Bachashme Man Jahan Juz Rahguzar Naist

Bachashme Man Jahan Juz Rahguzar Naist

بچشم من جہاں جز رہگزر نیست
ہزاراں رہرو و یک ہم سفر نیست
گذشتم از ہجوم خویش و پیوند
کہ از خویشاں کسے بیگانہ تر نیست

میری نظر میں دنیا ایک راستہ کے سوا کچھ نہیں
یہاں ہزاروں مسافر ہیں مگر ایک بھی ہم سفر نہیں ہے
میں عزیزوں اور دوستوں کے ہجوم سے گزر گیا
کیونکہ اپنوں سے بڑھ کر کوئی بیگانہ نہیں ہے

By my eyes this world is just a passage
There are thousands of passengers but no one is companion traveler
I have passed from the crowd of loved ones and relatives
Because there is no one more stranger than our own loved ones

 Allama Iqbal
علامہ اقبال

Sarood Rafta Baaz Ayad ke Nayad

Sarood Rafta Baaz Ayad ke Nayad

سرود رفتہ باز آید کہ ناید؟
نسیمے از حجاز آید کہ ناید؟
سر آمد روز گار ایں فقیرے
دگر دانائے راز آید کہ ناید؟

خدا جانے کہ وہ پہلے والا دور آئے گا یا نہیں
حجاز کی طرف سے ٹھنڈی ہوا چلے گی یا نہیں

یعنی مسلمان اپنا کھویا ہوا مقام حاصل کر پایئں گے کہ نہیں حضور کی تعلیمات پر عمل پیرا ہو کر

اس فقیر (اقبال) کا وقت آخر آ گیا ہے
دیکھتے ہیں کہ میری طرح کا دانائے راز آتا ہے کہ نہیں

The golden era of islam will come back or not ?
Sweet wind will blow from Madina again or not ?

The last moments of this sufi dervish has arrived
Not sure another opener of the secrets will come or not?

 Allama Iqbal
علامہ اقبال

Jahan Az Ishq o Ishq Az Seena Tust

Jahan Az Ishq o Ishq Az Seena Tust

جہان از عشق و عشق از سینہ تست
سرورش از مے دیرینہ تست
جز ایں چیزے نمی دانم ز جبریل
کہ او یک جوہر از آینہ تست

یہ دنیا عشق کی بدولت ہے اور عشق آپؐ کے سینہ(دل) مبارک سے ہے
عشق کا سرور آپؐ کی پرانی شراب (توحید و معرفت)کے طفیل ہے
میں جبریل کے بارے میں فقط اتنا جانتا ہوں کہ وہ
آپؐ کہ آئینہ کی ایک چمک ہے
یعنی جبریل بھی حضورؐ کے نور کے طفیل معرض وجود میں آئے

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Na Az Saaqi Na Az Paimana Guftam Hadees Ishq Be Bakana Guftam

Na Az Saaqi Na Az Paimana Guftam Hadees Ishq Be Bakana Guftam

نہ از ساقی نہ از پیمانہ گفتم
حدیث عشق بے باکانہ گفتم

میں نے نہ تو ساقی اور نہ ہی پیمانے کی بات کی جیسے کے عام شعرا کرتے ہیں
بلکہ عشق کی باتیں کھل کھلا کہ نڈر ہو کر کی ہیں

شنیدم آنچہ از پاکانِ اُمت
ترا با شوخی رندانہ گفتم

جو کچھ کہ میں نے اس اُمت کے پاک لوگوں سے سنا
تیرے لئے رندانہ شوخی لئے شاعری میں بیان کر دیا

Allama Iqbal
علامہ ا قبال

Best Poetry of Allama Iqbal

Best Poetry of Allama Iqbal

علامہ اقبال ایک سچے عاشق رسول نہائت خوبی سے حضور کی شان بیان کر گئے ہیں

در دل مسلم مقام مصطفیٰ است
آبروئے ما زِ نام مصطفیٰ است

مسلمانوں کے دلوں میں حضور کا مقام ہے
ہم مسلمانوں کی عزت و آبرو حضورؐ کے نام کی بدولت ہے

طور موجے از غبار خانہ اش
کعبہ را بیت الحرم کاشانہ اش

کوہ طور تو آپ کے مبارک گھر کی گرد کی لہر ہے
کعبہ کے لئے آپ کا کاشانہ مبارک بیت الحرام کی مانند ہے

کمتر از آنے ز اوقاتش، ابد
کاسب افزائش از ذاتش ابد

ابد جس کی انتہا نہیں آپؐ کے مبارک اوقات کے ایک پل سے بھی کم ہے
ابد کی افزائش بھی آپ کی ذات گرامی کے طفیل ہے

Asrar o Ramooz
اسرار و رموز
——————————————————————
مسلماں آں فقیر کج کلاہے
رمید از سینہ او سوز آہے
دلش نالد چرا نالد؟ نداند
نگاہے یا رسول اللہ نگاہے

مسلماں جو کہ اپنی فقیری میں بے پرواہ تھا
اس کا سینہ سوز و گداز کی آہ سے خالی ہو گیا ہے
اس کا دل روتا ہے مگر رونے کا سبب نہیں معلوم
ایسے حال میں یارسول اللہ آپ ہی کچھ نظر کرم کریں

Armaghan Hijaz
ارمغان حجاز
——————————————————————-
شبے پیش خدا بگریستم زار
مسلماناں چرا زارند و خوارند
ندا آمد نمی دانی کہ ایں قوم
دلے دارند و محبوبے ندارند

ایک رات خدا کے حضور بہت رویا
کہ مسلمان ذلیل و خوار کیوں ہیں
صدا آئی کہ تو نہیں جانتا کہ یہ قوم
دل تو رکھتی ہے محبوب(حضورؐ) نہیں رکھتی

Armaghan Hijaz
ارمغان حجاز

Allama Iqbal
علامہ اقبال