Azal Ka Woh Sirr e Nihaan Allah Allah

Azal Ka Woh Sirr e Nihaan Allah Allah
ازل کا  وہ سرِّ نہاں اللہ اللہ

ازل کا  وہ سرِّ نہاں اللہ اللہ
ترے دم قدم سے عیاں اللہ اللہ

یہ رشتہ عبد اور معبود واللہ
نفس  در نفس کن فکاں اللہ اللہ

یہ ہمت، یہ قدرت یہ شان تصّرف
یہ تسخیر کون و مکاں اللہ اللہ

کلام محمد—————کلام الہٰی
یہ حسن کلام و بیاں اللہ اللہ

ملا ئک کو ہے رشک اہل زمیں پر
کہ ہے یاں تیرا ٓستاں اللہ اللہ

حقیقت کھلی جس گھڑی لا الہ کی
ملا بے نشاں کا نشاں اللہ اللہ

ہے تیری بدولت عجب شانِ امت
کہ خیر الامم در جہاں اللہ اللہ

میں کلمہ طیب پہ قرباں کہ اس میں
تیرا نام ہے ہم عناں اللہ اللہ

ہے تو جن کی دنیا،ہے تو جن کا عقبی
وہ سوئے مدینہ رواں اللہ اللہ

سفر میں ،حضر میں، نظر میں ، خبر میں
تیرا ساتھ ہو جانِ جاں اللہ اللہ

تمنّا ہے خؔاور  درونِ لحد بھی
کہے دل “محمد” زباں اللہ اللہ

خاورسہروردی
Khawar Soharwardy

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *