Be Muhammad Dar Haq e Baar Naist

Be Muhammad Dar Haq e Baar Naist
Be Rawa Az Kibriya Deedar Naist

بے محمد در حق بار نیست
بے روا  از  کبریا  دیدار نیست

حضورﷺکے وسیلہ کے بغیر رب کی بارگاہ میں رسائی ممکن نہیں
خدا کے دیدار کے علاوہ کوئی اور دیدارزیبا  نہیں ہے

در دو عالم بے تمثل صورتے
اے پدر دیدار  آں  دیدار  نیست

دونوں عالم میں بے شمار صورتیں ہیں
اے سننے والے ان کا دیدار اُس کا دیدار نہیں ہے

اے محقق ذات حق با صفات
بے تجلی ہیچ کہ اظہار نیست

اے تحقیق کرنے والے رب کی ذات با صفات  ہے
تجلی کے بغیر ان کا اظہار ممکن نہیں ہے

ہر دو عالم جز تمثل نیست نیست
مطلع جز صاحب اسرار نیست

دونوں عالم میں اس کی مثل کوئی نہیں ہے
لیکن اس کا اظہار صاحب اسرار کے علاوہ نہیں

ہر چہ بینی جز خدا ہرگز مبیں
وہم غیری زانکہ جز پندار نیست

جو کچھ بھی تو دیکھے تو خدا کے سوا ہرگز نہ دیکھ
اس کے سوا ہر شے خیال وہم اور گمان کے سوا کچھ نہیں

جز جمال دوست دیدن شد حرام
نزد بینا کار غیر ایں کار نیست

جمال یار کے علاوہ دیکھنا حرام ہے
عارف کے نزدیک غیر کو دیکھنا ہرگز روا نہیں

غرق باشد در جمال دوست دوست
عاشق سر مست را گفتار نیست

دوست تو دوست کے جلووں میں گم ہوتا ہے
مدہوش عاشق کی حالت بیاں میں نہیں آسکتی

ایں شراب عاشقاں را ہر کہ خورد
مست آمد دائما ہوشیار نیست

یہ شراب  عاشقوں سے جو کوئی بھی  پیتا ہے
ہمیشہ بیخود رہتا ہے  ہرگز ہوش میں نہیں آتا

در لقائے یار باشد باریار
ورنہ ہر کس اے جواں او یار نیست

یار تو یار کے لقا کی نعمت سے سرشار ہوتا ہے
اگر ایسا نہیں ہوتا تو وہ یار ہی نہیں

زنداں نتواں گفت او  را  در جہاں
ہر کہ دربار جاناں بار نیست

اس کو زندہ ہرگز نہیں کہا جا سکتااس جہاں میں
جس کسی کو بھی بارگاہ محبوب میں رسائی نہیں

علم مطلع در دو عالم نکتہ است
عارفاں را کار با ضروار نیست

دونوں عالم میں علم اس نقطے میں واضح ہے
عارفوں کا کام سختی اور تکلیف دینا نہیں ہے

روئے تو راجا گفت خود را بدہ کن
عارفاں را ہیچ دل بیدار نیست

اے راجا اپنا رخ اپنی طرف کر کہ کہہ دے
عارفوں کے پاس  سوائے دل بیدار کے کچھ نہیں

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar

Raqsam Ba Raqseem Ke Khoban e Jahaneem

Raqsam Ba Raqseem Ke Khoban e Jahaneem
Nazam Ba Naazeem Ke Dar Aeni Ayaaneem

رقصم بہ رقصیم کہ خوبان جہانیم
نازم بہ نازیم کہ در عینی عیانیم

رقص کرنے والوں کے ساتھ رقص کیا ۔جو جہان بھر کے خوبرو ہیں
ہم نازاں ہیں کہ ہم پر سب  کچھ ظاہر اور عیاں ہے

چوں تشنہ باشیم کہ دریائے محیطیم
چوں گنج بجوئیم کہ ما گوہر کانیم

پیاسا ہوں باوجود کہ سمندر میں محیط ہوں
خزانے کی تلاش ہے باوجود کہ میں خود لعل و جواہر کی کان ہوں

نہ آبیم نہ بادیم و نہ خاکیم و نہ آتش
مائیم بہر صورت و ما کون و مکانیم

نہ پانی نہ ہوا نہ مٹی نہ آگ
جو بھی ہوں کون و مکان والا ہوں

نہ اسمیم نہ جسمیم  نہ بسمیم و نہ رسمیم
نہ میمیم نہ جیمیم نہ اینیمم و نہ آنیم

نہ اسم ہون نہ جسم ہوں نہ بسم ہوں نہ رسم ہوں
نہ میم  نہ جیم نہ یہ نہ وہ ہوں

در عقل گنجیم کہ آں نور خدائیم
در فہم نہ آئیم کہ بے نام و نشانیم

عقل سے ماورا  نور خدا ہوں
فہم میں نہ آسکوں کہ بے نام و بے نشان ہوں

چوں براق سواریم بنازیم نہ لاہوت
زکس باک نہ داریم و اغیار برانیم

براق پر سوار ہو کر عالم لاہوت جا رہا ہوں
کسی قسم کا بھی ڈر خوف اور دشمن کی پرواہ نہیں ہے

مطلوب نہ طلبیم کہ ایں طلب حرام است
اللہ نگوئیم کہ در شرک بمانیم

مطلوب کو طلب نہیں کرتا کہ یہ حرام ہے
اللہ بھی نہیں کہتا ہے کہ شرک نہ ہو جائے

شہباز پریدیم و از خویش گذشتیم
با دوست بمانیم و بے دوست ندانیم

شہباز ہوں اپنے آپ  سے بھی پرواز کر گیاہوں
اب محبوب کے ساتھ ہوں اور سوائے محبوب کے کچھ نہیں جانتا

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar

Be Kaam o Be Zabanam Mast Alast Hastam

Be Kaam o Be Zabanam Mast Alast Hastam
Be Naam o Be Nishanam Mast Alast Hastam

بے کام و بے زبانم مسست الست ہستم
بے نام و بے نشانم مست الست ہستم

بغیر حلق کے اور بغیر زبان کے میں مست الست ہوں
نہ نام ہے نہ نشاں میں مست الست ہوں

دردیکہ پاک زادہ یارم مرا بدادہ
ساقی بیار بادہ مست الست ہستم

سچا درد میرے یار نے مجھے دیا ہے
اے ساقی جام لا کہ میں مست الست ہوں

ہم شاہ و ہم گدایم ہم وصل و ہم جدائیم
در دو جہاں دایم مست الست ہستم

ہم بادشاہ بھی ہیں اوریا ر کے  گدا بھی ہیں یار سے ملےبھی ہیں یار سے جدا بھی ہیں
دونوں جہانوں میں ہیں کہ ہم مست الست ہیں

من مرغ لا مکانم جز لا مکانم نہ دانم
بر تخت قدسیانم مست الست ہستم

میں طائر لا مکاں ہوں اور لا مکاں کے سوا کچھ نہیں جانتے
میں ملائکہ کے تخت پر بھی مست الست ہوں

شہباز شہ سوارم پرواز قدس دارم
آنجا شکار آرم مست الست ہستم

شہباز شہ سوار ہوں پرواز قدس کرتا ہوں
میں شکار لاؤں گا میں مست الست ہوں

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar

Haiderium Qalandram Mastam Banda e Murtaza Ali Hastam

Haiderium Qalandram Mastam
Banda e Murtaza Ali Hastam

حیدریم قلندرم مستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم

جام مہر علی ز در دستم
بعد از جام خوردم مستم
کمر اندر قلندری بستم
از دل پاک حیدری ہستم

میں نے حضرت علی کی محبت کا جام پیا
پینے کے بعد میں مست ہو گیا
میں نے قلندری کے میدان میں قدم رکھا
دل و جان سے میں حیدری ہو گیا

حیدریم قلندرم مستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم

از مئے عشق شاہ سرمستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم
من بغیر از علی نہ دانستم
علی ولی اللہ از ازل گفتم

حیدریم قلندرم مستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم

غیر حیدری ہمی اگر دانی
کافری و یہودی و نصرانی
بہشت ایمان علی فمیدانی
بپدیری کہ ایں مسلمانی

حیدریم قلندرم مستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم

سرگروہ تمام رندانم
رہبر سالکم عارفانم
ہادی عاشقانم مستانم
کہ سگ کوئے شیر یزدانم

حیدریم قلندرم مستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم

نہ رسد کئے حشمت و جاہش
منم عثمان مروندی بندہ درگاہش
برزماں ہست حال ما  آگاہش
بوصالش بود سدا خواہش

حضرت علی کے مرتبہ کو کوئی نہیں پہنچا
میں عثمان مروندی آپ کی بارگاہ کا غلام ہوں
آپ ہر زمانے میں میرے حال سے واقف رہے ہیں
آپ سے ملاقات کی ہمیشہ خواہش رہی ہے

حیدریم قلندرم مستم
بندہ مرتضٰی علی ہستم

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar

Faani Ast Bar Hama Cheez Een Daar Baqa Naist

Faani Ast Bar Hama Cheez Een Daar Baqa Naist
BrDaar Dil Khuwaish Ke Een Jaa e Wafa Naist

فانی است بر ہمہ چیز ایں دار بقا نیست
بردار دل خویش کہ ایں جائے وفا نیست

یہاں کی ہر چیز فانی ہے،یہ سدا رہنے دالی جگہ نہیں ہے
اپنے دل کو یہاں سے اُٹھا لے کہ یہاں وفا نہیں ملتی

ایں دل بکسے دہ  کہ مردہ است نہ میرد
آں مرد بود مردہ کہ درعشق خدا نیست

یہ دل کسی ایسے کو دے جو نہ مردہ ہو اور نہ کبھی مرے
وہ مرد مردہ ہو گا جس کے دل میں عشق خدا نہیں

آں موت حیاتست کہ در کوئے حبیب است
موتیکہ در آں کوئے نبودست بجا نیست

وہ موت حیات ہے جو کوچہ جاناں میں آئے
یار کی گلی کے سوا کہیں اور موت عاشق کو زیب نہیں دیتی

صد روح بداند چہ دارند در آں جسم
چوں عشق خداوند در آں روح روا نیست

اس جسم میں سینکڑوں روحیں موجود ہیں
اگر عشق خدا سے خالی ہو تو وہ روح کہلائی نہیں جا سکتی

ماراست نکردیم اگر راست بہ نازیم
ما راست ببازیم کہ ایں جائے دغا نیست

ہم سچ نہ کہتے نہ کرتے اگر سچ پہ ناز نہ ہوتا
ہم نے سچی بازی لگائی کیونکہ اس جگہ فریب ممکن نہیں

از خویش جدائیم کہ با حسن بنازیم
افسوس جدا ماند کہ از خویش جدا نیست

ہم اپنے آپ سے جدا ہوئے ہیں تاکہ حسن پر نازاں رہیں
افسوس کہ جدا ہو کر بھی خود سے جدا نہ ہو سکے

ما آہ نہ کردیم اگر بر آمد تیغ
بگریز از ایں تیغ گر ایں عشق ترا نیست

اگر تلوار بھی نکلی تو بھی آہ نہ کی
ہاں اگرتیرے عشق سے خالی ہو تو اس  تلوار سے گریز بہتر

پر درد نشینم چہ احوال بگویم
آں درد چہ پرسی کہ ہر آں درد دوا نیست

ہم درد کے مارے بیٹھے ہیں کیا احوال بتائیں
یہ درد کیا پوچھتے ہو جو ہرہر لمحہ بڑھتا ہے جس کی دوا ممکن نہیں

مائیم خرابیم در ایں دار گرفتار
دردیست در ایں سینہ کہ جز دوست دوا نیست

ہم اس جہاں میں عشق میں گرفتا ر ہو کر خستہ حا ل ہو گئے
سینے کے دردوں کا علاج سوائے دیدار یار کہ  ممکن نہیں

عشاق نشینم کہ دیدار بیابیم
بنمائے رخ خویش کہ ایں غیر شما نیست

عاشق لوگ دیدار کی چاہت میں بیٹھے ہیں
ان کی جانب رخ پھیر کہ یہ غیروں میں شمار نہیں ہوتے

سجادہ نشینم و تسبیح چہ گوئیم
دستار چہ بندیم کہ در قلب صفا نیست

میں مسند صوفیا پہ بیٹھا تسبیح پڑھ رہا ہوں
کوئی بھی دستار زیبا نہیں اگر دل پاک نہ ہو

سجادہ بر آں مرد حرام است بہ تحقیق
مردہ است در ایں دار کہ در عینی نما نیست

یقینا اس مرد کو سجادہ حرام ہے
جو خدا نما نہ ہو وہ اس جہاں میں مانند مردہ ہے

مان عین ہمائیم کہ از ایں عشق رسیدیم
او مرد بود مردہ کہ عینی ہما نیست

میں عین ہما  ہو چکا ہوں عشق کی بدولت
وہ مرد مردہ ہے کہ جو خود عین ہما نہیں

ہر جائیکہ رفتیم جز دوست نہ دیدیم
ایں قول کہ گفتم ثوابست خطا نیست

جہاں کہیں بھی ہم گئے سوائے دوست کہ کچھ نہ دیکھا
یہ بات ثواب کی خاطر کہی اس میں خطا نہیں

راجؔا کہ برا یں چشم عیاں دید نما نیست
اما چہ تواں کرد کہ آں چشم ترا نیست

راجا تیری یہ آنکھ جو نمایاں ہے اگر دیدار نہیں کرا سکتی
کیا کرنا ہے اس کا یہ آنکھ تیری  نہیں ہے

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar

Shahbaz La Makanam Bairoon Ze Kon o Makanam

Shahbaz La Makanam Bairoon Ze Kon o Makanam
Masjood Ins o Jaanam Matlab Tu Aashyanam

شہباز لا مکانم بیرون ز کون و مکانم
مسجود انس و جانم مطلب تو آشیانم

میں شہباز لا مکانی ہوں،کون و مکان سے باہر ہوں
جن و انس کا مسجود ہوں، کیونکہ میر ا ٓشیانہ  اور گھر تو ہے

در دو سرائے لافم بہ رنگ نور صافم
عنقائے کوہ قافم مطلب تو آشیانم

دونوں جہانوں میں لاف زنی کرتا رہا،پھر میرا رنگ نور سے صاف کیا گیا
میں کوہ قاف کا نایاب پرندہ عنقا ہوں،تو میرا پوشیدہ ٹھکانہ ہے

بے چوں و بے چگونم بے شبہ بے نمونم
بر فراز آں کہ چونم مطلب تو آشیانم

عقل ہ فہم سے بالا تر  اور  لا جواب ہوں بلا شبہ میری مثال نہیں
میں ایسی بلندی پر پہنچ چکا ہوں کہ تو میراآشیانہ ہو گیا ہے

در عقل تو نگنجم در فہم تو نہ سنجم
سیمرغ کنت کنزا مطلب تو آشیانم

اے کہ تو عقل میں نہ سمایا نہ ہی فہم و ادراک نے  پایا
تو تو سیمرغ کی طرح اک چھپا خزانہ ہے جوناپید ہے،تو میرا ملجا اور ٹھکانہ ہے

بے نام و بے نشانم بے کام و بےدہانم
بے روئے بے زبانم مطلب تو آشیانم

میں بے نام اور بے نشان ہوں ، نہ حلق ہے نہ منہ
چہرہ بھی نہیں اور زبان بھی نہیں ، اسی لئے تو میرا آشیا نہ ہے

راجا کہ مست مایم بے روح و دست و پایم
از بہشت شش بر آیم مطلب تو آشیانم

راجا ! اپنی  دولت سے مست ہے،نہ روح ہے نہ ہاتھ پاؤں
یہ سب عنائیات مجھے چھٹے آسمان سے ملی ہیں،مطلب تو میرا ٓشیانہ ہے

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar

Aan Shah e Do Alam Arabi Muhammad Ast

Aan Shah e Do Alam Arabi Muhammad Ast
Maqsood Bood e Adam Arabi Muhammad Ast

آں شاہ دو عالم عربی محمد است
مقصود بود آدم عربی محمد است

دونوں جہان کے بادشاہ حضور عربیﷺہیں
آدمؑ کی پیدائش کا مقصد حضور عربیﷺہیں

صد شکر آں خدائے کہ پشت و پناہ خلق
شاہنشاہے مکرم عربی محمد است

خدا کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ مخلوق کی پشت و پناہ
عزت والے شاہنشاہ حضور عربیﷺہیں

مارا  ز جرم حال پریشاں وے چہ غم
چوں پیشوائے عالم عربی محمد است

میں اپنے جرموں اور گناہوں پر فکرمند کیوں ہوں
جبکہ زمانے کے پیشواحضور عربیﷺہیںں

مارا چہ غم بود کہ چنیں سایہ بر سر است
غم خوار حال زارم عربی محمد است

میں کیوں غم کروں جبکہ میرے سر پر آپﷺ کا سایہ ہے
میرے حالات پرغمخوار خود حضور عربیﷺہیں

بختم مدد نمود کہ از آتش شدم
مطلوب و جان جانم ، عربی محمد است

میری مدد کریں کہ میں عشق کی  آگ میں ختم ہو چکا ہوں
میری دل وجان کے مطلوب  حضور عربیﷺہیں

ختم رسل چراغ رہ دین و نور حق
آں رحمت دو عالم عربی محمد است

انبیا کے خاتم، دین کے چراغ ،حق کا نور
دو نوں جہان کے لئے رحمت  حضور عربیﷺہیں

آں سرور خلائق و آں رہمنائے دیں
آں صدر و بدر عالم عربی محمد است

آپ مخلوق کے سردار اور دین حق کے رہنما ہیں
بمشل مکمل چاند اور زمانے کے صدر   حضور عربیﷺہیں

آں کعبہ معارف و آں قبلہ یقین
آں شاہ دین پناہم عربی محمد است

آپ  اسرار و رموز الہیٰ  اور  حق الیقین کا کعبہ و قبلہ ہیں
دین کی پناہ گاہ آپ حضور عربیﷺہیں

کن پیروی راہ وے اربایدت نجات
شاہنشاہے معظم عربی محمد است

جہان والوں آپﷺ کی اتباع کرو تا کہ نجات حاصل ہو
عزت والے بادشاہ حضور عربیﷺہیں

عثماں چو شد غلام نبی و چہار یار
اُمیدش از مکارم عربی محمد است

عثمان جب حضورﷺ اورآپ کے چار یاروںکا غلام ہو  گیا
کرم کی اُمید اب حضور عربیﷺہیں

لعل شہباز قلندر
Lal Shahbaz Qalandar