Kiya Poochte Ho Garmi e Bazar e Mustafa

Kiya Poochte Ho Garmi e Bazar e Mustafa
کیا پوچھتے ہو گرمی بازار  مصطفےٰؐ

 

کیا پوچھتے ہو گرمی بازار  مصطفےٰؐ
خود بک رہے ہیں آ کے خریدار  مصطفےٰؐ

 

دل ہے مرا خزینہ اسرارِ مصطفےٰؐ
آنکھیں ہیں دونوں روزنِ دیوار مصطفےٰؐ

 

پھیلا ہوا ہے چاروں طرف دامنِ نگاہ
اور لُٹ رہی ہے دولتِ دیدارِ مصطفےٰؐ

 

تفسیر مصحفِ رخِ پر نور والضحیٰ
والیل شرح گیسوئے خمدارِ مصطفےٰؐ

 

نعلین پا سے عرش معلیٰ کو ہے شرف
روح الا میںؑ ہیں غاشیہ بردارِ مصطفےٰؐ

 

کیونکر نہ سجدہ پیش رح مصطفے ٰؐکروں
طاقِ حرم ہے ابروئے خمدار مصطفےٰؐ

 

بیدمؔ نہ  آوں جا کہ دیار رسول ؐسے
تربت ہو زیر سایہ دیوارِ مصطفےٰؐ

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Youtube : Kiya Poochte Ho Garmi e Bazar e Mustafa

Ada Pay Teri Dil Hai Aanay k Qabil

 

Ada Pay Teri Dil Hai Aanay k Qabil
ادا پر تری دل ہے آنے کے قابل

ادا پر تری دل   ہے آنے کے قابل
مری جان ہے تجھ پہ جانے کے قا بل

انہیں کو چنا چن کے بجلی نے پھونکا
وہ تنکے جو تھے آشیانے کے قابل

ترے مصحف رخ کو اللہ رکھے
یہ قرآں ہے ایمان لانے کے قابل

ہوا راز دل سب پہ ظاہر تو اب کیا
چھپاتے تھے جب تھا چھپانے کے قابل

جبیں مدتوں سے لئے پھر رہی ہے
جو سجدے ہیں اس آستانے کے قابل

جگر ہو کہ دل ناوک ناز جاناں
یہ دونوں ہیں تیرے نشانے کے قابل

میں بیدم اسی بات پہ مٹ رہا ہوں
کہ وہ مجھ کو سمجھے مٹانے کے قابل

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Kash muj par he mujhay yaar ka dhoka ho jai

 

Kash Muj Par he Mujhay Yaar ka Dhoka ho Jai
کا ش مجھ پر ہی مجھے یار کا دھوکا ہو جائے

 

کا ش مجھ پر ہی مجھے یار کا دھوکا ہو جائے
دید کی دید تماشے کا تماشا ہو جائے

دیدہ شوق کہیں راز نہ افشا ہو جائے
دیکھ ایسانہ ہو اظہار تمنا ہو جائے

آپ ٹھکراتے تو ہیں شہیدان وفا
حشر سے پہلے کہیں حشر نہ برپا ہو جائے

آپ کا جلوہ بھی کیا چیز ہے اللہ اللہ
جس کو آ جائےنظر وہ بھی تماشا ہو جائے

کم نہیں روز قیامت سے شب وصل اس کی
شام ہی سے جسے اندیشہ فردا ہو جائے

کیا ستم ہے ترے ہوتے ہوئےاے جذبہ دل
میرا چاہا نہ ہو اور غیر کا چاہا ہو جائے

شرم اس کی ہے کہ کہلاتا ہوں کشتہ تیرا
زندہ عیسیٰٰ سے جو ہو جاو ں تو مرنا ہو جائے

میرا سامان مری بے سرو سامانی ہے
مر بھی جاوں تو کفن دامن صحرا ہوجائے

دور ہو جائیں جو آنکھوں سےحجابات دوئی
پھر تو کچھ دوسری دنیامری دنیاہو جائے

اس کی کیا شرم نہ ہو گی تجھےاے شان کرم
تیرا بندہ جو تیرے سامنے رسواہو جائے

تو اسے بھول گیا وہ تجھے کیونکر بھولے
کیسے ممکن ہے کہ بیدم بھی تجھی سا ہو جائے

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Kaaba ka shouq hai na sanam khana chahiye

 

Kaaba ka Shouq hai na Sanam Khana Chahiye
کعبہ کا شوق ہے نہ صنم خانہ چاہیے

 

کعبہ کا شوق ہے نہ صنم خانہ چاہیے
جانانہ چاہیے در جانانہ چاہیے

ساغر کی آرزو ہے نہ پیمانہ چاہیے
بس اک نگاہ مرشد میخانہ چاہیے

حاضر ہیں میرے جیب و گریباں کی دھجیاں
اب اور کیا تجھے دل دیوانہ چاہیے

عاشق نہ ہو تو حسن کا گھر بے چراغ ہے
لیلیٰ کو قیس شمع کو پروانہ چاہیے

پروردہ کرم سے تو زیبا نہیں حجاب
مجھ خانہ زاد حسن سے پروانہ چاہیے

شکوہ ہےکفر اہل محبت کے واسطے
ہر اک جفائے دوست پہ شکرانہ چاہیے

بادہ کشوں کو دیتے ہیں ساغر یہ پوچھ کر
کس کو زکوۃ نرگس مستانہ چاہیے

بیدم نماز عشق یہی ہے خدا گواہ
ہر دم تصور رخ جانانہ چاہیے
بیدم وارثی
Bedam Warsi

Tum jo chaho to mere dard ka darmaan ho jayay

 

Tum jo chaho to mere dard ka darmaan ho jayay
تم جو چاہو تو مرے درد کا درماں ہو جائے

 

اپنی ہستی کا اگر حسن نمایاں ہو جائے
آدمی کثرت انوار سے حیراں ہو جائے

تم جو چاہو تو مرے درد کا درماں ہو جائے
ورنہ مشکل ہے کہ مشکل مری آساں ہو جائے

او نمک پاش تجھے اپنی ملاحت کی قسم
بات تو جب ہے کہ ہر زخم نمکداں ہو جائے

دینے والے تجھے دینا ہے تو اتنا دے دے
کہ مجھے شکوہ کوتاہی داماں ہو جائے

اس سیہ بخت کی راتیں بھی کوئی راتیں ہیں
خواب راحت بھی جسے خواب پریشاں ہو جائے

خواب میں بھی نظر آ جائیں جو آثار بہار
بڑھ کہ دامن سے ہم آغوش گریباں ہو جائے

سینہ شبلی و منصور تو پھونکا تو نے
اس طرف بھی کرم اے جنبش داماں ہو جائے

آخری سانس بنے زمزمہ ہو اپنا
ساز مضراب فنا تار رگ جاں ہو جائے

تو جو اسرار حقیقت کہیں ظاہر کر دے
ابھی بیدم رسن و دار کا ساماں ہو جائے

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Kaba-e-dil qibla-e-jaan taaqay abrooyay ali

Kaba e dil Qibla e Jaan taaqay abrooyay ali
کعبہ دل قبلہ جان طاق ابروئے علی

کعبہ دل قبلہ جان طاق ابروئے علی
ہو بہو قرآن ناطق مصحف روئے علی

خاک کے ذروں میں عطربوترابی کی مہک
باغ کے ہر پھول سے آتی ہے خوش  بوئے علی

اے صبا کیا یاد فرمایا ہے مولا نے مجھے
آج میرا دل کھنچا جاتا ہے کیوں سوئے علی

دامن فردوس ہے ہر گوشہ شہر نجف
ہے مقیم خلد گویا ساکن کوئے علی

کیوں نہ ہوں کونین کی آزادیاں اس پر نثار
ہے دل بیدم اسیر دام گیسوئے علی

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Mera Dil Aur Meri jaan Madinay Walay

 

Mera Dil Aur Meri jaan Madinay Walay
مرا دل اور مری جان مدینے والے

 

مرا دل اور مری جان مدینے والے
تجھ پہ سو جان سے قربان مدینے والے

بھر دے بھر دے میرے داتا میری جھولی بھر دے
اب نہ رکھ بے سروسامان مدینے والے

آڑے آتی ہے تری ذات ہر اک دکھیا کے
میری مشکل بھی ہو آسان مدینے والے

پھر تمنائے زیارت نے کیادل بے چین
پھر مدینے کا ہے ارمان مدینے والے

ترا  در چھوڑ کے جاؤں تو کہاں جاؤں میں
میرے آقا میرے سلطان مدینے والے

سگ طیبہ مجھے سب کہہ کے پکاریں بیدم
یہی رکھیں مری پہچان مدینے والے

بیدم وارثی
Bedam Warsi

YouTube: Mera Dil Aur Meri jaan Madinay Walay

Aai Naseem e koye e Muhammad SAW

Aai Naseem e koye e Muhammad SAW
آئی نسیم کوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

آئی نسیم کوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم
کھنچنے لگا دل سوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

کعبہ ہمارا کوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم
مصحف ایماں روئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

طوبیٰ کی جانب تکنے والوں آنکھیں کھولو ہوش سنبھالو
دیکھو قد دلجوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

نام اسی کا باب کرم ہے دیکھ یہی محراب حرم ہے
دیکھ خم ابروئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

ہم سب کا رخ سوئے کعبہ سوئے محمد روئے کعبہ
کعبے کا کعبہ کوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

بھینی بھینی خوشبو لہکی بیدم دل کی دنیا مہکی
کھل گئے جب گیسوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Download Link: Aai naseem e koy e Muhammad

Youtube : Aai Naseem e koye e Muhammad SAW

Barqay Jamal e Yaar Nay Rakhtay Sakoon Jala Diya

Barqay Jamal e yaar nay rakhtay sakoon jala diya
برق جمال یار نے رخت سکوں جلا دیا

برق جمال یار نے رخت سکوں جلا دیا
خانہ دل گداز نے عرش بریں ہلا دیا

خوب ہی دیں تسلیاں سینے پہ میرے رکھ کہ ہاتھ
صبرو قرار چھین کر درد جگر بڑھا دیا

سینے میں ڈھونڈتی ہے کیاتیری نگاہ فتنہ ساز
دل توتمہاری یاد میں مدت ہویئ لٹا دیا

دق تو کیا کلیم نے برق جمال یار کو
طور کا کیا قصور تھا طور کو کیوں جلا دیا

بیدم فقیر چیز کیا چھوڑا نہ کوہ طور کو
بن کہ جمال شمع رو جس پر گری جلا دیا

بیدم وارثی
Bedam Warsi

Download Link: Barqay Jamal e yaar nay rakhtay sakoon jala diya – Farzand Ali Soharwardy

Na Karo Juda Khuda Ra Mujhay Apnay Aastaan Sy

Na Karo Juda Khuda Ra Mujhay Apnay Aastaan Sy
نہ کرو جدا خدا را مجھے اپنے آستاں سے

 

نہ کرو جدا خدا را مجھے اپنے آستاں سے
نہ ملے گا پھر سہارا جو اٹھا دیا یہاں سے

یہی میری بندگی ہےیہی میری سجدہ ریزی
کہ ذرا لپٹ کہ رو لوں تیرے سنگ آستاں سے

تو ہزار بار ٹھکرا میرا سر یہیں جھکے گا
میرےدل میں ہے محبت تیرےسنگ آستاں سے

مجھے خاک میں ملا کر میری خاک بھی اڑا دے
تیرے نام پہ مٹاہوں مجھے کیاغرض نشاں سے

نہ ہو پاس ان کہ پردہ نہ یہ پردہ داریاں ہوں
میری دکھ بھری کہانی جو سنے میری زباں سے

اس خاک آستاں میں اک دن فنا بھی ہو گا
کہ بنا ہوا ہے بیدم اسی خاک آستاں سے

بیدم وارثی
Bedam Warsi
Mehmoodul Hassan QTV Youtube