Man Shab e Siddique Ra Deedum b’Khawab

خلاصہ مطالبِ مثنوی
در تفسیر سورہَ اخلاص

قل ھواللہ احد
کہہ دو وہ اللہ ایک ہے

Man Shab e Siddque Ra Deedum b’Khawab
Gul Z Khak e Raah e Oo Cheedam b’Khawab

من شبے صدیق را دیدم بخواب
گل زِ خاک راہِ اُو چیدم بخواب

ایک رات میں نے خواب میں حضرت ابو بکر صدیق کو دیکھا
آپ کے راستے کی خاک سے میں نے خواب میں پھول چنے

آں امن الناس بر مولائے ما
آں کلیم اوّل سینائے ما

آپ سب سے زیادہ احسان کرنے والے ہمارے مولا ہیں
آپ ہمارے طور(نبی کریم ؐ ) کے پہلے کلیم ہیں

ہمت اُو کشت ملت را چو ابر
ثانی اسلام و غار و بدر و قبر

آپ کی ہمت امت کی کھیتی کے لئے بادل کی مانند ہے
آپ ثانی اسلام و غار وبدر و قبر ہیں

گفتمش اے خاصہَ خاصانِ عشق
عشقِ تو سرِ مطلعِ دیوانِ عشق

میں نے آپ سے کہا کہ آپ عشق کے خاصوں سے بھی خاص ہیں
آپ کا عشق دیوان عشق کا پہلا شعر ہے

پختہ از دستت اساسِ کار ما
چارہ ے فرما پے آزارِ ما

آپ کے ہاتھوں سے ہمارے کاموں کی بنیاد مضبوط ہوئی
آپ ہمارے دکھ درد کا علاج فرمائیں

گفت تاکہ ہوس گردی اسیر
آب و تاب از سورہ اخلاص گیر

حضرت صدیق نے فرمایا کہ کب تک اُمت حرص و ہوس میں مبتلا رہے گی
اس اُمت کو سورہ اخلاس سے چمک دمک حاصل کرنی چاہیے

ایں کہ در صد سینہ پیچد یک نفس
سرے از اسرارِ توحید است و بس

یہ جو ہزاروں سینوں میں ایک ہی طرح سے سانس چل رہا ہے
یہ توحید کے رازوں میں سے ایک راز ہے

رنگ اُو برکن مثالِ او شوی
در جہاں عکس جمال او شوی

اس جہاں میں تو اس کے رنگ کو اختیار کر کے اس کی مانند ہو جا
اس جہاں میں اُس کے جمال کا عکس بن جا

آنکہ نامِ تو مسلماں کردہ است
اذ دوئی سوے یکی آورہ است

وہ ذات کہ جس نے تیرا نام مسلماں رکھا ہے
وہ تجھے دوئی سے وحدت کی طرف لائی ہے

خویشتن را ترک و افغان خواندہ ای
وائے بر تو آنچہ بودی ماندہ ای

تو خود کو ترک اور افغان کہلانا پسند کرتا ہے
افسوس تجھ پر کہ تو جو تھا اب نہیں ہے

وارہاں نامیدہ را از نامہا
ساز با خم در گذر از جامہا

تو اس قوم کو اتنے سارے ناموں سے نجات دلا
تو صراحی سے موافقت کر اور پیالوں سے جان چھڑا

اے کہ تو رسواے نام افتادہ عی
از درخت خویش خام افتادہ ای

اے کہ تو (قوم) اتنے سارے ناموں کی وجہ سے رسوا ہو گئی ہے
اور اپنے درخت سے کچے پھل کی طرح گر گئی ہے

با یکی ساز از دوئی بردار رخت
وحدت خود را مگرداں لخت لخت

تو توحید سے تعلق جوڑ اور دوئی کو رخصت کر دے
اپنی وحدت کو اس طریقے پر ٹکڑے ٹکڑے نہ کر

اے پرستار یکی گر تو توئی
تا کجا باشی سبق خوانِ دوئی

اے ایک کے پوچنے والے اگر تو تو ہے
تو کب تک دوئی کا سبق پڑھتا رہے گا

تو درِ خود را بخود پوشیدہ ای
در دل آور آنچہ بر لب چیدہ ای

تو نے اپنا دروازہ اپنے اوپر خود بند کر لیا ہے
تو جو زبان سے کہتا ہے دل سے بھی ادا کر

صد ملل از ملتے انگیختی
برحصارِ خود شبخوں ریختی

تو نے ایک ملت کی سو ملتیں بنا لیں ہیں
اپنے قلعے پر خود ہی شب خوں مارا ہے

یک شو و توحید را مشہود کن
غائبش را از عمل موجود کن

ایک ہو جا اور توحید کا اظہار کر دے
اپنے عمل سے غائب کو موجود کر دے

لذتِ ایماں فزاید در عمل
مردہ آں ایماں کہ ناید در عمل

ایمان کی لذت عمل کرنے سے بڑھتی ہے
مردہ ہے ایمان جس میں عمل نہ ہو

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Jahan Az Ishq o Ishq Az Seena Tust

Jahan Az Ishq o Ishq Az Seena Tust

جہان از عشق و عشق از سینہ تست
سرورش از مے دیرینہ تست
جز ایں چیزے نمی دانم ز جبریل
کہ او یک جوہر از آینہ تست

یہ دنیا عشق کی بدولت ہے اور عشق آپؐ کے سینہ(دل) مبارک سے ہے
عشق کا سرور آپؐ کی پرانی شراب (توحید و معرفت)کے طفیل ہے
میں جبریل کے بارے میں فقط اتنا جانتا ہوں کہ وہ
آپؐ کہ آئینہ کی ایک چمک ہے
یعنی جبریل بھی حضورؐ کے نور کے طفیل معرض وجود میں آئے

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Na Az Saaqi Na Az Paimana Guftam Hadees Ishq Be Bakana Guftam

Na Az Saaqi Na Az Paimana Guftam Hadees Ishq Be Bakana Guftam

نہ از ساقی نہ از پیمانہ گفتم
حدیث عشق بے باکانہ گفتم

میں نے نہ تو ساقی اور نہ ہی پیمانے کی بات کی جیسے کے عام شعرا کرتے ہیں
بلکہ عشق کی باتیں کھل کھلا کہ نڈر ہو کر کی ہیں

شنیدم آنچہ از پاکانِ اُمت
ترا با شوخی رندانہ گفتم

جو کچھ کہ میں نے اس اُمت کے پاک لوگوں سے سنا
تیرے لئے رندانہ شوخی لئے شاعری میں بیان کر دیا

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Best Poetry of Allama Iqbal

Best Poetry of Allama Iqbal

علامہ اقبال ایک سچے عاشق رسول نہائت خوبی سے حضور کی شان بیان کر گئے ہیں

در دل مسلم مقام مصطفیٰ است
آبروئے ما زِ نام مصطفیٰ است

مسلمانوں کے دلوں میں حضور کا مقام ہے
ہم مسلمانوں کی عزت و آبرو حضورؐ کے نام کی بدولت ہے

طور موجے از غبار خانہ اش
کعبہ را بیت الحرم کاشانہ اش

کوہ طور تو آپ کے مبارک گھر کی گرد کی لہر ہے
کعبہ کے لئے آپ کا کاشانہ مبارک بیت الحرام کی مانند ہے

کمتر از آنے ز اوقاتش، ابد
کاسب افزائش از ذاتش ابد

ابد جس کی انتہا نہیں آپؐ کے مبارک اوقات کے ایک پل سے بھی کم ہے
ابد کی افزائش بھی آپ کی ذات گرامی کے طفیل ہے

Asrar o Ramooz
اسرار و رموز
——————————————————————
مسلماں آں فقیر کج کلاہے
رمید از سینہ او سوز آہے
دلش نالد چرا نالد؟ نداند
نگاہے یا رسول اللہ نگاہے

مسلماں جو کہ اپنی فقیری میں بے پرواہ تھا
اس کا سینہ سوز و گداز کی آہ سے خالی ہو گیا ہے
اس کا دل روتا ہے مگر رونے کا سبب نہیں معلوم
ایسے حال میں یارسول اللہ آپ ہی کچھ نظر کرم کریں

Armaghan Hijaz
ارمغان حجاز
——————————————————————-
شبے پیش خدا بگریستم زار
مسلماناں چرا زارند و خوارند
ندا آمد نمی دانی کہ ایں قوم
دلے دارند و محبوبے ندارند

ایک رات خدا کے حضور بہت رویا
کہ مسلمان ذلیل و خوار کیوں ہیں
صدا آئی کہ تو نہیں جانتا کہ یہ قوم
دل تو رکھتی ہے محبوب(حضورؐ) نہیں رکھتی

Armaghan Hijaz
ارمغان حجاز

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Ae Ke Bashi Dar Pe Kasb e Uloom

Ae Ke Bashi Dar Pe Kasb e Uloom
Ba Tu me Goium Payam Pir e Room

علامہ اقبال نے خوبصورت اشعار کی صورت میں حضرت مولانا روم کا مشہور واقعہ قلمبند کیا ہے
جس کے بعد آپ نے درس و تدریس کو چھوڑ کر حضرت شمس تبریزی کی صحبت اختیار کر لی

اے کہ باشی در پے کسب علوم
با تو می گویم پیام پیر روم

اےکہ تو علم حاصل کرنے میں مصروف ہے
کیا تو نے پیر روم کا پیغام بھی سنا ہے

“علم را بر تن زنی مارے بود
علم را بر دل زنی یارے بود”

مولانا روم کہتے ہیں کہ
علم کو اگر بدن پر لگایا جائے تو یہ سانپ بن جاتا ہے
لیکن علم کو اگر دل سے جوڑا جائے تو یہ یار بن جاتا ہے

آگہی از قصہ اخوند روم
آں کہ داد اندر حلب درس علوم

تو مولاناروم  کے قصے سے تو واقف ہے
وہ جو روم کہ شہر حلب مین علوم کا درس دیا کرتے تھے

پائے در زنجیر توجیہات عقل
کشتیش طوفانی طلمات عقل

اُن کے پاؤں عقل کی زنجیروں میں جکڑے ہوئے تھے
اُن کی کشتی عقل کی تاریکیوں اور طوفانوں میں گھری ہوئی تھی

موسی ے بیگانہ سینائے عشق
بے خبر از عشق او از سودائے عشق

وہ ایسے موسی تھے جو عشق کے طور سے نا واقف تھا
عشق اور عشق کے طور اطوار سے بے خبر تھے

از تشکک گفت و از اشراق گفت
وز حکم صد گوہر تابندہ سفت

وہ تشکک اور اشراق جیسے  فلسفہ کے موضوعات پر گفتگو فرماتے
علوم کے موتی پروتے اور اس کے حصول پر زور دیتے تھے

عقدہائے قول مشائیں کشود
نور فکرش ہر خفی را وا نمود

اُنہوں نے بہت سے پیچیدہ مسائل کی گھتیاں سلجھائیں
اپنے نور فکر سے علم کا حصول ہر خاص و عام پر آسان کر دیا

گرد و پیشش بود انبار کتب
بر لب او شرح اسرار کتب

اُن کے گرد ہر وقت کتابوں کا ڈھیر ہوتا
ان کے ہونٹوں پر ہر وقت کتابوں کی تشریحات ہوتیں تھیں

پیر تبریزی ز ارشاد کمال
جست راہ مکتب مُلا جلال

حضرت شمس تبریزی اپنے مرشد کے حکم پر
مولاناجلال الدین رومی کے مدرسے پر آئے

گفت “ایں غوغا و قیل و قال چیست
ایں قیاس و وہم و استدلال چیست؟”

کہا کہ یہ شورو شرابہ اور غل غپاڑہ کیا ہے؟
یہ وہم و قیاس ،شک شبہ ،سمجھنا کیا ہے؟

مولوی فرمود “ناداں لب بہ بند
بر ملاقات خرد منداں مخند

مولانا روم نے کہا کہ مولوی چپ ہو جا
تو عقل مندوں کی باتوں کا مذاق نہ اُڑا

پائے خویش از مکتبم بیروں گذار
قیل و قال است ایں ترا باوے چہ کار؟

تو اُلٹے پاؤں میرے مدرسے سے نکل جا
میر ے قول و فعل سے تیرا کوئی لینا دینا نہیں

قال ما از فہم تو بالا تر است
شیشہ ادراک را روشن گر است”
میری باتیں تیری عقل سے اونچی ہیں
یہ عقل کے شیشے کو روشن کرتیں ہیں

سوز شمس از گفتہ ملا فزود
آتشے از جان تبریزی کشود
شمس تبریزی کے سوز کی گرمی مولانا کی باتوں سے بڑھ گئی
ان کی جان میں چھپی آگ ظاہر ہو گئ

بر زمیں برق نگاہ او فتاد
خاک از سوز دم او شعلہ زاد

اُنہوں نے جلال سے بھری آنکھ زمیں پہ ڈالی
ان کے پھونک سے مٹی شعلہ بن گئی

آتش دل خرمن ادراک سوخت
دفتر آں فلسفی را پاک سوخت

دل کی آگ نے عقل و فہم و ادراک کا کھلیان جلا دیا
اس فلسفی کا دفتر جل کر راکھ ہو گیا

مولوی بیگانہ از اعجاز عشق
ناشناس نغمہائے ساز عشق

مولانا روم جو کہ اُس وقت تک عشق کی کرامتوں سے نا واقف تھے
اور عشق کے نغموں اور رازوں سے بھی بے خبر تھے

گفت: “ایں آتش چساں افروختی
دفتر ارباب حکمت سوختی”

بولے کہ تو نے یہ آگ کیسے جلا لی
تو نے ارباب علم و حکمت کا نایاب خزانہ جلا ڈالہ

گفت شیخ اے مسلم زنار دار
ذوق و حال است ایں ترا باوے چہ کار

شمس تبریز بولے کہ اے بظاہر مسلم مگر عملا انکاری
یہ ذوق و شوق اور عشق کی گرمی کہ باعث ہے لیکن تیرا اس سے کوئی کام نہیں

حال ما از فکر تو بالا تر است
شعلہ ما کیمائے احمر است

میرا حال تیری سمجھ سے بالا تر ہے
میرا شعلہ پارس پتھر سونا ہے

Allama Iqbal
علامہ اقبال

—————————————————————
Molvi Hargiz Na Shud Maula E Rum
Ta Ghulam e Shams Tabraizi Na Shud

مولوی ہرگز نہ شد مولائے روم
تا غلام شمس تبریزی نہ شد
مولانا روم اپنے بارے میں کہتے ہیں کہ میں فقط مولوی تھا
مگر جب حضرت شمس تبریزی کا غلام ہوا تو روم کا سردار ہو گیا۔

—————————————————————

اس واقعہ کے بارے میں حکائت ہے کہ حضرت شمس تبریزی نے حضرت مولانا روم کی کتب پانی کے تالاب میں ڈال دی تھیں۔پھر جب مولانا روم برہم ہوئے تو آپ نے تالاب سے خشک کتابیں نکال دیں۔یہ کرامت دیکھ کہ مولانا روم آپ کے گرویدہ و مرید ہو گئے

Utho Meri Duniya Ke Ghareebon Ko Jaga Do

Utho Meri Duniya Ke Ghareebon Ko Jaga Do

اٹھو میری دنیا کے غریبوں کو جگا دو
کاخِ اُمرا کے در و دیوار ہلا دو

Get up wake the poor people of my world
Shake the walls and windows of Rich people palaces

گرماؤ غلاموں کا لہو سوز یقیں سے
کُنجکشکِ فرومایہ کو شاہیں سے لڑا دو

Warm the blood of slaves with faith of hope
Prepare fearful sparrow to fight with the Falcon

جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہیں روزی
اس کھیت کے ہر خوشہ گندم کو جلا دو

A field from where the farmers are not getting sustenance
Burn every grain of wheat from that field

سلطانیء جمہور کا آتا ہے زمانہ
جو نقش کہن تم کو نظر آے مٹا دو

Approching is the time for poors to rule
Erase every impression of the past rulers

کیوں خالق و مخلوق میں حائل رہیں پردے
پیران کلیسا کو کلیسا سے اُٹھا دو

Why are there veils between the Creator and Creation
Push away the saints from the Church who misguide

حق را بسجودے،صنماں بطوافے
بہتر ہے چراغ حرم و دَیر بجھا دو

Prostration is being held for God , Idols are being encircled
It is better to unlit the lamp of Masjid and Temple

میں ناخوش و بیزار ہُوں مَرمَر کی سِلوں سے
میرے لئے مٹی کا حرم اور بنا دو

I am unpleased with the Marble tiles
Build for me a Mosque from the mud

تہزیب نوی کارگہِ شیشہ گراں ہے
آداب جنوں شاعرِ مشرِق کو سکھا دو

New civilization is build up from glass work
Teach ethics of devotion to the poet of east

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Man Banda e Azadam Ishq Ast Imam Man

Man Banda e Azadam Ishq Ast Imam Man
Ishq Ast Imam Man Aqal Ast Ghulam Man

من بندہ آزادم عشق است امام من
عشق است امام من عقل است غلام من

میں آزاد بندہ ہوں،عشق میرا امام ہے
عشق  میرا امام ہے اور عقل میری غلام ہے

ہنگامۂ ایں محفل از گردش جام من
ایں کوکب شام من ایں ماہ تما م من

اس محفل کا شور اصل میں میرے جام کی گردش کے باعث ہے
یہ چاند اور ستارہ میری شام کے لئے ہیں

جاں در عدم آسودہ بے ذوق تمنا بود
مستانہ نواہازد در حلقہ دام من

روح عدم میں آرزو و تمنا کے ذوق سے خالی تھی
جب وہ میرے قالب میں آئی تو مستانے ساز و نغمے چھڑے

اے عالم رنگ و بو ایں صحبت ما تا چند
مرگ است دوام تو عشق است دوام من

اے جہان یہ تیر ی میری صحبت کب تک باقی ہے
تجھے تو  موت آجانی ہے اور مجھے عشق کی بدولت بقاو دوام حاصل ہے

پیدا بضمیرم او پنہاں بضمیرم او
ایں است مقام او دریاب مقام من

وہ میرے باطن میں پوشیدہ بھی ہے ظاہر بھی ہے
یہ تو اُس کا مقام ہے ، اب میرا مقام دریافت کر

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Beeni Jahan Ra Khud Ra Na Beeni

Beeni Jahan Ra Khud Ra Na Beeni
Ta Chand Nadaan Ghafil Nasheeni

بینی جہاں را خود را نہ بینی
تا چند ناداں غافل نشینی

تو جہان کو دیکھتا ہے ، اپنے آپ کو نہیں دیکھتا
اے نا سمجھ تو کب تک غفلت میں بیٹھا رہے گا

نور قدیمی شب را بر افروز
دست کلیمی در آستینی

تو ایک قدیم نور ہے، رات کو روشن کر
تیری آستین میں تو کلیم کا ہاتھ ہے

بیروں قدم نہ از دورِ آفاق
تو پیش آزینی تو بیش ازینی

تو اس کائنات سے باہر قدم رکھ
تو اس سے آگے کی چیز ہے تری قدروقیمت بھی اس سے زیادہ ہے

از مرگ ترسی اے زندہ جاوید؟
مرگ است صیدے تو در کمینی

کیا تو موت سے ڈرتا ہےاے ہمیشہ رہنے والے
موت تو خود تیری کمین گاہ کا شکار ہے

جانے کہ بخشند دیگر نگیرند
آدم بمیرد از بے یقینی

زندگی (جان)تو خدا کا عطیہ ہے جو واپس نہیں لیا جاتا
آدمی تو اپنی بے یقینی کی وجہ سے مر جاتا ہے

صورت گری را از من بیا موز
شاید کہ خود را باز آفرینی

مجھ سے مصوری کا فن سیکھ
عجب نہیں کہ تو اپنے آپ کو تعمیر کر لے

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Een Hum Jahaney Aan Hum Jahaney

Een Hum Jahaney Aan Hum Jahaney
Een Baekaraney Aan Baekaraney

ایں ہم جہانے آں ہم جہانے
ایں بیکرانے آں بیکرانے

یہ دنیا بھی ایک جہان ہے،آخرت بھی ایک جہان ہے
یہ بھی بیکراں ہے ، وہ بھی لا محدود ہے

ہر دوخیالے ہر دو گمانے
از شعلۂ من موج دخانے

دونوں ہی خیال ہیں ، دونوں ہی قیاس ہیں
میرے شعلے کے دھویئں کی لہریں ہیں

ایں یک دو آنے آں یک دو آنے
من جاودانے ، من جاودانے

یہ بھی ایک دو پل ہے ، وہ بھی ایک دو پل (عارضی)ہے
میں جاوداں ہوں ، مجھے بقا حاصل ہے

ایں کم عیارے آں کم عیارے
من پاک جانے نقد روانے

یہ بھی کم قیمت ہے ، وہ بھی بے قدر ہے
میں پاک جان کھری نقدی سکہ ہوں

ایں جا مقامے آں جا مقامے
ایں جا زمانے آں جا زمانے

ادھر بھی کچھ وقت کے لئے مقیم ہوں اُدھر بھی وقتی پڑاؤ ہے
یہاں بھی کچھ پل ہیں وہاں بھی کچھ پل ہیں

ایں جا چہ کارم آں جا چہ کارم؟
آہے فغانے آہے فغانے

دونوں جہانوں میں میرا کیا کام ہے
سوائے عشق میں آہ و فغاں کرنا

ایں رہزنِ من آں رہزنِ من
ایں جا زیانے آں جا زیانے

یہ بھی لٹیری ہے وہ بھی لٹیری ہے
یہاں بھی نقصان ہے وہاں بھی گھاٹا ہے

ہر دو فروزم ہر دو بسوزم
ایں آشیانے آں آشیانے

میں دونوں کو جلا بخشتا ہوں،روشن کرتا ہوں
چاہے یہ آشیاں ہو چاہے وہ ٹھکانا ہو

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Tu Rah Naward e Shouq Hai Manzil Na Kar Qabool

Tu Rah Naward e Shouq Hai Manzil Na Kar Qabool
Laila Be Hum Nasheen Ho to Mahmil Na Kar Qabool

تو رہ نوردِ شوق ہے منزل نہ کر قبول
لیلیٰ بھی ہم نشیں ہو تو محمل نہ کر قبول

اے جوئے آب بڑھ کے ہو دریائے تندو تیز
ساحل تجھے عطا ہو تو ساحل نہ کر قبول

کھویا نہ جا صنم کدۂ کائنات میں
محفل گداز گرمی ٔ محفل نہ کر قبول

صبح ازل یہ مجھ سے کہا جبرئیل نے
جو عقل کا غلام ہو وہ دل نہ کر قبول

باطل دوئی پسند ہے حق لا شریک ہے
شرکت میانہ ء حق و باطل نہ کر قبول

Allama Iqbal
علامہ ا قبال