Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway
jiss dam naal asanjh hai asan ku, o dam nazar na aaway

Galiaan sunjiaan ujaar disan mai ku, veyrra khawan aaway
Ghulam farida othan ki wasna jithan yaar nazar na aaway

اُجیاں لمیاں لال کھجوراں تہ پتر جنہاں دے ساویں
جس دم نال سانجھ ہے اساں کوں او دم نظر نہ آوے
گلیاں سنجیاں اُجاڑ دسن میں کو ،ویڑا کھاون آوے
غلام فریدا اُوتھے کی وسنا جتھے یار نظرنہ آوے

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway
nangay pinday mainu chamkaan maaray, mery ronday nain nimany
jinnain tann mery ty laggian ,tanu ik laggay ty tu jaany
ghulam farida dil othy diye jithy agla kadar wi janay

اُجیاں لمیاں لال کھجوراں تہ پتر جنہاں دے ساویں
ننگے پنڈے مینوں چمکن مارے، میرے روندے نیں نین نمانے
جنیاں تن میرے تے لگیاں ، تینوں اک لگے تے توں جانے
غلام فریدا دل اُوتھے دیئیے جتھے اگلا قدر وی جانے

Andron he andron wagda rehnda, paani dard hayati da
sadi umran tu wi lambi umr wy teri, haali na was wy kaaliya
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

اندروں ہی اندروں وگدا رہندا ،پانی درد حیاتی دا
ساڈی عمراں تو وی لمبی عمر وے تیری،ہالے ناں وس وے کالیا
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

Pardes gayon pardesi hoyon, ty nit watna munh morran
kamli kr k chorr ditto, ty main bathi kakh galiaan ty roolan
Ghulam farida main ty dozakh sarsan, jy main mukh mahi walon moran
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

پردیس گیوں پردیسی ہویوں تے نت وٹناں منہ موڑاں
کملی کر کہ چھوڑ دیتو ،تہ میں بیٹھی خاک گلیاں تے رو لاں
غلام فریدا میں تے دوزخ سرساں جے میں مکھ ماہی ولوں موڑاں
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

izrael aaya lain sassi di jaan hai,
Jaan sassi wich nazar na aaondi
o ty ly gaya kaich da khan hai
kismay aye, Quran aye.
Andron he andron wagda rehnda, paani dard hayati da
sadi umran tu wi lambi umr wy teri, haali na was wy kaaliya
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

عزرایل آیا لین سسی دی جان ہے
جان سسی وچ نظر نہ آوندی
او تے لے گیا کیچ دا خان ہے
قسم قرآن ہے
اندروں ہی اندروں وگدا رہندا ،پانی درد حیاتی دا
ساڈی عمراں تو وی لمبی عمر وے تیری،ہالے ناں وس وے کالیا
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

Thanks to Asifa Mumtaz for Sharing

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Asan So Bad Mast Qalandar houn

Asan So Bad Mast Qalandar houn
Kadin Masjid Houn Kadi Mandir Houn

اساں سو بد مست قلندر ہوں
کڈیں مسجد ہوں کڈیں مندر ہوں

ہم وہ سرقسمت قلندر ہیں جو
کبھی مسجد میں ہیں کبھی مندر میں ہیں

کڈیں چور بنوں کڈیں جار بنوں
کڈیں توبہ استغفار بنوں
کڈیں زہد عبادت کار بنوں
کڈیں فسق فجوریں اندر ہوں

کبھی چور بنیں بدکار بنیں
کبھی توبہ اسغفار کہیں
کبھی زاہد عابد نیک بنیں
کبھی فسق فجور کے اندر ہیں

کِتھاں درد کِتھاں درمان بنوں
کتھاں مصر کتھاں کنعان بنوں
کتھاں کیچ بھنبھور دا شان بنوں
کتھاں واسی شہر جلندر ہوں

کہیں درد کہیں درمان بنیں
کبھی مصر، کبھی کنعان بنیں
کہیں کیچ،بھنبھور کا شان بنیں
کبھی اندر شہر جا لندھر ہیں

کتھاں صومعہ دیر کنشت کِتھاں
کتھے دوزخ باغ بہشت کِتھاں
کتھے عاصی نیک سرشت کِتھاں
کِتھے گمرہ ہوں کِتھے رہبر ہوں

کبھی خانقاہ کبھی بت خانہ
کبھی گرجا میں کبھی مسجد میں
کبھی دوزخ میں کبھی جنت میں
کبھی عاصی ہیں کبھی زاہد ہیں
کہیں گمراہ ہیں کہیں راہبر ہیں

ہیوں او قلاش تے رند اساں
پئی نودی ہے ہند سندھ اساں
ہیوں بے شک عارف چند اساں
کل راز رموز دے دفتر ہوں

ہم تو وہ بے مایہ مست الست ہیں کہ
کائنات ہمارے سامنے سرنگوں ہے
ہم بلا شک و شبہ عارف کامل ہیں
اور اسرار و رموز الہی کے ماہر ہیں

ہن ناز نواز دے ٹول کڈیں
ہے مونجھ منجھاری کول کڈیں
رلے ڈھول کڈیں گیا رول کڈیں
کڈیں بر در ہوں کڈیں در بر ہوں

کبھی نازنیں کبھی ناز آفریں
کبھی پرحزن وملال کبھی اندوہگیں
کبھی قریب دوست کبھی بعید دوست
کبھی در پر ہیں کبھی اندر ہیں

ول واتوں سمجھ فرید الا
کر محض نہ شعر جدید ولا
ہے چالوں حال پدید بھلا
تونے کیجو سارے ابتر ہوں

فرید منہ سنبھال کر بات کر
ایسے اشعار پھر نہ کہنا
ہماری کیفیت تو ہمارے انداز سے ظاہر ہے
کیا ہوا اگر بدحال ہیں

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

ترجمہ تحقیق تصحیح
خواجہ طاہر محمود کوریجہ

Ithan Main Muthri Nit Jaan Ba Lab

Ithan Main Muthri Nit Jaan Ba Lab
Oo Taan Khush Wasda Mulk Arab

اتھاں میں مٹھڑی نت جان بہ لب
او تاں خوش وسدا وچ ملک عرب

ادھر میری جان پہ بنی ہوئی ہے
اور وہ خوش و خرم ملک عرب میں بس رہا ہے

ہر ویلے یار دی تانگھ لگی
سُنجے سینے سِک دی سانگ لگی
ڈکھی دِلڑی دے ہتھ ٹانگھ لگی
تھئے مل مل سول سمولے سب

ہر وقت محبوب کا انتظار ہے
ویران سینے میں اشتیاق کا تیر لگا ہے
دکھی دل کے ہاتھ سہارا آیا بھی تو
غموں کے ہجوم کا جو دل میں سمائے ہوئے ہیں

تتی تھی جوگن چو دھار پھراں
ہند سندھ پنجاب تے ماڑ پھراں
سنج بار تے شہر بزار پھراں
متاں یار ملم کہیں سانگ سبب

نیم جان دیوانی بن کر چاروں طرف پھرتی ہوں
ہند ،سندھ پنجاب اور ماڑ پھرتی ہوں
ویرانے اور شہر ہر جا پھرتی ہوں
کہ کہیں میرا یار کسی سبب سے مل جائے

جیں ڈینہ دا نینہ دے شینہ پُٹھیا
لگی نیش ڈکھاں دی عیش گھٹیا
سر جوبن جوش خروش ہٹیا
سُکھ سڑ گئے مر گئی طرح طرب

جس دن سے عشق کے شیر نے مجھے زخمی کیا ہے
دکھوں کے نشتر لگ رہے ہیں عیش ختم ہو گیا ہے
سر سے جوانی کا جوش و خروش اُتر گیا
سکھ ختم ہو گئے اورخوشیاں مٹ گیئں ہیں

توڑیں دھکڑے دھوڑے کھاندڑیاں
تیڈے نام تے مفت وکاندڑیاں
تیڈی باندیاں دی میں باندڑیاں
ہے در دیاں کُتیاں نال ادب

تیرے لئے دھکے اور ٹھوکریں کھاتی ہوں
تیرے نام پر بے مول بک جاتی ہوں
تیری باندیوں کے بھی باندی ہوں
تیرے در کے کتوں کا بھی ادب کرتی ہوں

واہ سوہنا ڈھولن یار سجن
واہ سانول ہوت حجاز وطن
آدیکھ فرید دا بیت حزن
ہم روز ازل دی تانگھ طلب

سبحان اللہ کیا پیارا لاڈلا محبوب ہے
اور کیا ہی پیارا حجاز کا وطن ہے
آ ذرا فرید کا غموں کا گھر تو دیکھ
مجھے تو ازل سے ہی تیرا انتظار ہے

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid


Sohne Yaar Bajhon Meri Nai Sardi

Sohne Yaar Bajhon Meri Nai Sardi

سوہنے یار باجھوں میڈی نہیں سردی
تانگھ آوے ودھدی سک آوے چڑھدی

محبوب کے بغیر میرا گزارا نہیں ہورہا
انتظاربھی دم بدم اورذوق و شوق بھی بڑھ رہا ہے

کیتا ہجر تیڈے میکوں زارو رارے
دل پارے پارے سر دھارو دھارے
مونجھ وادھو وادھے ڈکھ تارو تارے
رب میلے ماہی بیٹھی دھانہہ کر دی

تیرے جدائی مجھے زاروقطار رلا رہی ہے
دل پارہ پارہ ہے اور سر بوجھل ہے
افسردگی زوروں پر ہے اور غموں سے تار تار ہو گیا ہوں
رب مجھے اس سے ملا دے میں ہر دم یہی فریاد کر رہی ہوں

سوہنا یار ماہی کڈیں پاوے پھیرا
شالا پا کے پھیرا پچھے حال میرا
دل درداں ماری ڈکھاں لایا دیرا
راتیں آہیں بھردی ڈینہاں سولاں سڑدی

کبھی تو ادھر بھی پھیرا لگا جائے
پھیرا کر کے میرا حال پوچھ لے
دل دکھوں سے بھرا ہے غموں نے ڈیرا ڈالا ہوا ہے
رات کو آہیں بھرتیں ہوں دن کو زخموں سے چور ہوتی ہوں

پنوں خان میرے کیتی کیچ تیاری
میں منتاں کر دی تروڑی ویندا یاری
کئی نہیں چلدی کیا کیجئے کاری
سٹ باندی بردی تھیساں باندی بر دی

پنوں خاں نے کیچ جانے کی ڈھان لی ہے
میں منتیں کررہی ہوں لوگوں دیکھو عہد توڑ رہا ہے
کچھ بس نہیں چلتا کیا کروں
اپنی باندیوں کو چھوڑ کر میں اس کی باندی بننے کو تیار ہوں

رو رو فریدا فریاد کر ساں
غم باجھ اس دے بیا ساہ نہ بھرساں
جا تھیسم میلا یا رُلدی مرساں
کہیں لا ڈکھائی دل چوٹ اندر دی

فرید رو رو کر ہر دم فریاد  کرتی ہوں
اس کے غم کے بغیر سانس بھی نہین بھرتی
یا تو میں جا ملوں گی یا پھر ڈھونڈتے مر جاؤں گی
دل کی چوٹ کاری ہے نظر بھی نہیں آتی

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Kya Haal Sunawa Dil Da Koi Mehram Raaz Na Milda Lyrics

Kya Haal Sunawa Dil Da Koi Mehram Raaz Na Milda Lyrics

کیا حال سناواں دل دا
کوئی محرم راز نہ  مِلدا

منہ دھوڑ مٹی سر پائم
سارا ننگ نمود ونجائم
کوئی پچھن نہ ویڑھے آئم
ہتھوں الٹا عالم کھلدا

منہ پر دھول،سر پہ مٹی ہے
عزت آبرو برباد ہے
میرا حال پوچھنے آنگن میں کوئی نہیں آتا
اُلٹا سب میری ہنسی اُڑا رہے ہیں

گیا بار برہوں سر باری
لگی ہو ہو شہر خواری
روندی عمر گزاری ساری
نہ پائم ڈس منزل دا

عشق کا بھاری بوجھ سر پر اُٹھایا ہے
گلی گلی خوار و رسوا ہو رہا ہوں
روتے روتے عمر گزار دی ہے
لیکن منزل کا پتا ابھی تک نہیں چلا

دل یار کیتے کُر لاوے
تڑ پھاوے تے غم کھاوے
ڈکھ پاوے سول نبھاوے
ایہو طور تیڈے بیدل دا

دل محبوب کے لئے فریاد کرتا ہے
تڑپتا ہے اور غمگین کرتا ہے
دکھ اور مصبتیں برداشت کرتا ہے
تیرے عاشق کا یہی طور طریقہ ہے

کئی سہنس طبیب کماون
سے پڑیاں جھول پلاون
میڈے دلا دا بھید نہ پاون
پووے فرق نہیں ہک تِل دا

بے شمار طبیبوں نے علاج کیا
سینکڑوں پڑیاں گھول کر پلا دیں
مگر میرا دل کا مرض نہ جان سکے
مجھے ذرا بھی افاقہ نہیں ہوتا

پنوں ہوت نہ کھڑ مکلایا
چھڈ کلہڑی کیچ سدھایا
سوہنے جان پچھان رلایا
کوڑا عذر نبھائم گھل دا

پنوں خاں ملے بغیر چلا گیا
مجھے اکیلی چھوڑ کر کیچ سدھار گیا
جان بوجھ کر مجھے رلایا ہے
میں نیند کا بہانہ کر کےچپ رہی

سن لیلیٰ دیہانہہ پکارے
تیڈا مجنوں زار نزارے
سوہنا یار تو نے ہک وارے
کڈیں چا پردہ محمل دا

اے لیلیٰ مجنوں کی فریادیں سن
تیرا مجنوں زارو قطار روتا ہے
پیاریا! کبھی ایک بار
محمل کا پردہ ہٹا کر دیدار کرا دے

دل پریم نگر ڈوں تانگھے
جتھاں پیندے سخت اڑانگے
نہ راہ فرید نہ لانگھے
ہے پندھ بہوں مشکل دا

دل پریم نگر کی طرف کھنچا جارہا ہے
جہاں پر دشوار گزار راستے ہیں
فرید نہ راستہ ہے نہ پڑاؤ ہے
بڑا ہی مشکل سفر ہے

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Ae Husn e Haqiqi Noor e Azal Tainoon Wajib Te Imkan Kahoon

Ae Husn e Haqiqi Noor e Azal Tainoon Wajib Te Imkan Kahoon

اے حسن حقیقی نور ازل
تینوں واجب تے امکان کہوں

تینوں خالق ذات قدیم کہوں
تینوں حادث خلق جہان کہوں

تینوں مطلق محض وجود کہوں
تینوں علمیہ اعیان کہوں

ارواح نفوس عقول مثال
اشباح عیان نہان کہوں

تینوں عین حقیقت ماہیت
تینوں عرض صفت تے شان کہوں

انواع کہوں اوضاع کہوں
اطوار کہوں اوزان کہوں

تینوں عرش کہوں افلاک کہوں
تینوں ناز نعیم جنان کہوں

تینوں تت جماد نبات کہوں
حیوان کہوں انسان کہوں

تینوں مسجد مندر دیر کہوں
تینوں پوتھی تے قرآن کہوں

تسبیح کہوں زنار کہوں
تینوں کفر کہوں ایمان کہوں

تینوں بادل برکھا گاج کہوں
تینوں بجلی تے باران کہوں

تینوں آب کہوں تے خاک کہوں
تینوں باد کہوں نیران کہوں

تینوں وسرت لچھمن رام کہوں
تینوں سیتا جی جانان کہوں

بلدیو جسودا نند کہوں
تینوں کشن کنیہا کان کہوں

تینوں برما بشن گنیش کہوں
مہا دیو کہوں بھگوان کہوں

تینوں گیت گرنت تے بید کہوں
تینوں گیان کہوں اگیان کہوں

تینوں آدم حوا شیث کہوں
تینوں نوح کہوں طوفان کہوں

تینوں ابراہیم خلیل کہوں
تینوں موسی بن عمران کہوں

تینوں ہر دل دا دلدار کہوں
تینوں احمدؐ عالی شان کہوں

تینوں شاہد ملک حجاز کہوں
تینوں باعث کون مکان کہوں

تینوں ناز کہوں انداز کہوں
تینوں حور پری غلمان کہوں

تینوں نوک کہوں تینوں ٹوک کہوں
تینوں سرخی کجلہ پان کہوں

تینوں طبلہ تے تنبور کہوں
تینوں ڈھولک سر تے تان کہوں

تینوں حسن تے ہار سنگار کہوں
تینوں عشوہ غمزہ آن کہوں

تینون عشق کہوں تینوں علم کہوں
تینوں وہم یقین گمان کہوں

تینون حسن قوی ادراک کہوں
تینوں ذوق کہوں وجدان کہوں

تینوں سکر کہوں سکران کہوں
تینوں حیرت تے حیران کہوں

تسلیم کہوں تلوین کہوں
تمکین کہوں عرفان کہوں

تینون سنبل سوسن سرو کہوں
تینوں نرگس نافرمان کہوں

تینوں لالہ داغ تے باغ کہوں
گلزار کہون بستان کہوں

تینوں خنجر تیر تفنگ کہوں
تینوں برچھا بانک سنان کہوں

تینوں تیر خدنگ کمان کہوں
سوفار کہوں پیکان کہوں

بے رنگ کہوں بے مشل کہوں
بے صورت ہر ہر آن کہوں

سبوح کہوں قدوس کہوں
رحمان کہون سبحان کہوں

کر توبہ ترت فرید سدا
ہر شے نوں  پر نقصان کہوں

اسے پاک الکھ بے عیب کہوں
اسے حق بے نام نشان کہوں

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Aj Faal Firaq Daseendi Ay Mataan Yaar Kinoun Nkhraindi Ay

Aj Faal Firaq Daseendi Ay Mataan Yaar Kinoun Nkhraindi Ay

اج فال فراق ڈسیندی ہے
متاں یار کنوں نکھڑیندی ہے

آج فال فراق کی نکلی ہے
لگتا ہے جدائی کا وقت آگیا ہے

سختیاں ودھیاں سکھ تھئے تھولے
رنج والم غم سوز سمولے

اذیتیں بڑھ گئیں ہیں،سکھ کم ہو گئے ہیں
سوزوغم رنج و الم ہجوم کی مانند آگئے ہیں

چرکھا ڈکھڑی روں روں بولے
تند ڈنگی ول پیندی ہے

چرکھا دکھی ہو گیا ہے
اس کی آواز اور تانت ٹیڑھی ہو گئی ہے

سیندھاں کچڑیاں میدیاں پھکڑیاں
کجلے اُچڑے سرخیاں بکھڑیاں

مانگ اُجڑ گئی ہے، مہندی پھیکی پڑ گئی ہے
کاجل بہہ گیا ہے ، سرخی پھیل گئی ہے

یاساں ملیاں آساں نکھڑیاں
لوں لوں وین ولیندی ہے

نا اُمیدیاں بڑھ گئی ہیں، اُمیدیں ٹوٹ گئی ہیں
ہر ہر رگ جاں ماتم کر رہی ہے

تول نہالیاں دار ڈسیجن
ہار پھلا ں دے خار ڈسیجن
صحن حویلیاں بار ڈسیجن
سب شے مونجھ ودھیندی ہے

نرم بسترپھندا لگتا ہے
پھولون کے ہار ، کانٹے لگتے ہیں
گھر کا آنگن  جنگل ویران لگتا ہے
ہر شے افسردگی بڑھا رہی ہے

بھاگ گیا بد بختی جاگی
بانہہ چوڑیلی تھیم ڈوہاگی
جیندیں ڈیکھاں سانول ساگی
جنڈری مر مر ویندی ہے

خوش بختی چلی گئی بدبختی آگئی
چوڑیوں بھری کلائی اُجڑ گئی
کاش جیتے جی ماہی کو دیکھوں
جان جسم سے نکل نکل جاتی ہے

ٹوٹے پیلیں کڑیاں نیور
ٹکڑے بینے بولے بینسر
کٹمالے تھئے نانگ برابر
چوہنب کلی چک پیندی ہے

پیلیں ، ٹوٹے ، کڑیاں ،نیور
بینے بولے بینسر سب زیورات ٹکڑے ٹکڑے ہو گئے
مالا نانگ کی مانند نظر آتی ہے
چوہنب کلی کاٹنے لگ گئی ہے

نظر نہ آوے رانجھن ماہی
کیتس بے کس تے بے واہی
مونھ منجھاری گل دی پھاہی
صبر آرام ونجیندی ہے

میرا محبوب نظر نہیں آرہا ہے
مجھے بے کس و بے سہارا کر چھوڑا
مایوسی و اداسی گلے کا پھندا بن گیا
صبرو آرام بچھڑ گیا

درد کنوں منہ ساوا پیلا
چولا کالا بوچھن نیلا
توں بن ساڈا کوجھا حیلہ
ہر کئی سخت الیندی ہے

شدت غم سے سبز چہرہ پیلا ہو گیا
دوپٹہ اور کرتہ سیاہ ماتمی ہو گیا ہے
تیرے بغیر میرا حال برا ہو گیا
ہر کو ئی تلخی سے بولتا ہے

سون شگون سبھے تھئے پٹھڑے
دصل وصال دے سانگے ترنڑے
نین نہ بھائے رو رو ہٹڑے
دلڑی کیس کریندی ہے

شگون فالیں سب اُلٹے پڑ گئے
ملنے ملانے کے سب اسباب ٹوٹ گئے
آنکھیں رو رو کے تھک گئی ہیں
دل بھی جبروظلم ڈھا رہا ہے

چیتر بہار خزاں ڈسیجے
جھوک سبھو ویران ڈسیجے
نہ کوئی علم نہ بان ڈسیجے
روہی ڈین ڈریندی ہے

بہار خزاں نظر آتی ہیں
آبادیاں ویراں نظر آتی ہیں
نہ علم نہ کوشش کام آرہی ہے
روہی چڑیل ڈائن کی طرح ڈرا رہی ہے

یار فرید نہ کھڑ مکلایا
باری یار ہجر  سر آیا
سک ساڑیا تے تانگھاں تایا
قسمت رودھے ڈیندی ہے

فرید کے یار نے جاتے ہوئے الوداع بھی نہ کیا
میرے سر پر فراق کا پہاڑ ٹوٹ پڑا
ملنے کی آرزو  و جستجو ناکا م ہوئی
قسمت ظلم وستم توڑ رہی ہے

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Ronde Umar Nibhai Yaar Di Khabar Na Kaai

Ronde Umar Nibhai Yaar Di Khabar Na Kaai

روندیں عمر نبھائی
یار دی خبر نہ کائی

روتے روتے عمر گزار دی
محبوب کی کوئی خبر نہ ملی

بھاگ سہاگ سنگار ونجائم
دلوں وساریا ماہی

جس کے لئے رنگ روپ حسن عیش آرام چھوڑا
اُس نے مجھے دل سے بھلا دیا

دور گیا ول آیا ناہیں
مر سا کھا کر پھائی

وہ دور چلا گیا ہے اور واپس نہیں آتا
میں زہر کھا کر پھانسی لگ جاؤں

عشق نہیں کنی بار غضب دی
چٹنگ چوانتی لائی

یہ عشق نہیں یہ تو آگ غضب کی ہے
میرے دل کو جلتی لکڑی کر دیاچنگاری سے

جوبن سارا روپ گنوائم
دردیں مار مسائی

جوانی اور رنگ روپ ضائع ہو گیا
شدت درد نے مجھے تباہ کر دیا ہے

فخرالدین مٹھل دے شوقوں
دم دم پیڑ سوائی

مرشد فخرالدین کا اشتیاق
میرے درد جگر کو دم بدم بڑھاتا جا رہا ہے

یار فرید نہ پائم پھیرا
گل گئم مفت اجائی

فرید کو محبوب واپس نہ آیا
میں بیکار میں گل سڑ کے تبا ہ ہوئی

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Tatti Ro Ro Waat Neharaan Kadi Sanwal Mor Muharaan

Tatti Ro Ro Waat Neharaan
Kadi Sanwal Mor Muharaan

تتی رو رو واٹ نہاراں
کڈیں سانوں موڑ مہاراں

میں رو رو سوختہ جان ہو کر تیری راہیں تک رہی ہوں
کبھی تو اپنے اُونٹ کی مہار میر ی طرف موڑ لے

جیں کارن سو سختی جھاگی
پھراں ڈوہاگی دیس براگی

جیندیں ڈیکھاں سانول ساگی
تھیواں باغ بہاراں

جس کے لئے ہر طرح کی اذیت برداست کی
جنگل میں تباہ حال ہو کہ ماری ماری در بدر پھری

کاش کہ جیتے جی محبوب کو دیکھ لوں رو برو
خوشیاں منا لوں

یار بروچل وسم سولڑا
جیندے سانگے مانیم تھلڑا
خان پنلڑانہ کر کلہڑا
توں سنگ چانگے چاراں

یار تو بہت قریب بستا ہے
میں دشت و صحرا ڈھونڈتی ہوں
میرے پنل خان مجھے اکیلا نہ چھوڑ
تیرے ساتھ میں ریوڑ چرانا چاہتی ہوں

جیں ڈینہہ یار اساں تو نکھڑے
میندھی روپ ڈکھائے پھکڑے
ڈسدے سرخی دے رنگ بکھڑے
وگھریاں کجل دیاں دھاراں

جس دن سے یار ہم سے بچھڑا ہے
مہندی کا رنگ پھیکا پڑ گیا ہے
سرخی کا رنگ مدہم ہو گیا ہے
رو رو کے آنکھوں سے کاجل پھیل گیا ہے

من من منتاں پیر مناواں
ملاں گول تعویذ لکھاواں
سڈ سڈ جو سی پھالاں پاواں
کردی سون ہزاراں

منت مانتی ہوں  پیر مناتی ہوں
ملاؤں سے تعویذ لکھواتی ہوں
بلا بلا کر جوتشیوں سے فالیں نکلوائیں
ہزار ہا ٹونے کئے تجھے پانے کے لئے

خواجہ پیر دے ڈیساں چھنّے
ایہے ڈینہہ اتھایئں بھنّے
جیندیاں سبھ دل کیتیاں منّے
دسّم سداگھر باراں

میں خواجہ پیر کا چھنّا دوں گی
اگر وہ ایک دن میرے ساتھ گزارے
میرے دل کی باتیں مانے
اور اس گھر میں بسے اور خوشیاں بکھیرے

بندڑے نال نہ کر سیں مندڑا
تونیں کو جھا کملا گندڑا
لٹک سہائیں صحن سوہندڑا
پوں پوں توں جند واراں

غلام کے ساتھ برا نہ کریں
بے شک میں بد صورت ، حقیر، نکما ، گندا ہوں
کبھی مٹک مٹک ، خراماں خراماں میرے آنگن میں آ
ہر ہر قدم پر میں جان قربان کروں

چھوڑ فرید نہ یار دا دامن
جیٔں جی کیتا جڑ کر کامن
ڈوہاں جہاناں ساڈا مامن
کینویں دلوں دساراں

فرید محبوب کا دامن نہ چھوڑنا
جس نے تجھے مسحور کر دیا ہے
دونوں جہانوں میں ہمارا سہارا ہے
کس طرح دل سے بھلا سکتا ہوں

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

 

 

Hai Ishq Da Jalwa Har Har Ja Subhan Allah Subhan Allah

Hai Ishq Da Jalwa Har Har Ja
Subhan Allah Subhan Allah

ہے عشق دا جلوہ ہر ہر جا
سبحان اللہ سبحان اللہ
خود عاشق خود معشوق بنیا
سبحان اللہ سبحان اللہ

عشق کا جلوہ ہر جگہ ہے
سبحان اللہ سبحان اللہ
خوہ ہی عاشق خود ہی معشوق ہے
سبحان اللہ سبحان اللہ

خود بلبل تے پروانہ ہے
گل شمع اتے دیوانہ ہے
تھی چاند چکور نوں موہ لیا
سبحان اللہ سبحان اللہ

خود بلبل ،خود پھول
خود پروانہ، خود شمع پر دیوانہ
چاند بھی خود ، چکور بھی خود
سبحان اللہ سبحان اللہ

کڈیں موسی تھی میقٰات چڑھے
ول وعظ کرے توریت  پڑھے
کڈیں عیسیٰ یحییٰ زِکرٰیا
سبحان اللہ سبحان اللہ

کبھی موسیؑ کی شکل میں کلام کرے
وعظ کرے توریت پڑھے
کبھی عیسیؑ یحییؑ زکریاؑ نبیوں کی صورت
سبحان اللہ سبحان اللہ

کتھے شاد کتھے دل تنگ ڈسے
کتھے صلح ڈسے کتھےجنگ ڈسے
تھیا شان جلال جمال ادا
سبحان اللہ سبحان اللہ

کبھی خوش، کبھی غمگین لگے
کبھی دوستی کبھی جنگ کرے
یہ سب جلال و جمال کی ادائیں ہیں
سبحان اللہ سبحان اللہ

کتھے راز انا الحق فاش کیتا
کتھے سبحانی دا  ورد پڑھیا
کتھے انی عبد رسول کہیا
سبحان اللہ سبحان اللہ

کہیں منصور بن کے انا لحق کا راز کھولے
کہیں با یزید بسطامی کا نعرہ سبحانی لگائے
کہیں رسول کی زبان سے انی عبداللہ کہے
سبحان اللہ سبحان اللہ

ہن ہستی دے نیرنگ عجب
ہن حسن ازل دے ڈھنگ عجب
بے رنگ بہ ہر ہر رنگ رچیا
سبحان اللہ سبحان اللہ

اس مقام پہ ہستی کے رنگ عجیب ہیں
اب حسن ازل کےاطوار عجیب ہیں
خود رنگوں سے پاک اور ہر رنگ میں نمایاں
سبحان اللہ سبحان اللہ

ہے محض مقام تحیر دا
بٹھ حیلہ درک و تفکر دا
ہیں ڈونگھڑے ڈیہہ ڈوں ہتھ نہ پا
سبحان اللہ سبحان اللہ

یہ مقام حیرت  ہے
غور و فکر ترک کر دے
بہت گہری باتیں ہیں ان کو ہاتھ نہ لگا
سبحان اللہ سبحان اللہ

تقدیس کتھاں تنزیہ کتھاں
تقیید اَتے تشبیہ کتھاں
ہے حیرت سکھ تسلیم و رضا
سبحان اللہ سبحان اللہ

پاکی ہے اُسے ، آلائشوں سے مبرا ہے
اس کی قید کی تشبیہ کیسے ہو
حیرت و حیرانگی ہے، سیکھ تسلیم و رضا
سبحان اللہ سبحان اللہ

تھئ عمر تلف برباد سبھو
ہیہات سبھو فریاد سبھو
مر مردے تیئں نہ پیُم سَما
سبحان اللہ سبحان اللہ

عمر برباد ہو گئی ہے
ہائے افسوس اور فریاد ہے
مرتے دم تک خبر نہ سنی
سبحان اللہ سبحان اللہ

ہے  پریت فرید دی ریت عجب
ہے درد تے سوز دی گیت عجب
ہن سمجھو سارے اہلِ صفا
سبحان اللہ سبحان اللہ

فرید عشق کی ریت عجیب ہے
اس کے درد و سوز کا گیت بھی عجیب ہے
اب سمجھ لیں سارے اہل صفا
سبحان اللہ سبحان اللہ

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid