Zarre Zarre Mein Tu WahdaHoo WahdaHoo

Zarre Zarre Mein Tu WahdaHoo WahdaHoo
Hai Sadda Char Soo WahdaHoo WahdaHoo

ذرے ذرے میں تو وحدہُ وحدہُ
ہے صدا چار سو وحدہُ وحدہُ

ساری مخلوق کے لب پہ ہے رات دن
تیری ہی گفتگو وحدہُ وحدہُ

تیرے ڈر سے جو روتی ہے اُس آنکھ کا
ہو گیا ہے وضو وحدہُ وحدہُ

صورتِ مصطفی میں ہوا جلوہ گر
خود ہی تو ہو بہو وحدہُ وحدہُ

جاؤں دُنیا سے جب ہو لبوں پہ ریاض
اللہ ہو اللہ ہو وحدہُ وحدہُ

علامہ سید ریاض الدین سہروردی
Syed Riaz uddin Soharwardi

Khizaan Ke Marey Huwe Janib e Bahar Chale

Khizaan Ke Marey Huwe Janib e Bahar Chale
Qarar Pane Zamaney Ke Be Qarar Chale

خزاں کے مارے ہوئے جانب بہار چلے
قرار پانے زمانے کے بے قرار چلے

وہ راہیں مہکیں وہ کوچے بھی عطر بیز ہوئے
جدھر جدھر سے وہ محبوب کرد گار چلے

اے تاجدارِ جہاں اے حبیب ربِ کریم
وہ بھیک دو کہ غریبوں کا کاروبار چلے

وہیں پہ تھام لیا اُن کو دست قدرت نے
نبیؐ کے در کی طرف جب گناہگار چلے

جھکا کے اپنی جبیں اُن کے آستانے پر
نصیب بگڑا ہوا تھا اسے سنوار چلے

ہمارے پاس ہی کیا تھا جو نذر کرتے انہیں
بس ایک دل تھا جسے کر کے ہم نثار چلے

ریاض عظمت نعلین مصطفےٰ کی قسم
سروں پہ رکھتے ہوئے اس کو تاجدار چلے

ریاض اُن کے کرم سے ہوئی ہے جیت اپنی
وگرنہ بازی تھے ہم زندگی کی ہار چلے

علامہ سید ریاض الدین سہروردی
Syed Riaz uddin Soharwardi

Ae Ishq e Nabi Mere Dil Main Bhi Sama Jana

Ae Ishq e Nabi Mere Dil Main Bhi Sama Jana

اے عشق نبی میرے دل میں بھی سما جانا
مجھ کو بھی محمد کا دیوانہ بنا جانا

وہ رنگ جو رومی پر جامی پہ چڑھایا تھا
اس رنگ کی کچھ رنگت مجھ پہ بھی چڑھا جانا

قدرت کی نگاہیں بھی جس چہرے کو تکتی تھیں
اس چہرہ انوار کا دیدار کرا جانا

جس خواب میں ہو جائے دیدار نبی حاصل
اے عشق کبھی مجھ کو نیند ایسی سلا جانا

دیدار محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی حسرت تو رہے باقی
جزا سکے ہر اک حسرت اس دل سے مٹا جانا

دنیا سے ریاض ہو جب عقبٰی کی طرف جانا
داغ غم احمد سے سینے کو سجا جانا

علامہ سید ریاض الدین سہروردی
Syed Riaz uddin Soharwardi

Many Thanks to Mustafa Khan for sharing this naat on Facebook.

Ae Habib e Kibriya Ae Manba e Jood o Sifaat

Ae Habib e Kibriya Ae Manba e Jood o Sifaat

اے حبیبِ کبریا ، اے منبع جودوصفات
باعث تکوین عالم ، مرکز کل کائنات

ہو گیا پیدا تیری خاطر نظام ہست و بُود
بارگاہ حق میں ہے مقبول کتنی تیری ذات

تو نہیں ، کچھ بھی نہیں ، تو ہے تو سب موجود ہے
تیرے ہی دم سے ہوا قائم وجود شش جہات

کیوں نہ ہم سمجھیں محبت کو تیری ایمان اصل
جب اسی اک بات پر موقوف ہے اپنی نجات

جس کے منہ میں پڑ گیا اک مرتبہ تیرا لعاب
اُس نے ٹکڑے کر دیا پیمانہء آب حیات

تو نے فرمایا ھواللہ احد دنیا میں جب
سر بسجدہ تیرے قدموں میں گرے لات و منات

ریزہ چیں تیری بساطِ حسن کے شمس و قمر
اے مجسم نور حق اے مشعلِ کل کائنات

عاصیوں کو ناز ہو کیونکر نہ تیری ذات پر
مانی جائے گی تری محشر کے دن ہر ایک بات

تیرے نُور پاک سے ضو ریز مہر و ماہ ہوئے
تیرے حسن لم یزل کی اس طرح نکلی زکات

مرجع خلق خدا ہے تیری ذات با صفا
ہو ریاض دل جزیں پر بھی نگا ہ التفات

علامہ سید ریاض الدین سہروردی
Syed Riaz uddin Soharwardi