Man Banda e Azadam Ishq Ast Imam Man

Man Banda e Azadam Ishq Ast Imam Man
Ishq Ast Imam Man Aqal Ast Ghulam Man

من بندہ آزادم عشق است امام من
عشق است امام من عقل است غلام من

میں آزاد بندہ ہوں،عشق میرا امام ہے
عشق  میرا امام ہے اور عقل میری غلام ہے

ہنگامۂ ایں محفل از گردش جام من
ایں کوکب شام من ایں ماہ تما م من

اس محفل کا شور اصل میں میرے جام کی گردش کے باعث ہے
یہ چاند اور ستارہ میری شام کے لئے ہیں

جاں در عدم آسودہ بے ذوق تمنا بود
مستانہ نواہازد در حلقہ دام من

روح عدم میں آرزو و تمنا کے ذوق سے خالی تھی
جب وہ میرے قالب میں آئی تو مستانے ساز و نغمے چھڑے

اے عالم رنگ و بو ایں صحبت ما تا چند
مرگ است دوام تو عشق است دوام من

اے جہان یہ تیر ی میری صحبت کب تک باقی ہے
تجھے تو  موت آجانی ہے اور مجھے عشق کی بدولت بقاو دوام حاصل ہے

پیدا بضمیرم او پنہاں بضمیرم او
ایں است مقام او دریاب مقام من

وہ میرے باطن میں پوشیدہ بھی ہے ظاہر بھی ہے
یہ تو اُس کا مقام ہے ، اب میرا مقام دریافت کر

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Beeni Jahan Ra Khud Ra Na Beeni

Beeni Jahan Ra Khud Ra Na Beeni
Ta Chand Nadaan Ghafil Nasheeni

بینی جہاں را خود را نہ بینی
تا چند ناداں غافل نشینی

تو جہان کو دیکھتا ہے ، اپنے آپ کو نہیں دیکھتا
اے نا سمجھ تو کب تک غفلت میں بیٹھا رہے گا

نور قدیمی شب را بر افروز
دست کلیمی در آستینی

تو ایک قدیم نور ہے، رات کو روشن کر
تیری آستین میں تو کلیم کا ہاتھ ہے

بیروں قدم نہ از دورِ آفاق
تو پیش آزینی تو بیش ازینی

تو اس کائنات سے باہر قدم رکھ
تو اس سے آگے کی چیز ہے تری قدروقیمت بھی اس سے زیادہ ہے

از مرگ ترسی اے زندہ جاوید؟
مرگ است صیدے تو در کمینی

کیا تو موت سے ڈرتا ہےاے ہمیشہ رہنے والے
موت تو خود تیری کمین گاہ کا شکار ہے

جانے کہ بخشند دیگر نگیرند
آدم بمیرد از بے یقینی

زندگی (جان)تو خدا کا عطیہ ہے جو واپس نہیں لیا جاتا
آدمی تو اپنی بے یقینی کی وجہ سے مر جاتا ہے

صورت گری را از من بیا موز
شاید کہ خود را باز آفرینی

مجھ سے مصوری کا فن سیکھ
عجب نہیں کہ تو اپنے آپ کو تعمیر کر لے

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Een Hum Jahaney Aan Hum Jahaney

Een Hum Jahaney Aan Hum Jahaney
Een Baekaraney Aan Baekaraney

ایں ہم جہانے آں ہم جہانے
ایں بیکرانے آں بیکرانے

یہ دنیا بھی ایک جہان ہے،آخرت بھی ایک جہان ہے
یہ بھی بیکراں ہے ، وہ بھی لا محدود ہے

ہر دوخیالے ہر دو گمانے
از شعلۂ من موج دخانے

دونوں ہی خیال ہیں ، دونوں ہی قیاس ہیں
میرے شعلے کے دھویئں کی لہریں ہیں

ایں یک دو آنے آں یک دو آنے
من جاودانے ، من جاودانے

یہ بھی ایک دو پل ہے ، وہ بھی ایک دو پل (عارضی)ہے
میں جاوداں ہوں ، مجھے بقا حاصل ہے

ایں کم عیارے آں کم عیارے
من پاک جانے نقد روانے

یہ بھی کم قیمت ہے ، وہ بھی بے قدر ہے
میں پاک جان کھری نقدی سکہ ہوں

ایں جا مقامے آں جا مقامے
ایں جا زمانے آں جا زمانے

ادھر بھی کچھ وقت کے لئے مقیم ہوں اُدھر بھی وقتی پڑاؤ ہے
یہاں بھی کچھ پل ہیں وہاں بھی کچھ پل ہیں

ایں جا چہ کارم آں جا چہ کارم؟
آہے فغانے آہے فغانے

دونوں جہانوں میں میرا کیا کام ہے
سوائے عشق میں آہ و فغاں کرنا

ایں رہزنِ من آں رہزنِ من
ایں جا زیانے آں جا زیانے

یہ بھی لٹیری ہے وہ بھی لٹیری ہے
یہاں بھی نقصان ہے وہاں بھی گھاٹا ہے

ہر دو فروزم ہر دو بسوزم
ایں آشیانے آں آشیانے

میں دونوں کو جلا بخشتا ہوں،روشن کرتا ہوں
چاہے یہ آشیاں ہو چاہے وہ ٹھکانا ہو

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Tu Rah Naward e Shouq Hai Manzil Na Kar Qabool

Tu Rah Naward e Shouq Hai Manzil Na Kar Qabool
Laila Be Hum Nasheen Ho to Mahmil Na Kar Qabool

تو رہ نوردِ شوق ہے منزل نہ کر قبول
لیلیٰ بھی ہم نشیں ہو تو محمل نہ کر قبول

اے جوئے آب بڑھ کے ہو دریائے تندو تیز
ساحل تجھے عطا ہو تو ساحل نہ کر قبول

کھویا نہ جا صنم کدۂ کائنات میں
محفل گداز گرمی ٔ محفل نہ کر قبول

صبح ازل یہ مجھ سے کہا جبرئیل نے
جو عقل کا غلام ہو وہ دل نہ کر قبول

باطل دوئی پسند ہے حق لا شریک ہے
شرکت میانہ ء حق و باطل نہ کر قبول

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

 

 

Nishan Yahi Hai Zamane Mein Zinda Qoumon Ka

Nishan Yahi Hai Zamane Mein Zinda Qoumon Ka
Ke Subha O Sham Badalti Hain In Ki Taqdeerain

نشان یہی ہے زمانے میں زندہ قوموں کا
کہ صبح و شام بدلتی ہیں ان کی تقدیریں

It is the sign of living nations
their fate changes day and night;

Kamal-E-Sidq-O-Marawwat Hai Zindagi In Ki
Maaf Karti Hai Fitrat Bhi In Ki Taqseerain

کمالِ صدق و مروت ہے زندگی ان کی
معاف کرتی ہے فطرت بھی ان کی تقصیریں

their life is sincerity and generosity to perfection,
Nature too forgives their follies;

Qalanderana Ada’en, Sikandarana Jalal
Ye Ummatain Hain Jahan Mein Barhana Shamsheerain

قلندرانہ ادائیں ، سکندرانہ جلال
یہ اُمتیں ہیں جہاں میں برہنہ شمشیریں

in manners qalandar‐like, in majesty as Iskander:
these people are like naked swords.

Khudi Se Mard-E-Khud Agah Ka Jamal-O-Jalal
K Ye Kitab Hai, Baqi Tamam Tafseerain

خودی سے مرد خود آگاہ کا جمال و جلال
کہ یہ کتا ب ہے ، باقی تمام تفسیریں

Beauty and majesty of a self‐conscious man flows from khudi:
it is the text, the rest are commentaries.

Shikwa-E-Eid Ka Munkir Nahin Hun Mein, Lekin
Qabool-E-Haq Hain Faqat Mard-E-Hur Ki Takbeerain

شکوہ عید کا منکر نہیں ہوں میں لیکن
قبول حق ہیں فقط مرد حُر کی تکبیریں

I don’t deny the splendour of the days of ‘Id,
but alas! only the takbirs of free men are acceptable to God.

Hakeem Meri Nawa’on Ka Raaz Kya Jane
Wara’ay Aqal Hain Ahl-E-Junoon Ki Tadbeerain

حکیم میری نواوں کا راز کیا جانے
ورائے عقل ہیں اھل جنوں کی تدبیریں

What can the sage know my songs’ secret?
the words of man of madness are beyond reason’s ken.

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Reference: http://iqbalurdu.blogspot.com/2011/03/armaghan-e-hijaz-34-nishan-yehi-hai.html

Khule Jate Hain Asrar-e-Nihani

Khule Jate Hain Asrar-e-Nihani
Gya Dor Hadees e Lan Tarani

کھلے جاتے ہیں اسرار نہانی
گیا دور حدیث لن ترانی

The hidden secrets are being unveiled
Gone is the age of the announcement  “You can’t see me”

ہوئی جس کی خودی پہلے نمودار
وہی مہدی ، وہی آخر زمانی

Whoever finds his inner self First
He is the Mehdi , he is the guide of last age

Here Allama Iqbal is referreing the following Qurainc Verse (7:143)

وَلَمَّا جَاءَ مُوسَىٰ لِمِيقَاتِنَا وَكَلَّمَهُ رَ‌بُّهُ قَالَ رَ‌بِّ أَرِ‌نِي أَنظُرْ‌ إِلَيْكَ قَالَ لَن تَرَ‌انِي وَلَـٰكِنِ انظُرْ‌ إِلَى الْجَبَلِ فَإِنِ اسْتَقَرَّ‌ مَكَانَهُ فَسَوْفَ تَرَ‌انِي فَلَمَّا تَجَلَّىٰ رَ‌بُّهُ لِلْجَبَلِ جَعَلَهُ دَكًّا وَخَرَّ‌ مُوسَىٰ صَعِقًا فَلَمَّا أَفَاقَ قَالَ سُبْحَانَكَ تُبْتُ إِلَيْكَ وَأَنَا أَوَّلُ الْمُؤْمِنِينَ

And when Moosa presented himself upon Our promise, and his Lord spoke to him, he said, “My Lord! Show me Your Self, so that I may see You”; He said, “You will never be able to see Me, but look towards the mountain – if it stays in its place, then you shall soon see Me”; so when his Lord directed His light on the mountain, He blew it into bits and Moosa fell down unconscious; then upon regaining consciousness he said, “Purity is to You! I incline towards You, and I am the first Muslim.

اور جب موسیٰ ہمارے وعدہ پر حاضر ہوا اور اس سے اس کے رب نے کلام فرمایا عرض کی اے رب میرے! مجھے اپنا دیدار دکھا کہ میں تجھے دیکھوں فرمایا تو مجھے ہر گز نہ دیکھ سکے گا ہاں اس پہاڑ کی طرف دیکھ یہ اگر اپنی جگہ پر ٹھہرا رہا تو عنقریب تو مجھے دیکھ لے گا پھر جب اس کے رب نے پہاڑ پر اپنا نو ر چمکایا اسے پاش پاش کردیا اور موسیٰ گرا بیہوش پھر جب ہوش ہوا بولا پاکی ہے تجھے میں تیری طرف رجوع لایا اور میں سب سے پہلا مسلمان ہوں

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Atta Islaaf Ka Jazb e Droon Kar

Atta Islaaf Ka Jazb e Droon Kar
Shareek e Zumra e La YahZanoon Kar

عطا اسلاف کا جذبِ دروں کر
شریک زمرۂ لاَ یَحزنُوں کر

Grant me the absorption of the souls of the past,
And include me among people who are fearless.

خرد کی گتھیاں سلجا چکا میں
میرے مولا مجھے صاحب جنوں کر

I have solved the riddeles of wisdom
My Lord! Give me life of ecstasy

Allama Iqbal
علامہ اقبال

Here Allama Iqbal is referring a Quranic Verse (10:62)

أَلَا إِنَّ أَوْلِيَاءَ اللَّـهِ لَا خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلَا هُمْ يَحْزَنُونَ

سن لو بیشک اللہ کے ولیوں پر نہ کچھ خو ف ہے نہ کچھ غم

Pay heed! Indeed upon the friends of Allah is neither any fear, nor any grief.

Mohabbat Ka Junoon Baqi Nahin Hai

Mohabbat Ka Junoon Baqi Nahin Hai
Muslmanoon Main Khoon Baqi Nahin Hai

محبت کا جنوں باقی نہیں ہے
مسلمانوں میں خوں باقی نہیں ہے

صفیں کج،دل پریشاں ، سجدہ بے ذوق
کہ جذب اندروں باقی نہیں ہے

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Khudai Ehtemam e Khushk o Tar Hai

Khudai Ehtemam e Khushk o Tar Hai
Khudawanda Khudai Dard e Sar Hai

خدائی اہتمام خشک و تر ہے
خداوندا خدائی درد سر ہے

ولیکن بندگی استغراللہ
یہ درد سر نہیں درد جگر ہے

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Woh Mera Ronaq e Mehfil Kahan Hai

Woh Mera Ronaq e Mehfil Kahan Hai
Meri Bijli Mera Hasil Kahan Hai

وہ میرا رونق محفل کہاں ہے
مری بجلی ، مرا حاصل کہاں ہے

Where is partner of my spiritual gathering
My thunder bolt , where is my destination

مقام اس کا ہے دل کی خلوتوں میں
خدا جانے مقام دل کہاں ہے

His place is in the solitude of the Heart
Allah knows better the exact place of the Heart

Allama Iqbal
علامہ اقبال