Khiyaal e Ghair Mitey Dor e Imtihan Guzray

Khiyaal e Ghair Mitey Dor e Imtihan Guzray
خیالِ غیر مٹے دور این و آں گزرے

 خیالِ غیر مٹے دور این و آں گزرے
الہیٰ عشق محمد ؐ میں میری جاں گزرے

یہی ہے رمز محبت یہی ہے رازِ حیات
فریب سودوذیاں سے یہ جسم و جاں گزرے

خدا وہ وقت نہ لائے کہ میرا کوئی قدم
خلافِ جادہ سیاحِ لا مکاں گزرے

خوشا وہ وقت کہ میرے حریمِ شوق میں بھی
کسی بہانے وہ محبوب انس و جاں گزرے

زہے نصیب ملے محملِ حبیب کہیں
ہزار دشت پھرےاور رواں دواں گزرے

یہی ہے اصلِ قیام و رکوع و درورد  صٰلوۃ
کہ زندگی تری الفت میں جادداں گزرے

فقط حضوری تری قرب و مدعا کی دلیل
خدا کرے کہ تیرے آستاں پ جاں گزرے

ثباتِ رونق ہستی، قوام ِ دنیا و دیں
ترا قدم ہے مبارک جہاں جہاں گزرے

بہار تیرا تبسم سحر کی تجھ سے نمود
کرم اے مہرِ جہاں ظلمت وخزاں گزرے

تیری نظر کےتصّدق ترے کرم کے طفیل
اسیر دا من الفتہیں کا مراں گزرے

تیری تلاش میں اب تک بہ انتظار سحر
نگاہ شوق سے لاکھوں ہیں کاردوں گزرے

اسی اُمید پہ تیرے فقیر بیٹھے ہیں
کرم کی بھیک ملے دورِ امتحاں گزرے

فقظ وہی ہے زمانے میں صاحب مقصود
جو معرفت میں تری ہو کے کامراں گزرے

نگاہ فیض بھی ہو جائے جانبِ خؔاور
کہ راہ عشق میں بے خوف و بے گماں گزرے

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *