Bahraist Bahr e Ishq Ke Bahaichash Kinara Naist

Bahraist Bahr e Ishq Ke Bahaichash Kinara Naist

‫بحریست بحرِ عشق کہ بہیچش کنارہ نیست
آن جا جُز اینکہ جاں بسپارند چارہ نیست

عشق کا سمندر ایسا سمندر ہے جِس کا کوئی کنارہ نہیں،وہاں بجُز جان دینے کے اور کوئی چارہ نہیں۔۔

آں دم کہ دِل بہ عشق دہی خوش دمے بود
در کارِ خیر حاجتِ ہیچ اِستخارہ نیست

جِس وقت بھی دِل کو عشق میں لگا دو وہی وقت اچھا ہو گا،کیونکہ نیک کام کرنے کے لئے کِسی اِستخارہ کی ضرورت نہیں ہوتی۔۔

مارا بمنعِ عقلِ مترسان و مے بیار
کآں شحنہ در وِلایتِ ما ہیچ کارہ نیست

عقل کی ممانعت کی وجہ سے ہمیں عشق سے نہ ڈرا اور شراب لا،اِس لئے کہ عقل ایسا سپاہی ہے جِس کا مُلکِ عشق میں کوئی کام نہیں۔۔

از چشمِ خود بپُرس کہ مارا کہ میکُشد
جاناں گناہِ طالع و جرمِ ستارہ نیست

اپنی آنکھ سے پوچھ کہ ہمیں کون قتل کر رہا ہے؟ میری جان یہ نصیبہ کی خطا یا ستارے کا جرم نہیں بلکہ تیری آنکھ کا ہے۔۔

رُویش بچشمِ پاک تواں دید چوں ہِلال
ہر دیدہ جائے جلوہء آں ماہ پارہ نیست

اِس کا چہرہ ہلال کی طرح پاک نگاہ سے دیکھا جا سکتا ہے،کیونکہ ہر آنکھ اُس ماہ پارے کے جلوے کی جگہ نہیں ہے۔۔

فُرصت شُمر طریقہء رِندی کہ ایں نِشاں
چوں راہِ گنج ہر ہمہ کس آشکارہ نیست

رِندی کے راستے کو غنیمت سمجھ اِس لئے کہ یہ نِشان خزانے کے راستے کی مانند ہر شخص پر آشکارہ نہیں۔۔

نگرفت در تو گِریہء حافظ بہیچ روی
حیرانِ آں دِلم کہ کم از سنگِ خارہ نیست

حافظ کی گریہ و زاری نے کِسی طرح بھی تجھ پر اثر نہ کیا،میں تو تیرے دِل پر حیران ہوں جو کِسی طرح بھی سنگِ خارہ سے کم نہیں ہے۔۔

Thanks to Raja Nauman for sharing this.

Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Ae Shahid Qudsi Ke Kashd Band e Naqabat

Ae Shahid Qudsi Ke Kashd Band e Naqabat

اے شاہد قدسی کہ کشد بندِ نقابت
وے مرغ بہشتی کہ دہد دانہ و آبت

اے محبوب تیرے رخ سے نقاب کون کھولے گا
اے بہشتی پرندے تجھے کون نورانی رزق پہنچاتا ہے

خوابم بشداز دیدہ درین فکر جگر سوز
کاغوشِ کہ شد منزل آسائش و خوابت

میری نیند اس جگر سوز فکر سے اُڑگئ ہے
کہ تیری منزل و خواب گاہ کہاں ہے اور تو کس کی آغوش میں ہے

درویش نمی پرسی و ترسم کہ نباشد
اندیشہ ء آمرزش و پروائے ثوابت

تو درویشوں اور فقیروں کا حال و احوال نہیں پوچھتا شاید
تجھے سزا و جزا کی پروا نہیں ہے

راہِ دل عشّاق زد آں چشم خماری
پیداست ازیں شیوہ کہ مستت شرابت

تیری مست نگاہ نے عاشقوں کے دلوں میں گزر گاہ بناہ لی ہے
لہزا وہ مست ہو کر راہ سے بھٹک گئے ہیں

تیریکہ زدی بر دلم از غمزہ خطا رفت
تا باز چہ اندیشہ کند رائے صوابت

جو تیر تو نے میرے دل پر چلایا تھا وہ خطا ہو گئا ہے
اب دیکھتے ہیں کہ تو اس بارے میں کیا فیصلہ کرتا ہے

ہر نالہ و فریاد کہ کردم نشیندی
پیداست نگارا کہ بلندست جنابت

میں نے بہت آہ زاری و فریادیں کیں ہیں مگر تو نے نہ سنی
میں جانتا ہوں کہ تیری بارگاہ بہت بلند اور بے نیاز ہے

ای قصرِ دل افروز کہ منزل گہہ اُنسی
یا رب مکناد آفتِ اَیّام خراَبت

یہ تیرا محل دلوں کو محبتیں بانٹنیں والا مرکز ہے
اللہ کرے کہ یہ زمانے کی آفات و بلیات سے محفوظ رہے

دورست سرِ آب ازیں بادیہ ہشدار
تا غولِ بیابان بفریبد بہ سرابت

ہوشیاری سے کام لے پانی کا کنارہ اس صحرا میں بہت دور ہے
کہیں سراب تجھے دھوکا نہ دے دے

رفتی زکنار من دِل خستہ بناکام
تا جائے کہ شد منزل و ماوائے کہ خوابت

تو میرے دل کو مجھ سے چھین کر روانہ ہو گیا ہے
ذرا یہ تو بتا کہ کونسی جگہ پر تیرا پڑاو ہوگا

تا دررَہِ پیری بچہ آئین روی اے دِل
بارے بغلط صرف شد اَیّام شبابت

دیکھتے ہیں کہ بڑھاپے میں یہ دل کس راہ پہ چلتا ہے
جوانی کے ایام تو اُلتے سیدھے کاموں میں صرف کر چکا ہوں

حافظ نہ غلامیست کہ از خواجہ گریزد
لطفے کن و باز آکہ خرابم ز عتابت

حافظ وہ غلام ہی نہیں جو آقا سے بھاگ جائے
اپنے حال پہ رحم کر اور واپس آ کہ تجھ پر مہربانیاں ہوں

Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Sehrum Dolat e Beedar Babaleen Amad

Sehrum Dolat e Beedar Babaleen Amad

سحرم دولتِ بیدار ببالیں آمد
گفت برخیز کہ آں خسرو شیریں آمد

صبح کے وقت وہ خوش بختی کی دولت میرے پاس آئی
کہا کہ اُٹھ کہ تیرا حسیں محبوب آرہا ہے

قدحے درکش و سر خوش بتماشا بخرام
تا بہ بینی کہ نگارت بچہ آئین آمد

شراب کا پیالہ اُٹھا ،پی اور سیر کو نکل جا
تا کہ تو دیکھ سکے کہ وہ کس ناز وانداز سے آ رہا ہے

مژدگانے بدہ اے خلوتیِ نافہ کشائے
کہ زصحرائےختن آہوئے مشکیں آمد

خوش خبری سنا دے مشک کھول کر گوشہ تنہائی میں بیٹھنے والے
کہ مشک کے صحرا  سے تیرا محبوب خوش بو بکھیرتا آرہا ہے

گریہ آبے برخِ سوختگاں باز آورد
نالہ فریاد رسِ عاشق مسکیں آمد

ان آنسوؤں نے دل جلوں کے چہروں پر پھر سے چمک پیدا کر دی ہے
یہ نالے فریاد رس بن گئے ہیں اس مسکیں عاشق کے لئے

مرغ دل باز ہوادارِ کمان ابروئیست
کہ کمیں صیدگہش جان و دِل ودیں آمد

میرے دل کا پرندہ اس کی ابرو کی کمان کی زد میں ہے
میری جان و دل و دنیاودیں سب کچھ اس کی شکار گا ہ ہیں

در ہوا چندمعلق زنی و جلوہ کنی
اے کبوتر نگراں باش کہ شاہیں آمد

تو کب تک ہوا میں قلا بازیاں کھاتا  اور جلوہ دکھاتا رہے گا
اے کبوتر ہوشیاری سے کام لے کہ وہ باز آ رہا ہے

ساقیا مے بدہ و غم مخور از دشمن و دوست
کہ بکام دل ما آں بشد و ایں آمد

ساقی تو جام پلا اور دوست و دشمن کا غم نہ کر
کیونکہ ہماری مرضی کے مطابق غم ختم ہوا اور مسرت کا دور آگیا ہے

شادی یارِ پچہرہ بدہ بادہ ناب
کہ مئےلَعل دوائے دلِ غمگیں آمد

اس پری جیسے چہرے والے محبوب کی خوشی میں خالص شراب دے
کیونکہ سرخ شراب ہی غمگیں دل کا علاج ہے

رسم بد عہدی ایام چو دید ابر بہار
گریہ اش بر سمن و سنبل و نسریں آمد

بہار کے بادل نے جب زمانے کی بد عہدی کا دستور دیکھا
تو وہ چنبیلی و سنبل اور سیوتی کے پھولوں پر رونے لگ گیا

چوں صبا گفتہ  حافظ بشنید از بُلبُل
عنبر افشاں بتماشائے ریاحیں آمد

باد صبا نے جب بلبل کی زباں سے حافظ کا کلام سنا
تو وہ خوشبو بکھیرتی گل و ریحان کی سیر کو نکل پڑی

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Ae Dar Rukh e Tu Paida Anwaar e Paadshahi

Ae Dar Rukh e Tu Paida Anwaar e Paadshahi
Dar Fiqrat e Tu Pinhaan Sad Hikmat e ILaahi

اے در رُخ تو پیدا انوارِ پادشاہی
در فکرتِ تو پنہاں صد حکمتِ اِلہٰی

اے محبوب تیرے چہرے پر بادشاہی کے انوار پیدا ہورہے ہیں
تیری فکر میں اللہ کی سینکڑوں حکمتیں چھپی ہوئی ہیں

کلکِ تو بارک اللہ در ملک و دین کشادہ
صد چشمہ آب حیواں از قطرہ سیاہی

تیری قلم کو اللہ برکت دے کہ اس سے ملک اور دین
میں سینکڑوں چشمے آب حیات کے جاری ہو گئے اک قطرہ سیاہی سے

بر اہرمن نتابد انوار اسم اعظم
ملک آنِ تست و خاتم فرما ہر آنچہ خواہی

شیطان پر اسم اعظم کے انوار نہیں چمکتے
ملک اور شاہی مہر تیری ملکیت ہیں  تو جو چاہتا ہے حکم دیتا ہے

در حشمت سلیمان ہر کس کہ شک نماید
بر عقل و دانش اُو خندند مر غ و ماہی

حضرت سلیماں کہ جاہ و جلال پر شک کرنے والے کی
عقل پر پرند ےاور مچھلیاں ہنستی ہیں

تیغے کہ آسمانش از فیض خود دہد آب
تنہا جہاں بگیرد و بے منت سپاہی

وہ تلوار جسے آسمان خود اپنے پانی سے فیض دیتا ہے
وہ تنہاہی جہاں کو فتح کر لیتی ہے بغیر کسی سپاہی کے

گر پرتوے ز تیغت بر کان و معدن افتد
یاقوت سرخ رو را بخشند رنگ کاہی

اگر تیری تلوار کا سایہ کان و معدن پر پڑ جائے
تو وہ سرخ یا قوت کو  زردرنگ بخش دے

دانم دلت بخشند بر اشک شب نشیناں
گر حال ما بپرسی  از باد صبحگاہی

جانتا ہوں کہ تیر ا دل شب بیداروں کے اشکوں پر بخشش کرتا ہے
اگر تو صبح کی ہوا سے ہمارا حال چال پوچھے

ساقی بیار آبے از چشمہ خرابات
تا خرقہ ہا بشوئیم از عجب خانقاہی

باز ارچہ گاہ گاہے بر سر نہد کلاہے
مرغان قاف دانند آیئن پادشاہی

باز کبھی کبھی اپنے سر پر بادشاہی کا  تاج رکھتا ہے
لیکن کوہ قاف کے پرندے زیادہ بہتر بادشاہی کے رموز جانتے ہیں

در    دود مان آدم تا دضع سلطنت ہست
مثل تو کس ندیدہ ااست ایں علم را کماہی

آدم کے خانوادے میں جب سے سلطنت وضع ہوئی ہے
تیری طرح کسی نے بھی علم کما حقہ نہیں سمجھا

کلکِ تو خوش نوسید در شان یار و اغیار
تعویز جانفزائے و افسون عمر کاہی

تیرا قلم اپنوں اور غیروں کے بارے میں اچھا لکھتا ہے
گویا جان بڑھانے کا تعویز اور عمر گھٹانے کا منتر ہے

عمریست پادشاہا کز مے تہیست جامم
اینک ز بندہ دعویٰ و زمحتسب گواہی

عمر گزر گئی ہے اے بادشاہ کہ میرا جام خالی ہے
میرے اس دعویٰ کا کوتوال بھی گواہ ہے

اے عنصر تو مخلوق از کمیائے عزت
وائے دولت تو ایمن از صد متِ تباہی

اے ممدوح تیر ا وجود عزت کی مٹی سے پیدا کیا گیا ہے
تیر ی دولت تباہی سے محفوظ ہے

جائیکہ برقِ عصیاں  بر آدم صفی زد
ما را چگونہ زیبد دعوائے بے گناہی

جب آدم صفی اللہ بھی لغزشوں کی بجلی کی زد میں آگئے
تو ہما را بے گناہی کا دعویٰ زیب نہیں دیتا

یا ملجا  ء البرایا یا واھب العطایا
عطفا علی مقل حلت بہ الدواہی

اے مخلوق کی پناہ گاہ اور بخشنے والے
اس درویش پر بھی مہربانی فرما جو زمانے کے حادثات میں پس چکا ہے

جور از  فلک نیاید تا تو ملک صفاتی
ظلم از جہاں بروں شد تا تو جہاں پناہی

آسمان ظلم نہیں کر سکتا جب تک تو فرشتہ صفت موجود ہے
ظلم جہاں سے باہر چلا گیا ہے جب سے تو جہاں پناہ ہوا ہے

حافظ چو دوست از تو گہ گاہ می برد نام
رنجش ز بخت منما باز آبعذر خواہی

اے حافظ جب تک دوست کبھی کبھی تیرا نام لیتا ہے
تو اپنے بخت سے خفا نہ ہو اور بار بار عذر خواہی کر

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Guftam Ghame To Daram Gufta Ghamat Sar Ayad

Guftam Ghame To Daram Gufta Ghamat Sar Ayad
Gufta Ke Maah Man Sho Gufta Agar Bar Ayad

گفتم غم تو دارم گفتا غمت سر آید
گفتم کہ ماه من شو، گفتا اگر برآید

گفتم ز مہرواں رسم وفا بیاموز
گفتا ز ماہ رعیاں ایں کار کمتر آید

گفتم کہ بوئے زلفت گمراه عالمم کرد
گفتا اگر بدانی ہم اُوت رہبر آید

گفتم خوشا هوایی کز باد صبح خیزد
گفتم که نوش لعلت ما را به آرزو کشت

گفتم دل رحیمت کے عزم صلح دارد
گفتا بکش جفارا تا وقتِ آں در آید

گفتم کہ بر خیالت راه نظر ببندم
گفتا کہ شبروست ایں ازراہِ دیگر آید

گفتم خوش آں ہوائے کز باغ خلد خیزد
گفتا خنک نسیمے کز کوئے دلبر آید

گفتم کہ نوشِ لعلت مارا بآرزو کشت
گفتا تو بندگی کن کاں بندہ پرور آید

گفتم زمان عشرت دیدی کہ چو سر آمد
گفتا خموش حافظ کایں غصّہ ہم سر آید

Hafiz Shirazi
حافظ شیرازی

Manam Ke Gosha e Maikhana Khanqah e Man Ast

Manam Ke Gosha e Maikhana Khanqah e Man Ast
منم کہ گوشہ ء میخانہ  خانقاہ من ست

منم کہ گوشہ ء میخانہ  خانقاہ من ست
دعائے پیر مغاں ورد صبحگاہ من ست

گرم ترانہ ء چنگ وصبوح نیست چہ باک
نوائے من بسحر آہ عزر خواہ من ست

ز پادشاہ و گدا ٖفارغم بحمداللہ
گدائے خاک در دست پادشاہ من ست

غرض ز مسجد و میخانہ ام وصال شماست
جز ایں خیال ندارم خدا گواہ من ست

مر ا گدائے تو بودن ز سلطنت خوشتر
کہ ذل جورو جفائے تو عزو جاہ من ست

مگر بہ تیغ اجل خیمہ بر کنم ورنہ
رمیدن از در دولت نہ رسم و راہ من ست

ازاں زماں کہ بر اں آستاں نہادم روئے
فراز مسند خورشید تکیہ گاہ من ست

کلاہ دولت خسرو کجا بچشم آید
کہ خاک کوئے شما عزت کلاہ من ست

گناہ اگرچہ نبود اختیار ما حافط
تو در طریق ادب کوش و گو گناہ من ست

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Dil Me Rawad Z Dastam Sahib Dilaan Khuda Ra

Dil Me Rawad Z Dastam Sahib Dilaan Khuda Ra
دل می رود  ز دستم  صاحبدلاں خدا را

 

دل می رود  ز دستم  صاحبدلاں خدا را
دردا کہ راز پنہاں خواہد شد آشکارا

کشتی شکستگانیم اے باد شرط بر خیز
باشد کہ باز بینیم آں یار آشنا را

آسائش دو گیتی تفسیر ایں دو حرف ست
با دوستاں تلطف با دشمناں  مدا را

در کوئے نیک نامی مارا گزر ندادند
گر تو نمی پسندی تغییر  کن قضا را

حافظ بخود نپوشد ایں خرقہ ء  مے آلود
اے شیخ پاک دامن معزور دار ما را

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی

Zahid Zahir Parast Az Haal e Ma Aagah Naist

Zahid Zahir Parast Az Haal e Ma Aagah Naist
ذاہد ظاہر پرست از حال ما آگاہ نیست

زاہد ظاہر پرست از حال ما آگاہ نیست
در حق ما ہر چہ گوید جائے ہیچ اکراہ نیست

در طریقت ہر چہ پیش سالک آید خیر اوست
در صراط المستقیم اے دل کسے گمراہ نیست

تا چہ بازی رخ نماید بیزقے خواہیم راند
عرصہ شطرنج رنداں را مجال شاہ نیست

ایں چہ استغنا ست یا رب ویں چہ داور حاکم ست
کایں ہمہ زخم نہاں ہست و مجال آہ نیست

چیست ایں سقف بلند سا دہ بسیار نقش
زیں معما ہیچ دانا در جہاںآگاہ نیست

صاحب دیوان ما گویا نمیداند حساب
کاندرین طغرانشان جستہ اللہ نیست

ہر کہ خواہد گو بیا ہر کہ خواہد گو برو
گیر دار و حاجب و درباں بدیں درگاہ نیست

ہر چہ ہست از قامت ناسازبی اندام ماست
ورنہ تشریف تو بر بالائے کس کوتاہ نیست

بر در میخانہ رفتن کارئے یکرنگاں بود
خود فروشاں را بکوئے مے فروشاں راہ نیست

بندہ پیر خراباتم کہ لطفش دائم ست
ورنہ لطف شیخ و زاہد گاہ ہست و گاہ نیست

حافط ار بر صدر بنشیند ز عالی ہمتی ست
عاشقی دروی کش اندر بند مال وجاہ نیست

Deewan E Hafiz Shirazi
دیوان حافظ شیرازی