ملائک اس جگہ گونگے ہو گئے

کسے کورازبان بر بستہ نبود
حریم قدس او را   نیست محرم

جو اپنی زبان بند نہ رکھ سکے
وہ بارگاہ الہی کا راز دان نہیں ہو سکتا

چہ نامے ثنائش چند فصلے
نوشتہ بر جبین عرش اعظم

وہ کون سا نام نامی ہے کہ چند سطور
عرش اعظم کی پیشانی پر لکھی ہیں

رود آن نام را جانم بہ قربان
کنم آں نام را من دور پیہم

اس نام پر جان قربان کروں
میں اس نام کو دور پاتا ہوں

خوشا نامے و خوش آن صاحب نام
بہ جز نامش نباشد اسم اعظم

حسین وہ نام اور خوش شکل صاحب نام
اس نام کے سوا اسم اعظم ہرگز نہیں ہو سکتا

بہ عشق او شود دنیا و دین مست
اگر مستانہ آوازے بر آرم

اُس کے عشق میں دین و دنیا مست ہو جائیں
اگر ایک نعرہ مستانہ میں لگا دوں

شرف در صورت پاکش عیان دید
جمال لا یزالی را مسلم

شرف نے اس کی پاک صورت میں دیکھا ہے
حسن حقیقی و لا زوالی کو بلا شبہ

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar

Manam Mahway Jamale Oo

Manam Mahway Jamale oo
منم محو جما ل او

منم محو جما ل او   نمی دانم کجا رفتم
شدم غرق دصال او  نمی دانم کجا رفتم

غلام روئے او بودم   اسیر بوئے او بودم
غبار کوئے او بودم    نمی دانم کجا رفتم

بآں مہ آشنا گشتم   زجان ودل من فدا گشتم
فنا گشتم فنا گشتم   نمی دانم کجا رفتم

شدم چون مبتلائے او   نہادم سر بپائے او
شدم محو لقائے او   نمی دانم کجا رفتم

قلندر بو علی ہستم    بنام دوست سر مستم
دل اندر عشق او بستم   نمی دانم کجا رفتم

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar