Buriyan Buriyan Buriyan Way Aseen Buriyaan Way Loka

Buriyan Buriyan Buriyan Way Aseen Buriyaan Way Loka

بُریاں،بُریاں،بُریاں وے، اَسیں بُریاں وے لوکا
بُریاں کول نہ بَہو وے
تِیراں تے تلواراں کُولوں ،تِکھیاں برہوں دیاں چُھریاں وے لوکا
لَد سجن پردیس سدھائے،اَسیں ودیاع کرکے مڑیاں وے لوکا
چے تُوں تخت ہزارے دا سائیں، اسیں سیالاں دیاں کُڑیاں وے لوکا
سانجھ پات کاہوں سَوں ناہیں،سَاجن کھوجن اَسِیں !ٹَریاں وے لوکا
جنہاں سائیں دا ناؤں نہ لِتّا، اوڑک نوں اوہ جُھریاں وے لوکا
اَساں اَوگن ہاریاں جیہے،کہے حسین فقیر سائیں دا
صاحب سیوں اَسیں جُڑیاں وے لوکا

ہم بُرے ہیں بُرے ہیں ،ہم بُرے ہیں اے لوگو
بُروں کے پاس نہ بیٹھو اے لوگو
تیروں اور تلواروں سے بڑھ کر تیز تر عشق و جدائی کی چھریاں ہیں
محبوب ہمارا پردیس چلا گیا ہے،ہم لاچار الوداع کر کے لوٹ آئے ہیں
اگر تو تخت ہزارے کا سائیں ہے تو ہم سیالوں کی باسی ہیں
صبح شام کی ہم کو خبر نہیں ہم تو محبوب کی تلاش میں دن رات سرگرداں ہیں
جنہوں نے مالک کا نام نہ لیا وہ بالاخر پچھتائیں گے
ہم جیسے گنہگاروں کے لئے حسین رب کا فقیر کہتا ہے
ہمارا تعلق تو مالک حقیقی سے چڑا ہوا ہے

شاہ حسین
Shah Hussain

Aashiq Hovain Taan Ishq KamaVain

Aashiq Hovain Taan Ishq KamaVain

عاشق ہوویں تاں عشق کماویں
راہ عشق سوئی دا ٹکا،دھاگہ ہویں تاں ہی جاویں
باہر پاک اندر آلودہ، کیہا توں شیخ کہاویں
کہے حسین جے فارغ تھیویں،تاں خاص مراتبہ پاویں

عاشق بننا ہے تو عشق حقیقی اختیار کر
عشق کا راستہ سوئی کے سوراخ کی مانند ہے ، دھاگے کی طرح ہو جا نفس کو مار کرپھر ہی گزرے گا
ظاہر پاک صاف ہے مگر اندر گندگی ہے تو خود کو شیخ کہلانا پسند کرتا ہے
حسین کہتا ہے کہ دنیاوی خواہشات سے فراغت حاصل کر جب ہی تو خاص مرتبہ پا سکے گا

شاہ حسین
Shah Hussain

Sajan De Hath Banh Asadi Kyun Kar Aakhan Chad Ve Arya

Sajan De Hath Banh Asadi Kyun Kar Aakhan Chad Ve Arya

سجن دے ہتھ بانہہ اَساڈی ، کیونکر آکھاں چھڈ وے اَڑیا
رات اندھیری بَدّل کنیاں ، ڈَاڈھے کیتا سڈّ وے اَڑیا
عشق محبت سو ای جانن پئی جنیہاں دے ہڈ وے آڑیا
کلر کٹھن کھوہڑی چینا ریت نہ گڈ وے اَڑیا
نت بھرینائیں چھٹیاں اک دن جا سیں چھڈ وے آڑیا
کہے حسین فقیر نمانا، نین نیناں نَال گڈ وے اَڑیا

محبوب نے ہمارا بازو پکڑ لیا ہے میں کیوں کہوں کہ چھوڑ دے
رات اندھیری ہے ، بادل گھنا ہے ، بلاوا بھی آ چکا ہے
عشق اور محبت وہی جانتے ہیں جن کی ہڈیوں میں رچ بس جاتا ہے
سیم و تھور اور ریتلی زمین کنواں کھودنے اور اناج اُگا نے کا کوئی فائدہ نہیں
تو روز و شب مال ودولت اکٹھا کرنے میں مگن ہے مگر ایک دن سب یہیں چھوڑ کر چلا جائے گا
حسین رب کا عاجز فقیر کہتا ہے کہ تو نگاہوں سے نگاہیں ملا یعنی عشق کر

شاہ حسین
Shah Hussain

Mandi Haan Ke Changi Haan Sahib Teri Bandi Haan

Mandi Haan Ke Changi Haan Sahib Teri Bandi Haan

مندی ہاں کہ چنگی ہاں بھی ، صاحب تیری بندی ہاں
گہلا لوک جانے دیوانی ، رنگ صاحب دے رنگی ہاں
ساجن میرا اکھیں وچ وسدا ، گلیئیں پھری تشنگی ہاں
کہے حسین فقیر سائیں دا ، میں ور چنگے نال منگی ہاں

اے میرے مالک میں اچھا یا بُرا جیسا بھی ہوں تیرا بندہ ہوں
لوگ مجھے دیوانہ سمجھتے ہیں ،جب کہ میں تیرے رنگ میں رنگا ہوا ہوں
محبوب میری آنکھوں میں بستا ہے ،لیکن پیاسا گلیوں میں پھرتا ہوں
حسین رب کا فقیر کہتا ہےکہ محبوب حقیقی کہ ساتھ تعلق استوار ہو گیا ہے

 

شاہ حسین
Shah Hussain

Ni Saiyo Asi Naina De Aakhe Lage

Ni Saiyo Asi Naina De Aakhe Lage

نی سیّو ! اسیں نیناں دے آکھے لگے
جینہاں پاک نگاہاں ہوئیاں ، کہیں نہیں جاندے ٹھگے
کالے پٹ نہ چڑھے سفیدی ، کاگ نہ تھیندے بگے
شاہ حسین شہادت پائیں ، مرن جو متراں اگے

 دوستو! ہم نگاہوں کا کہنا مانتے ہیں
جن کی طرف پاک نگاہیں اُٹھ جاتی ہیں وہ کہیں بھی دھوکہ نہیں کھاتے
جیسے سیاہ ریشم پر سفید رنگ نہیں چڑھتا اور جیسا کہ کوّے سفید نہیں ہوتے
شاہ حسین وہ شہید ہوتے ہیں جو محبوب کی خاطر قربان ہو جاتے ہیں

شاہ حسین
Shah Hussain

Sajna Aseen Moriyon Lang Payase

Sajna Aseen Moriyon Lang Payase

سجنا اَسیں موریوں لنگھ پیاسے
بھلا ہووے گڑ مکھیاں کھاہدا،اَسیں بِھن بِھن تُوں چُھٹیاسے
ڈَھنڈ پُرانی کتیاں لکّی، اَسیں سرور ما نہیں دھوتیاسے
کہے حُسین فقیر سائیں دا ، اَسیں ٹپن ٹپ نِکلاسے

سوہنے ہم تو اس نالی(دنیا) سے پیاسے ہی نکل گئے
بھلا ہو مکھیوں نے گڑ(دنیا) کھایا مگر ہم  نےمکھیوں کی بھنبھناہٹ سے چھٹکارا حاصل کر لیا
پرانے برتن کو کتوں نے چاٹا مگر ہم نے پانی سے کچھ نہیں دھویا
حسین رب کا فقیر کہتا ہے کہ جتنی مشکلات ہمارے راستے میں آئیں ہم سب کو چھلانگ لگا کر پار کرآئے

شاہ حسین
Shah Hussain

Dil Dardaan Keeti Poori Ni Dil Dardaan Keeti Poori

Dil Dardaan Keeti Poori Ni Dil Dardaan Keeti Poori

دل درداں کیتی پوری نی،دل درداں کیتی پوری
لکھ کروڑ جنہاں دے جڑیا،سو بھی جُھوری جُھوری
بَھٹھ پئی تیری چِٹی چادر ،، چَنگی فقیراں دی بُھوری
سَادھ سنگت دے اوہلے رندے ،بُدھ تینہاں دی سُوری
کہے حسین فقیر سائیں دا ،خلقت گئی اَدھوری

دل کی دردوں نے پورا کر دیا،دل کی دردوں نے مکمل کر دیا
جن کے پاس لاکھ ، کڑور جمع ہوتا  ہے وہ پھر بھی  ادھورے اور نا مکمل رہتے ہیں
تیر ی سفید چادر میلی ہو گئی مگرہماری بھوری چادر بے داغ ہے
جن کو نیک صحبت میسر ہو جائے ان کی عقل سلیم ہو جاتی ہے
حسین رب کا فقیر کہتا ہے کہ خلقت دنیا سے ادھوری جاتی ہے

شاہ حسین
Shah Hussain

Rabba Mere Haal Da Mehram Tu

Rabba Mere Haal Da Mehram Tu

ربّا میرے حال دا محرم تُوں
اندر توں ہیں باہر تُوں ہیں ، روم روم وچ تُوں
تُوں ہیں تانا ، تُوں ہیں بانا، سبھ کجھ میرا تُوں
کہے حسین فقیر نمانا، میں ناہیں سبھ تُوں

اے میرے رب صرف تو ہی میرے حال سے واقف ہے
میرے اندر باہر اور رگ رگ میں تو سمایا ہوا ہے
تو ہی میرا تانا بانااور سب کچھ ہے۔ یعنی دھاگوں (رگوں)کا جال جو میرے اندرطول اور عرض پھیلا ہوا ہے
عاجز فقیر حسین کہتا ہے کہ میں کچھ نہیں سب کچھ تری ذات ہے

شاہ حسین
Shah Hussain

Hamid Ali Bela Rabba Mere Haal Da Mehram Tu

Kaddi Samjh Nadaana Ghar Kithe ee Samjh Nadaana

Kaddi Samjh Nadaana Ghar Kithe ee Samjh Nadaana

کدی سمجھ ندانا ، گھر کتھے اِی سمجھ ندانا
آپ کمینہ ،تیری عقل کمینی،کون کہے تُوں دانا
ایہنیں راہیں جاندے ڈھٹڑے، میر ملک سلطاناں
آپےمارے تے آپے جیوالے،عزرایئل بہانا
کہے حسین فقیر سائیں دا،بن مصلحت اُٹھ جانا

اے نادان کبھی تو ہوش کے ناخن لے ، اپنے اصلی گھر قبر کا سوچ
تو دنیا کے پیچھے لگ کر لالچی ہو گیا ہے تیر ی عقل دو کو چار کرنے میں لگی ہو ئی ہے لہذا تو عقل مند نہیں
یہیں کام کرتے کرتے سارے بادشاہ دنیا سے چلے گئے مگر حرص ختم نہ ہوئی
خود ہی پیدا کرتا ہے خود ہی مارتا ہے ،عزرائیل تو اک سبب ہے
حسین رب کا درویش کہتا ہے کہ دنیا سے بلا شبہ چلے جانا ہے

شاہ حسین
Shah Hussain

Main Bhi Jhook Ranjhan Di Jana Naal Mere Koi Challe

Main Bhi Jhook Ranjhan Di Jana Naal Mere Koi Challe

میں بھی جھوک رَانجھن دِی جانا،نال میرے کوئی چلے
پیراں پوندی،منتاں کردی ،جانا تاں پیا اکلے
نیں بھی ڈونگھی،تُلا پُرانا ،شینہاں تاں پتن ملے
جے کوئی خبر متراں دی لیاوے،ہتھ دے دینی آں چھلے
راتیں درد ، دینہاں در ماندی ، گھاؤ متراں دے اَلھے
رانجھن یار طبیب سنیندا، میں تن درد اولے
کہے حسین فقیر نمانا،سائیں سنہوڑے گھلے

میں بھی محبوب کی نگری میں جا کر بسنا چاہتی ہوں،میرے ساتھ کوئی چلے
پاؤں پکڑے ،منتیں کیں کہ کوئی ساتھی تیار ہو جائے مگر اکیلے ہی جانا پڑا
ندی گہری ہے ، کشتی پرانی ہے،خوفناک درندے بھی راستے میں ملتے ہیں
اگر کوئی مجھے محبوب کی خبر سنائے تو ہاتھ کی انگوٹھی دوں گی
رات کو جدائی کا درد  اور دن کو بے بسی و مجبوری میں وقت کٹتا ہے،زخم بھی ہرے ہیں
سنا ہے کہ محبوب طبیب ہوتا ہے اور صرف وہ ہی ان دردوں کا علاج کر سکتا ہے
حسین رب کا فقیر کہتا ہے کہ رب تو بلاوے بھیجتا رہتا ہے۔

شاہ حسین
Shah Hussain