Qumi Mutfakrand Dar Mazhab o Deen

Qumi Mutfakrand Dar Mazhab o Deen

قومی متفکراند  در مذہب و دین
قومی متحیراند در شک و یقین
ناگاہ منادی ای بر آمد ز کمین
کای بیخبراند راہ نہ آنست نہ این

ایک قوم دین و مذہب میں غورو فکر کر رہی ہے
ایک قوم شک و یقین کی وادی میں حیران پریشان ہے
اچانک گھات سے ندا بلند آتی ہے
اے نادانوں نہ یہ راہ سیدھی ہے نہ وہ

عمر خیام
Omar Khayyam

Mayam Ke Asal Shadi o Kaan e Ghameem

Mayam Ke Asal Shadi o Kaan e Ghameem

مائیم کہ اصل شادی و کان غمیم
سرمایۂ دادیم و نہاد ستمیم
پستیم و بلندیم و زیادیم و کمیم
آئینہ زنگ خوردہ و جام جمیم

ہم لوگ جو کہ خوشیوں کا گھر تھے غم کی کان ہو گئے
زندگی کا سرمایہ دے دیا اور ستم کی بنیاد بن گئے
پست بھی ہیں بلند بھی زیادہ بھی ہیں کم بھی
ہمارے دل کے آئینہ کو زنگ لگ گیا ورنہ جمشید بادشاہ کے جام کی طرح ساری دنیا دیکھتے

عمر خیام
Omar Khayyam

Har Chand Ke Rang o Roop Zaibast Mera

Har Chand Ke Rang o Roop Zaibast Mera

ہر چند کہ رنگ و روی زیباست مرا
چوں لالہ رُخ  و چو سرو بالا ست مرا
معلوم نہ شد کہ در طربخانہ خاک
نقاشِ ازل بہر چہ آرا ست مرا

بے شک میرا حسن و جمال اور رنگ و روپ بہت خوب ہے
لالہ کی طرح سرخ اور سرو کی مانند دراز قد ہوں
لیکن سمجھ نہیں آتی کہ اس فانی دنیا مٹی کے گھر میں
قدرت نے مجھے کس لئے اتنے حسن و جمال سے نوازا ہے

عمر خیام
Omar Khayyam

Khayyam Ke Khaima Haai Hikmat Me Dokht

Khayyam Ke Khaima Haai Hikmat Me Dokht

خیام کہ خیمہ ہای حکمت می دوخت
در کوزہ غم فتادہ ناگاہ بسوخت
مقراض اجل طناب عمرش بہ برید
دلال قضا بہ رائگانش بفروخت

خیام جو کہ فلسفہ و حکمت کے خیمے سیتا تھا
غم کی بھٹی میں اچانک گر گیا اور جل گیا
موت کی قنیچی نے جب اس کی عمر کی ڈور کاٹی
قضا و قدر کے دلال نے جسد خاکی کو بے مول ہی فروخت کر دیا

عمر خیام
Omar Khayyam

Man Banda Aaseem Razai Tu Kujast

Man Banda Aaseem Razai Tu Kujast

من بندہ عاصیم ، رضای تو کجاست
تاریک دلم ، نور صفای تو کجاست
ما را تو بہشت اگر بہ طاعت بخشی
این مزد بود، لطف و عطای تو کجاست

میں گنہگار بندہ ہوں تیری بخشش کہاں ہے
میرا دل تاریک ہے تیرا شفاف نور کہاں ہے
جنت اگر ہیمں نیکیوں سے ملنی ہے تو
یہ تو مزدوری ہوئی تیری رحمتیں اور عنایتیں کہاں ہیں

عمر خیام
Omar Khayyam

Har Roz Bar Aanam Ke Kunam Shab Tauba

Har Roz Bar Aanam Ke Kunam Shab Tauba

ہر روز بر آنم کہ کنم شب توبہ
از جام و پیالۂ لبا لب توبہ
اکنوں کہ رسید وقت گل تر کم دہ
در موسم گل توبہ یا رب توبہ

ہر دن میں کہتا ہوں کہ آج رات توبہ کروں گا
بھرے ہو ئے جام و پیالہ سے توبہ کروں گا
لیکن بہار کا موسم آنے سے میرا ارادہ کمزور پڑ گیا ہے
موسم بہار میں توبہ کر لوں ارے توبہ توبہ

عمر خیام
Omar Khayyam

Ta Chand Z Masjid O Namaz O Roza

Ta Chand Z Masjid O Namaz O Roza

تا چند ز مسجد و نماز و روزہ
در میکدہ ہا مست شو از دریوزہ
خیام بخور بادہ کہ این خاک ترا
گہہ جام کنند ، گہہ سبو ، گہہ کوزہ

کب تک مسجد و نماز و روزہ میں مصروف رہے گا
میکدے میں جا دیوانہ بن اورگدا گری کر
اے خیام تو شراب پی کیونکہ تیری اس خاک سے
کبھی جام بنے گا ، کبھی صراحی و مٹکا اور کبھی کوزہ

عمر خیام
Omar Khayyam

Az Amdan o Raftan Ma Soodi Ko

Az Amdan o Raftan Ma Soodi Ko

از آمدن و رفتن ما سودی کو
وز تار امید عمر ما پودی کو
چندین سرد پای ناز نینان جہان
می سوزد و خاک می شود دودی کو

ہمارا دنیا میں آنا اور جان کیا نفع دیتا ہے
کیا معلوم کہ زندگانی کی ڈور کہاں تک ہے
کتنے ہی دراز قد حسین اور  خوبرو
جل کر خاک ہو گئے اوراُن کا  دھواں تک نہیں ملتا

عمر خیام
Omar Khayyam

Een Qafila Umar Ajab Mi Guzrad

Een Qafila Umar Ajab Mi Guzrad

ایں قافلہ عمر عجب می گزرد
در یاب دمی کہ با طرب می گزرد
ساقی! غم فردای قیامت چہ خوری
پیش آر پیالہ ای کہ شب می گزرد

زندگی کا قافلہ عجیب انداز میں گزرتا ہے
اس لمحے کو  حاصل کر لے جو خوشی اور راحت میں گزرتا ہے
ساقی آنے والی قیامت کا غم کیوں کرتا ہے
تو جام پکڑا کہ  شب گزرتی جاتی ہے

عمر خیام
Omar Khayyam

Ee Deeda Agar Kor Na Gor Babeen

Ee Deeda Agar Kor Na Gor Babeen

ای دیدہ  اگر کور نۂ گور ببین
وین عالم پر فتنہ و پر شور ببین
شاہان و سران و سروران زیر گلند
روہای چو مہہ در دہن مور ببین

اے آنکھ اگر اندھی نہیں ہے تو قبر دیکھ
اس دنیا کے شور و غل اور فتنہ و فساد کو دیکھ
بادشاہ ،بزرگ اور سردار زیر زمین چلے گئے
چاند جیسے چہروں کو چیونٹیوں کے منہ میں دیکھ

عمر خیام
Omar Khayyam