Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway
jiss dam naal asanjh hai asan ku, o dam nazar na aaway

Galiaan sunjiaan ujaar disan mai ku, veyrra khawan aaway
Ghulam farida othan ki wasna jithan yaar nazar na aaway

اُجیاں لمیاں لال کھجوراں تہ پتر جنہاں دے ساویں
جس دم نال سانجھ ہے اساں کوں او دم نظر نہ آوے
گلیاں سنجیاں اُجاڑ دسن میں کو ،ویڑا کھاون آوے
غلام فریدا اُوتھے کی وسنا جتھے یار نظرنہ آوے

Ochiaan lamiaan laal khajooran ty pattar jinhan dy saway
nangay pinday mainu chamkaan maaray, mery ronday nain nimany
jinnain tann mery ty laggian ,tanu ik laggay ty tu jaany
ghulam farida dil othy diye jithy agla kadar wi janay

اُجیاں لمیاں لال کھجوراں تہ پتر جنہاں دے ساویں
ننگے پنڈے مینوں چمکن مارے، میرے روندے نیں نین نمانے
جنیاں تن میرے تے لگیاں ، تینوں اک لگے تے توں جانے
غلام فریدا دل اُوتھے دیئیے جتھے اگلا قدر وی جانے

Andron he andron wagda rehnda, paani dard hayati da
sadi umran tu wi lambi umr wy teri, haali na was wy kaaliya
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

اندروں ہی اندروں وگدا رہندا ،پانی درد حیاتی دا
ساڈی عمراں تو وی لمبی عمر وے تیری،ہالے ناں وس وے کالیا
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

Pardes gayon pardesi hoyon, ty nit watna munh morran
kamli kr k chorr ditto, ty main bathi kakh galiaan ty roolan
Ghulam farida main ty dozakh sarsan, jy main mukh mahi walon moran
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

پردیس گیوں پردیسی ہویوں تے نت وٹناں منہ موڑاں
کملی کر کہ چھوڑ دیتو ،تہ میں بیٹھی خاک گلیاں تے رو لاں
غلام فریدا میں تے دوزخ سرساں جے میں مکھ ماہی ولوں موڑاں
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

izrael aaya lain sassi di jaan hai,
Jaan sassi wich nazar na aaondi
o ty ly gaya kaich da khan hai
kismay aye, Quran aye.
Andron he andron wagda rehnda, paani dard hayati da
sadi umran tu wi lambi umr wy teri, haali na was wy kaaliya
umran laagian pabhan paar ,umran laagian pabhan paar

عزرایل آیا لین سسی دی جان ہے
جان سسی وچ نظر نہ آوندی
او تے لے گیا کیچ دا خان ہے
قسم قرآن ہے
اندروں ہی اندروں وگدا رہندا ،پانی درد حیاتی دا
ساڈی عمراں تو وی لمبی عمر وے تیری،ہالے ناں وس وے کالیا
عمراں لنگھیاں پھباں پار،عمراں لنگھیاں پھباں پار

Thanks to Asifa Mumtaz for Sharing

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Asan So Bad Mast Qalandar houn

Asan So Bad Mast Qalandar houn
Kadin Masjid Houn Kadi Mandir Houn

اساں سو بد مست قلندر ہوں
کڈیں مسجد ہوں کڈیں مندر ہوں

ہم وہ سرقسمت قلندر ہیں جو
کبھی مسجد میں ہیں کبھی مندر میں ہیں

کڈیں چور بنوں کڈیں جار بنوں
کڈیں توبہ استغفار بنوں
کڈیں زہد عبادت کار بنوں
کڈیں فسق فجوریں اندر ہوں

کبھی چور بنیں بدکار بنیں
کبھی توبہ اسغفار کہیں
کبھی زاہد عابد نیک بنیں
کبھی فسق فجور کے اندر ہیں

کِتھاں درد کِتھاں درمان بنوں
کتھاں مصر کتھاں کنعان بنوں
کتھاں کیچ بھنبھور دا شان بنوں
کتھاں واسی شہر جلندر ہوں

کہیں درد کہیں درمان بنیں
کبھی مصر، کبھی کنعان بنیں
کہیں کیچ،بھنبھور کا شان بنیں
کبھی اندر شہر جا لندھر ہیں

کتھاں صومعہ دیر کنشت کِتھاں
کتھے دوزخ باغ بہشت کِتھاں
کتھے عاصی نیک سرشت کِتھاں
کِتھے گمرہ ہوں کِتھے رہبر ہوں

کبھی خانقاہ کبھی بت خانہ
کبھی گرجا میں کبھی مسجد میں
کبھی دوزخ میں کبھی جنت میں
کبھی عاصی ہیں کبھی زاہد ہیں
کہیں گمراہ ہیں کہیں راہبر ہیں

ہیوں او قلاش تے رند اساں
پئی نودی ہے ہند سندھ اساں
ہیوں بے شک عارف چند اساں
کل راز رموز دے دفتر ہوں

ہم تو وہ بے مایہ مست الست ہیں کہ
کائنات ہمارے سامنے سرنگوں ہے
ہم بلا شک و شبہ عارف کامل ہیں
اور اسرار و رموز الہی کے ماہر ہیں

ہن ناز نواز دے ٹول کڈیں
ہے مونجھ منجھاری کول کڈیں
رلے ڈھول کڈیں گیا رول کڈیں
کڈیں بر در ہوں کڈیں در بر ہوں

کبھی نازنیں کبھی ناز آفریں
کبھی پرحزن وملال کبھی اندوہگیں
کبھی قریب دوست کبھی بعید دوست
کبھی در پر ہیں کبھی اندر ہیں

ول واتوں سمجھ فرید الا
کر محض نہ شعر جدید ولا
ہے چالوں حال پدید بھلا
تونے کیجو سارے ابتر ہوں

فرید منہ سنبھال کر بات کر
ایسے اشعار پھر نہ کہنا
ہماری کیفیت تو ہمارے انداز سے ظاہر ہے
کیا ہوا اگر بدحال ہیں

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

ترجمہ تحقیق تصحیح
خواجہ طاہر محمود کوریجہ

Ishq Di Navio Navi Bahar

Ishq Di Navio Navi Bahar

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

جاں میں سبق عشق دا پڑھیا
مسجد کولوں جیوڑا ڈریا
ڈیرے جا ٹھاکر دے وڑیا
جتھے وجدے ناد ہَزار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

جاں میں رَمز عشق دی پائی
مَینا طوطا مار گوائی
اندر باہر ہوئی صفائی
جِت وَل ویکھاں یارو یار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

ہیر رانجھے دے ہو گئے میلے
بھُلّی مہر ڈھوڈیندی بیلے
رانجھا یار بُکّل وِچ کھیلے
مینوں سدھ رہی نہ سار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

وید قرآناں پڑھ پڑھ تھکے
سجدے کردیاں گھس گئے متھے
نہ رب تیرتھ نہ رب مکّے
جس پایا تس نور اَنوار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

پُھوک مصلّٰی بھن سٹ لوٹا
نہ پھڑ تسبیح عاصا سوٹا
عاشق کیہندے دے دے ہوکا
ترک حلالوں کھا مردار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

عمر گوائی وچ مسیتی
اندر بھریا نال پلیتی
کدے نماز توحید نہ نیتی
ہن کی کرنائیں شور پُکار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

عشق بُھلایا سجدہ تیرا
ہن کیوں اینویں پاویں جھیڑا
بلھا ہوندا چپ بتیرا
عشق کریندا مارو مار

عشق دی نوّیوں نوّیں بہار

Bulleh Shah
بلھے شاہ

ilmon Bas Kareen o Yaar Eko Alaf tere Darkar

ilmon Bas Kareen o Yaar Eko Alaf tere Darkar

علموں بس کریں او یار
اِکّو اَلف تیرے دَرکار

علم نہ آوے وچ شمار
اِکّو اَلف تیرے دَرکار
جاندی عمر نہیں اَتبار
علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ لکھ لکھ لاویں ڈھیر
ڈھیر کتاباں چار چُفیر
گردے چانن وچ اَنھیر
پچھو راہ ؟ تے خبر نہ سار

علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ شیخ مشایخ ہویا
بھر بھر پیٹ نِیندر بھر سویا
جاندی وار نین بھر رویا
ڈبا وچ اُرار نہ پار

علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ شیخ مشایخ کہاویں
الٹے مسئلے گھروں بناویں
بے علماں نوں لٹ لٹ کھاویں
چھوٹھے سچے کریں اِقرار

علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ نفل نماز گزاریں
اُچیاں بانگاں چانگاں ماریں
منبر تے چڑھ واعظ پکاریں
کیتا تینوں علم خوار

علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ مُلاں ہوئے قاضی
اللہ علماں باجھوں راضی
ہووے حرص دنوں دن تازی
تینوں کیتا حرص خوار

علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ مسئلے روز سناویں
کھانا شک شبہے دا کھاویں
دسے ہور تے ہور کماویں
اندر کھوٹ ، باہر سچیار

علموں بس کریں او یار

پڑھ پڑھ علم نجوم وَچارے
گندا راساں بُرج ستارے
پڑھے عزیمتاں منتر چھاڑے
اَبجد گنے تعویذ شمار

علموں بس کریں او یار

علموں پئے قضّئے ہور
اَکھیں والے انھّے کور
پھڑے سادھ تے چھڈے چور
دوہیں جہانیں ہویا خوار

علموں بس کریں او یار

علموں پئےہزاراں پھستے
تمبا چُک چُک منڈی جاویں
دھیلا لَے کے چُھری چَلاویں
نال قصَائیاں بوہتا پیار

علموں بس کریں او یار

بوہتا علم عزازیل نے پڑھیا
جُھگا جھاہا اوس دا سَڑیا
گل وچ طوق لعنت دا پَڑیا
آخر گیا اوہ بازی ہار

علموں بس کریں او یار

جد میں سبق عشق دا پڑھیا
دریا ویکھ وَحدت دا وڑیا
گھمن گھیراں دے وچ اَڑیا
شاہ عنائت لایا پار

علموں بس کریں او یار

بلّھا رافضی نہ ہے سنی
عالم فاضل نہ عامل جُنّی
اِکو پڑھیا علم لدّنی
واحد اَلف میم دَرکار

علموں بس کریں او یار

Bulleh Shah
بلھے شاہ

Buriyan Buriyan Buriyan Way Aseen Buriyaan Way Loka

Buriyan Buriyan Buriyan Way Aseen Buriyaan Way Loka

بُریاں،بُریاں،بُریاں وے، اَسیں بُریاں وے لوکا
بُریاں کول نہ بَہو وے
تِیراں تے تلواراں کُولوں ،تِکھیاں برہوں دیاں چُھریاں وے لوکا
لَد سجن پردیس سدھائے،اَسیں ودیاع کرکے مڑیاں وے لوکا
چے تُوں تخت ہزارے دا سائیں، اسیں سیالاں دیاں کُڑیاں وے لوکا
سانجھ پات کاہوں سَوں ناہیں،سَاجن کھوجن اَسِیں !ٹَریاں وے لوکا
جنہاں سائیں دا ناؤں نہ لِتّا، اوڑک نوں اوہ جُھریاں وے لوکا
اَساں اَوگن ہاریاں جیہے،کہے حسین فقیر سائیں دا
صاحب سیوں اَسیں جُڑیاں وے لوکا

ہم بُرے ہیں بُرے ہیں ،ہم بُرے ہیں اے لوگو
بُروں کے پاس نہ بیٹھو اے لوگو
تیروں اور تلواروں سے بڑھ کر تیز تر عشق و جدائی کی چھریاں ہیں
محبوب ہمارا پردیس چلا گیا ہے،ہم لاچار الوداع کر کے لوٹ آئے ہیں
اگر تو تخت ہزارے کا سائیں ہے تو ہم سیالوں کی باسی ہیں
صبح شام کی ہم کو خبر نہیں ہم تو محبوب کی تلاش میں دن رات سرگرداں ہیں
جنہوں نے مالک کا نام نہ لیا وہ بالاخر پچھتائیں گے
ہم جیسے گنہگاروں کے لئے حسین رب کا فقیر کہتا ہے
ہمارا تعلق تو مالک حقیقی سے چڑا ہوا ہے

شاہ حسین
Shah Hussain

Ithan Main Muthri Nit Jaan Ba Lab

Ithan Main Muthri Nit Jaan Ba Lab
Oo Taan Khush Wasda Mulk Arab

اتھاں میں مٹھڑی نت جان بہ لب
او تاں خوش وسدا وچ ملک عرب

ادھر میری جان پہ بنی ہوئی ہے
اور وہ خوش و خرم ملک عرب میں بس رہا ہے

ہر ویلے یار دی تانگھ لگی
سُنجے سینے سِک دی سانگ لگی
ڈکھی دِلڑی دے ہتھ ٹانگھ لگی
تھئے مل مل سول سمولے سب

ہر وقت محبوب کا انتظار ہے
ویران سینے میں اشتیاق کا تیر لگا ہے
دکھی دل کے ہاتھ سہارا آیا بھی تو
غموں کے ہجوم کا جو دل میں سمائے ہوئے ہیں

تتی تھی جوگن چو دھار پھراں
ہند سندھ پنجاب تے ماڑ پھراں
سنج بار تے شہر بزار پھراں
متاں یار ملم کہیں سانگ سبب

نیم جان دیوانی بن کر چاروں طرف پھرتی ہوں
ہند ،سندھ پنجاب اور ماڑ پھرتی ہوں
ویرانے اور شہر ہر جا پھرتی ہوں
کہ کہیں میرا یار کسی سبب سے مل جائے

جیں ڈینہ دا نینہ دے شینہ پُٹھیا
لگی نیش ڈکھاں دی عیش گھٹیا
سر جوبن جوش خروش ہٹیا
سُکھ سڑ گئے مر گئی طرح طرب

جس دن سے عشق کے شیر نے مجھے زخمی کیا ہے
دکھوں کے نشتر لگ رہے ہیں عیش ختم ہو گیا ہے
سر سے جوانی کا جوش و خروش اُتر گیا
سکھ ختم ہو گئے اورخوشیاں مٹ گیئں ہیں

توڑیں دھکڑے دھوڑے کھاندڑیاں
تیڈے نام تے مفت وکاندڑیاں
تیڈی باندیاں دی میں باندڑیاں
ہے در دیاں کُتیاں نال ادب

تیرے لئے دھکے اور ٹھوکریں کھاتی ہوں
تیرے نام پر بے مول بک جاتی ہوں
تیری باندیوں کے بھی باندی ہوں
تیرے در کے کتوں کا بھی ادب کرتی ہوں

واہ سوہنا ڈھولن یار سجن
واہ سانول ہوت حجاز وطن
آدیکھ فرید دا بیت حزن
ہم روز ازل دی تانگھ طلب

سبحان اللہ کیا پیارا لاڈلا محبوب ہے
اور کیا ہی پیارا حجاز کا وطن ہے
آ ذرا فرید کا غموں کا گھر تو دیکھ
مجھے تو ازل سے ہی تیرا انتظار ہے

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid


Sohne Yaar Bajhon Meri Nai Sardi

Sohne Yaar Bajhon Meri Nai Sardi

سوہنے یار باجھوں میڈی نہیں سردی
تانگھ آوے ودھدی سک آوے چڑھدی

محبوب کے بغیر میرا گزارا نہیں ہورہا
انتظاربھی دم بدم اورذوق و شوق بھی بڑھ رہا ہے

کیتا ہجر تیڈے میکوں زارو رارے
دل پارے پارے سر دھارو دھارے
مونجھ وادھو وادھے ڈکھ تارو تارے
رب میلے ماہی بیٹھی دھانہہ کر دی

تیرے جدائی مجھے زاروقطار رلا رہی ہے
دل پارہ پارہ ہے اور سر بوجھل ہے
افسردگی زوروں پر ہے اور غموں سے تار تار ہو گیا ہوں
رب مجھے اس سے ملا دے میں ہر دم یہی فریاد کر رہی ہوں

سوہنا یار ماہی کڈیں پاوے پھیرا
شالا پا کے پھیرا پچھے حال میرا
دل درداں ماری ڈکھاں لایا دیرا
راتیں آہیں بھردی ڈینہاں سولاں سڑدی

کبھی تو ادھر بھی پھیرا لگا جائے
پھیرا کر کے میرا حال پوچھ لے
دل دکھوں سے بھرا ہے غموں نے ڈیرا ڈالا ہوا ہے
رات کو آہیں بھرتیں ہوں دن کو زخموں سے چور ہوتی ہوں

پنوں خان میرے کیتی کیچ تیاری
میں منتاں کر دی تروڑی ویندا یاری
کئی نہیں چلدی کیا کیجئے کاری
سٹ باندی بردی تھیساں باندی بر دی

پنوں خاں نے کیچ جانے کی ڈھان لی ہے
میں منتیں کررہی ہوں لوگوں دیکھو عہد توڑ رہا ہے
کچھ بس نہیں چلتا کیا کروں
اپنی باندیوں کو چھوڑ کر میں اس کی باندی بننے کو تیار ہوں

رو رو فریدا فریاد کر ساں
غم باجھ اس دے بیا ساہ نہ بھرساں
جا تھیسم میلا یا رُلدی مرساں
کہیں لا ڈکھائی دل چوٹ اندر دی

فرید رو رو کر ہر دم فریاد  کرتی ہوں
اس کے غم کے بغیر سانس بھی نہین بھرتی
یا تو میں جا ملوں گی یا پھر ڈھونڈتے مر جاؤں گی
دل کی چوٹ کاری ہے نظر بھی نہیں آتی

خواجہ غلام فرید
Khawaja Ghulam Farid

Aashiq Hovain Taan Ishq KamaVain

Aashiq Hovain Taan Ishq KamaVain

عاشق ہوویں تاں عشق کماویں
راہ عشق سوئی دا ٹکا،دھاگہ ہویں تاں ہی جاویں
باہر پاک اندر آلودہ، کیہا توں شیخ کہاویں
کہے حسین جے فارغ تھیویں،تاں خاص مراتبہ پاویں

عاشق بننا ہے تو عشق حقیقی اختیار کر
عشق کا راستہ سوئی کے سوراخ کی مانند ہے ، دھاگے کی طرح ہو جا نفس کو مار کرپھر ہی گزرے گا
ظاہر پاک صاف ہے مگر اندر گندگی ہے تو خود کو شیخ کہلانا پسند کرتا ہے
حسین کہتا ہے کہ دنیاوی خواہشات سے فراغت حاصل کر جب ہی تو خاص مرتبہ پا سکے گا

شاہ حسین
Shah Hussain

Sajan De Hath Banh Asadi Kyun Kar Aakhan Chad Ve Arya

Sajan De Hath Banh Asadi Kyun Kar Aakhan Chad Ve Arya

سجن دے ہتھ بانہہ اَساڈی ، کیونکر آکھاں چھڈ وے اَڑیا
رات اندھیری بَدّل کنیاں ، ڈَاڈھے کیتا سڈّ وے اَڑیا
عشق محبت سو ای جانن پئی جنیہاں دے ہڈ وے آڑیا
کلر کٹھن کھوہڑی چینا ریت نہ گڈ وے اَڑیا
نت بھرینائیں چھٹیاں اک دن جا سیں چھڈ وے آڑیا
کہے حسین فقیر نمانا، نین نیناں نَال گڈ وے اَڑیا

محبوب نے ہمارا بازو پکڑ لیا ہے میں کیوں کہوں کہ چھوڑ دے
رات اندھیری ہے ، بادل گھنا ہے ، بلاوا بھی آ چکا ہے
عشق اور محبت وہی جانتے ہیں جن کی ہڈیوں میں رچ بس جاتا ہے
سیم و تھور اور ریتلی زمین کنواں کھودنے اور اناج اُگا نے کا کوئی فائدہ نہیں
تو روز و شب مال ودولت اکٹھا کرنے میں مگن ہے مگر ایک دن سب یہیں چھوڑ کر چلا جائے گا
حسین رب کا عاجز فقیر کہتا ہے کہ تو نگاہوں سے نگاہیں ملا یعنی عشق کر

شاہ حسین
Shah Hussain

Ghoonghat Ohle Na luk Sajna

Ghoonghat Ohle Na luk Sajna

گھونگٹ اوہلے نہ لک سوہنیا
میں مشتاق دیدار دی ہاں

پردے کے پیچھے نہ چھپ سوہنیا
میں  شوق زیارت رکھتی ہوں

جانی باجھ دیوانی ہوئی
ٹوکاں کردے لوک سبھوئی
جیکر یار کرے دِل جوئی
میں تاں فریاد پَکار دِی ہاں

محبوب کی جدائی میں دیوانی ہو گئی ہوں
سب لوگ مجھے طعنے دیتے ہیں
اگر سوہنا یار میری دلجوئی کرے
میں تو دن رات دیدار کی پکار کر رہی ہوں

گھنگٹ اوہلے نہ لک سوہنیا
میں مشتاق دیدار دی ہاں

پردے کے پیچھے نہ چھپ سوہنیا
میں  شوق زیارت رکھتی ہوں

مفت وِکاندی جانّدی بَاندی
مل ماہی جِند اَینویں جَاندی
اک دم ہجر نہیں میں سہندی
میں بُلبُل اُس گلزار دی ہاں

تیرے عشق میں  بے قیمت باندی ہوں
آ مل جا کہ میری جان نکلی جا رہی ہے
میں اک پل بھی جدائی برداشت نہیں کر سکتی
میں باغ حسن کی بلبل ہوں بھلا جدا کیسے رہوں

گھنگٹ اوہلے نہ لک سوہنیا
میں مشتاق دیدار دی ہاں

پردے کے پیچھے نہ چھپ سوہنیا
میں  شوق زیارت رکھتی ہوں

Bulleh Shah
بلھے شاہ