Khawar Soharwardy

  Hamds Naats Arifana Kalam  Khawar Soharwardy

ٓاحسان الحق خاور کے منظوم کلام سے انتخاب

(حمد و نعت و غزلیات وعارفانہ کلام)

پوچھتے ہیں خُدا کے بارے میں
یعنی جو ہے خدا محمّد کا
آؤ خؔاور! چلیں اُسے ملنے
سوئے بطحا، براستہ طیبہ

خیالِ غیر مٹے دور این و آں گزرے

Khiyaal e Ghair Mitey Dor e Imtihan Guzray

 

نور ہی نور، مہک ، کیف و سرور آئے ہیں

Noor he Noor Mahak Kaif o Saroor Ayay Hain

 

جہاں بھر کے حسینوں سے حسیں تر اے حسیں تم ہو

Jahan Bhar Ke Haseenon Se Haseen Tar Ae Haseen Tum Ho

 

جب نورتجلی کا اظہار ہوا معلوم

Jab Noor e Tajalla Ka Ezhaar Huwa Maloom

 

اک رشکِ زمانہ ہیں، پروانے محمد کے

Ik Rashk e Zamana Hain Parwanay Muhammad Ke

 

اے نورِ مجسم جب تیری ، رحمت کی نظر ہو جاتی ہے

Ae Noor e Mujasim Jab Teri Rahmat Ki Nazar Ho Jati hai

 

تیرے در سے دور ہٹ کر ، میں کہیں نہ جا سکوں گا

Tere Dar Se Door Hat Kar Main Kahin Na Ja Sakon Ga

 

صانع کی صنعتوں کا قرینہ تمہی تو ہو

Saanay Ki Sanatoun Ka Qareena Tumhi Tou Ho

 

ہستی کا انتظام محمدؐ کے دم سے ہے

Hasti Ka Intizam Muhammad Ke Dam Se Hai

 

  نہ چھیڑو خیالِ محمد میں گم ہوں

Na Chehro Khiyal e Muhammad Main Gum Hun

 

مرے عشق کی ہے عظمت ، تیرا سنگ آستانہ

Meray Ishq Ki Hai Azmat Tera Sang e Aastana

 

ازل کا  وہ سرِّ نہاں اللہ اللہ

Azal Ka Woh Sirr e Nihaan Allah Allah

 

 

2 thoughts on “Khawar Soharwardy

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *