Edhar Daikhta Houn Udhar Daikhta Houn

Edhar Daikhta Houn Udhar Daikhta Houn
Tujhey Daikhta Houn Jidhar Daikhta Houn

اِدھر دیکھتا ہُوں اُدھر دیکھتا ہُوں
تُجھے دیکھتا ہُوں جدھر دیکھتا ہُوں

پہنچ کر سرِ منزل یار دیکھو
رواں خود کو بہر سفر دیکھتا ہُوں

وہ میری نظر میں سمائے ہیں ایسے
جہاں سارا عکسِ نظر دیکھتا ہوں

کوئی مجھ کو سمجھائے یارو کہاں ہُوں
نہ در دیکھتا ہُوں نہ گھر دیکھتا ہوں

میں جب دیکھتا ہوں نہیں خود کو پاتا
کسی کی نظر کا اثر دیکھتا ہوں

یہی تو نہیں اُستوائے علی العرش
برابر اُسے جلوہ گر دیکھتا ہُوں

نظامی خُدا کی قسم میں نہیں ہُوں
اُسے از قدم تا بسر دیکھتا ہوں

امانت علی شاہ چشتی نظامی
Amant Ali Shah Chishti Nizami

                                     https://www.facebook.com/AbulHaqaiqNizami

Kis Ghar Mein Kis Hijab Mein Ae Jaan Nehaan Ho Tum

Kis Ghar Mein Kis Hijab Mein Ae Jaan Nehaan Ho Tum
Hum Raah Daikhte hain Tumhari Kahan Ho Tum

کس گھر میں کس حجاب میں اے جاں نہاں ہو تم
ہم راہ دیکھتے ہیں تمھاری کہاں ہو تم

مٹنے پر اپنے ناز نہ ہو کس طرح مجھے
میں ہوں وہ بے نشاں کہ جس کہ نشاں ہو تم

پردہ دری کا آپ نہ کیجے گلہ اگر
ہم سینہ چاک کرکے دکھا دیں جہاں ہو تم

دونوں جگہ ظہور برابر ہے آپ کا
ذرے میں آفتاب میں یک ساں عیاں ہو تم

خالی نہیں ہے آپ کے جلوے سے کوئی شے
دریا ہو اور قطروں کے اندر نہاں ہو تم

حاضر ہے بزم یار میں ساماں عیش سب
اب کس کا انتظار ہے اکبر کہاں ہو تم

شاہ اکبر دانا پوری

Thanks to Syed Zeeshan Khalid for Sharing.

Kafir e Ishq Houn Main Banda e Islam Nahin

Kafir e Ishq Houn Main Banda e Islam Nahin
Butt Parasti Ke Siwa Aur Mujhay Kaam Nahin

Ishq Main Poojta Houn Qibla o Kaaba Apna
Ek Pal Dil Ko Mere Es Ke Bin Aaraam Nahin

کافر عشق ہوں میں بندہ اسلام نہیں
بت پرستی کےسوا اور مجھے کام نہیں

عشق میں پوجتا ہوں قبلہ و کعبہ اپنا
اک پل دل کو میرے اس کے بنا آرام نہیں

ڈھونڈتا ہے تو کدھر یار کو میرے ایماہ
منزلش در دلِ ما ہست لبِ بام نہیں

بوالہوس عشق کو تو خانہ خالہ مت بوجھ
اُسکا آغاز تو آسان ہے پر انجام نہیں

پھانسنے کو دلِ عشاق کے اُلفت بس ہے
گہیر لینے کو یہ تسخیر کم از دام نہیں

کام ہو جائے تمام اُسکا پڑی جس پہ نگاہ
کشتہ چشم کو پھر حاجتِ صمصام نہیں

ابر ہے جام ہے مینا ہے می گلگون ہے
ہے سب اسبابِ طرب ساقی گلفام نہیں

ہائے رے ہائے چلی جاتی ہے یوں فصل بہار
کیا کروں بس نہیں اپنا وہ صنم رام نہیں

جان چلی جاتی ہے چلی دیکھ کے یہ موسم گُل
ہجر و فرقت کا میری جان پہ ہنگام نہیں

دل کے لینے ہی تلک مہر کی تہی ہم پہ نگاہ
پھر جو دیکھا تو بجز غصہ و دشنام نہیں

رات دن غم سے ترے ہجر کے لڑتا ہے نیاز
یہ دل آزاری میری جان بھلا کام نہیں

Hazrat Shah Niaz
حضرت شاہ نیاز 

Thanks to Mohammed Tausif Iftekhari for Sharing

Ek Main He Nahin Un Per Qurban Zamana Hai

Ek Main He Nahin Un Per Qurban Zamana Hai
Jo Rab e Do Alam Ka Mahboob Yaqana Hai

اک میں ہی نہیں اس پر قربان زمانہ ہے
جو رب دو عالم کا محبوب یگانہ ہے

کل جس نے ہمیں پُل سے خود پار لگانا ہے
زہرہ کا وہ بابا ہے سبطین کا نانا ہے

اُس ہاشمی دولہا پر کونین کو میں واروں
جو حُسن و شمائل میں یکتائے زمانہ ہے

عزت سے نہ مر جائیں کیوں نام محمد پر
ہم نے کسی دن یوں بھی دنیا سے تو جانا ہے

آو در زہرہ پر پھیلائے ہوئے دامن
ہے نسل کریموں کی لجپال گھرانہ ہے

ہوں شاہ مدینہ کی میں پشت پناہی میں
کیا اس کی مجھے پرواہ دشمن جو زمانہ ہے

یہ کہ کے در حق سے لی موت میں کچھ مہلت
میلاد کی آمد ہے محفل کو سجانا ہے

قربان اُس آقا پر کل حشر کے دن جس نے
اَس اُمت عاصی کو کملی میں چھپانا ہے

سو بار اگر توبہ ٹوٹی بھی تو حیرت کیا
بخشش کی روائت میں توبہ تو بہانہ ہے

ہر وقت وہ ہیں میری دُنیائے تصور میں
اے شوق کہیں اب تو آنا ہے نہ جانا ہے

پُر نور سی راہیں ہیں گنبد پہ نگاہیں ہیں
جلوے بھی انوکھے ہیں منظر بھی سہانا ہے

ہم کیوں نہ کہیں اُن سے رُو داد الم اپنی
جب اُن کا کہا خود بھی اللہ نے مانا ہے

محروم کرم اَس کو رکھیئے نہ سرِ محشر
جیسا ہے نصیر آخر سائل تو پُرانا ہے

Naseer ud Din Naseer
نصیر الدین نصیر

Jo Bane Aaina Woh Tera Tamasha Daikhe

Jo Bane Aaina Woh Tera Tamasha Daikhe
Apni Soorat mein Tere Husn Ka Jalwa Daikhe

جو بنے آئینہ وہ تیرا تماشا دیکھے
اپنی صورت میں تیرے حسن کا جلوہ دیکھے

ہائے کس طرح تجھے عاشق شیدا دیکھے
تیرا سایہ بھی نہیں ہے جو سایہ دیکھے

تیری شانیں ہیں ہزاروں ،تیرے جلوے ہیں لاکھوں
دو ہی آنکھیں ہوں ملیں جس کو وہ کیا کیا دیکھے

قیس کو ہوش نہیں لب پہ انا لیلیٰ ہے
اپنے دیوانے کو آ کر ذرا لیلیٰ دیکھے

دیکھنے والے تیرے دیکھتے ہیں یوں تجھ کو
جیسے دریا کی طرف پیاس کا مارا دیکھے

کیا سمجھ رکھا ہے اللہ کو تو نے اکبر
آنکھیں کھولے ہوئے بیٹھا ہے کہ جلوہ دیکھے

شاہ اکبر دانا پوری

Hazrat Syed Shah Muhammad Akbar Danapuri

Thanks to Syed Zeeshan Khalid for Sharing and correction.

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway
jiss dam naal asanjh hai asan ku, o dam nazar na aaway

Galiaan sunjiaan ujaar disan mai ku, veyrra khawan aaway
Ghulam farida othan ki wasna jithan yaar nazar na aaway

اُجیاں لمیاں لال کھجوراں تہ پتر جنہاں دے ساویں
جس دم نال سانجھ ہے اساں کوں او دم نظر نہ آوے
گلیاں سنجیاں اُجاڑ دسن میں کو ،ویڑا کھاون آوے
غلام فریدا اُوتھے کی وسنا جتھے یار نظرنہ آوے

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway
nangay pinday mainu chamkaan maaray, mery ronday nain nimany
jinnain tann mery ty laggian ,tanu ik laggay ty tu jaany
ghulam farida dil othy diye jithy agla kadar wi janay

اُجیاں لمیاں لال کھجوراں تہ پتر جنہاں دے ساویں
ننگے پنڈے مینوں چمکن مارے، میرے روندے نیں نین نمانے
جنیاں تن میرے تے لگیاں ، تینوں اک لگے تے توں جانے
غلام فریدا دل اُوتھے دیئیے جتھے اگلا قدر وی جانے

Andron he andron wagda rehnda, paani dard hayati da
sadi umran tu wi lambi umr wy teri, haali na was wy kaaliya
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

اندروں ہی اندروں وگدا رہندا ،پانی درد حیاتی دا
ساڈی عمراں تو وی لمبی عمر وے تیری،ہالے ناں وس وے کالیا
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

Pardes gayon pardesi hoyon, ty nit watna munh morran
kamli kr k chorr ditto, ty main bathi kakh galiaan ty roolan
Ghulam farida main ty dozakh sarsan, jy main mukh mahi walon moran
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

پردیس گیوں پردیسی ہویوں تے نت وٹناں منہ موڑاں
کملی کر کہ چھوڑ دیتو ،تہ میں بیٹھی خاک گلیاں تے رو لاں
غلام فریدا میں تے دوزخ سرساں جے میں مکھ ماہی ولوں موڑاں
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

izrael aaya lain sassi di jaan hai,
Jaan sassi wich nazar na aaondi
o ty ly gaya kaich da khan hai
kismay aye, Quran aye.
Andron he andron wagda rehnda, paani dard hayati da
sadi umran tu wi lambi umr wy teri, haali na was wy kaaliya
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

عزرایل آیا لین سسی دی جان ہے
جان سسی وچ نظر نہ آوندی
او تے لے گیا کیچ دا خان ہے
قسم قرآن ہے
اندروں ہی اندروں وگدا رہندا ،پانی درد حیاتی دا
ساڈی عمراں تو وی لمبی عمر وے تیری،ہالے ناں وس وے کالیا
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

Thanks to Asifa Mumtaz for Sharing

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Char Yaar Rasool Dai Char Gohar Ek Thi Ek Charheendray Nain

Char Yaar Rasool Dai Char Gohar Ek Thi Ek Charheendray Nain

چار یار رسول دے چار گوہر سبّھے اِک تھیں اک چَڑہیندڑے نیں
ابوبکرؓ  تے عمرؓ عثمانؓ علیؓ آپو اپنے گُنیں سوہندڑے نیں
جنہاں صِدق یقین تحقیق کِیتا راہ رب دے سِیس وکنیدڑے نیں
ذوق چھڈ کے جنہاں نے زُہد کِیتا واہ واہ اُوہ رب دے بنّدڑے نیں

حضورؐ کے چار یار چار گوہر ہیں،ہر ایک ایک سے بڑھ کر ہے
ابو بکرؓ و عمرؓ و عثمانؓ و علیؓ کے اوصاف حمیدہ بہت خوب ہیں
جنہوں نے صدق دل سے تحقیق کی وہ رب کے سرفروش کہلائے
اجروثواب کے لالچ کے بغیرجو عبادت کرتے ہیں وہی رب کے مقبول بندے ہیں

سید وارث شاہ
Waris Shah

Sey Rozay Sey Nafal Namazan Sey Sajday Ker Ker Thakey Ho

Sey Rozay Sey Nafal Namazan Sey Sajday Ker Ker Thakey Ho

سے روزے سے نفل نمازاں ، سے سجدے کر کر تھکّے ہو
سے واری مکے حج گزارن دل دی دوڑ نہ مکّے ہُو
چلے چلیئے ،جنگل بھوناں ، اس گل تھیں نہ پکے ہُو
سبھے مطلب حاصل ہوندے باہو جد پیر نظر اک تکے ہُو

سینکڑوں روزے ،ہزاروں نوافل اور سجدے کر کر تھک گئے
سو بار مکے جا کر حج بھی کیا مگر دل بے قرار کی بھاگ دوڑ ختم نہ ہوئی
چلّے کئے ، جنگل گھومے لیکن مراد حاصل نہ ہوئی
باہو سارے مطلب حاصل ہو جاتے ہیں جب پیر اک نظر دیکھتا ہے

Sultan Bahu
حضرت  سلطان  باہو

Doee Naat Rasool Maqbool Waali Jeen Dai Haq Nazool Lolak Keeta

Doee Naat Rasool Maqbool Waali Jeen Dai Haq Nazool Lolak Keeta

دوئی نعت رسول مقبول والی جیں دے حق نزُول لولاک کِیتا
خاکی آکھ کے مرتبہ وَڈا دِتّا سبھ خلق دے عیب تھِیں پاک کِیتا
سرور ہوئے کے اَولیاں انبیاں دا اگّے حق دے آپ نُوں خاک کِیتا
کرے اُمتی اُمتی روز محشر خوشی چَھڈ کے جیئو غمناک کِیتا

دوسرے درجے پر رسول مقبول کی تعریف کریں جن کے لئے حدیث لولاک آئی
لولاک لما خلقت الا فلاک اے محمد اگر آپ نہ ہوتے توہم زمین و آسماں پیدا نہ کرتے
آپ کو خاکی کہ کر مرتبہ بہت بڑا دیا اور جملہ خلق کے عیبوں سے پاک رکھا
آپؐ نے انبیا و اولیا کا سردار ہونے کے باوجود رب کی بارگاہ میں خود کو عاجز رکھا
روز محشر اُپؐ امتی امتی پکاریں گے اپنی خوشی بھول کر بیقرار اور مضطر ہوں گے

سید وارث شاہ
Waris Shah

Man Ke Basham Az Bahar e Jalwa e Dildar Mast

Man Ke Basham Az Bahar e Jalwa e Dildar Mast
Choon Maney Naid Nazar Dar Khana Khumaar Mast

 

 من کہ باشم از بہار جلوہ دلدار مست
چون منے ناید نظر در خانہ خمار مست

میں تو دلدار کے جلوے کی بہار سے مست ہوں
میخانے میں میری طرح کا مست نظر نہیں آتا

مے نیاید در دلش انگار دنیا ہیچ گاہ
زاہدا ہر کس کہ باشد از ساغر سرشار مست

شراب کے آنے سے دل میں دنیا کی قدر ختم جاتی ہے
اے زاہد جو کوئی بھی ساغر سرشار سے مست ہو

جلوہ مستانہ کر دی دور ایام بہار
شد نسیم و بلبل و نہر و گلزار مست

تو نے بہار کے دنوں میں اپنا جلوہ مستانہ دکھایا
جس کی وجہ سے ہوا و بلبل ، نہر و پھول و باغ سبھی مست ہو گئے

من کہ از جام الستم مست ہر شام کہ سحر
در نظر آید مرا ہر دم درو دیوار مست

میں تو روز ازل سے جام الست سے مست ہوں اور ہر صبح و شام
درودیوار ہر لمحے مجھے مست نظر آتے ہیں

چون نہ اندر عشق او جاوید مستیہا کنیم
شاہد مارا بود گفتار و ہم رفتار مست

میں کیوں اس کے عشق میں مستیاں نہ کروں
جب کہ محبوب کہ رفتار و گفتار دونوں ہی مست ہیں

تا اگر راز شما گوید نہ کس پروا کند
زین سبب باشد شمارا محرم اسرار مست

اگر راز کو ظاہر کر بھی دیا جائے تو پروا نہیں
کیونکہ محرم راز بھی مست ہے

غافل از دنیا و دین و جنت و نار است او
در جہان ہر کس کہ میباشد قلندر وار مست

وہ دنیا و دین و جنت و دوزخ سے بے پرواہ ہوتا ہے
جو کوئی بھی اس جہان میں قلندر کہ طرح مست ہو

دیوان  بو علی قلندر
Deewan Bu Ali Qalandar